Monday, 29 February 2016

دین کو ہر فرد بشر تک پہنچانا علماء کی ذمہ داری

مولانا ابراھیم دیولہ
دارالعلوم دیوبند کی جامع رشید میں حضرت مولانا محمد ابراہیم صاحب  کا طلباء سے پرمغز خطاب.
امت محمدیہ کے ہر ایک فرد تک دین اسلام کو کامل طریقے سے پہنچانااورصراط مستقیم کی دعوت دینا علماء و طلباء کا دینی و ملی فریضہ ہے.
مذکورہ خیالات کا اظہار مرکز نظام الدین دہلی سےآئےوفد کےسربراہ 
حضرت مولانا محمد ابراہیم صاحب نے جامع رشید میں منعقد دعوتی جلسے میں کیا. انہوں نے طلباء سے مخاطب ہوتے ہوئےکہاکہ آپ کی سب سے پہلی ذمہ داری یہ ھیکہ آپ کسب علم میں خوب محنت کریں اور رسوخ پیدا کریں، پھر پیاسی امت کو دین متین کی دعوت دیں،
بنگلہ والی مسجد سے آئے وفد میں مولانا جمشید صاحب،مفتی ظہیرالاسلام بارہ بنکوی تھے، قبل ازاں قاری شفیق الرحمن صاحب کی تلاوت سے محفل کا آغاز ہوا،
جلسے میں اساتذہ دارالعلوم و طلباء عظام نیز اہالیان شہر بھی موجود رہے.
جلسہ کا اختتام 
حضرت مولانا محمد ابراہیم صاحب کی پرسوز دعا پر ہوا.

Noice Pollution Laws

NOISE POLLUTION-IMPLEMENTATION OF LAWS FOR RESTRICTING USE OF LOUD SPEAKERS AND HIGH VOLUME PRODUCING SOUND SYSTEMS DIRECTIONS
It is hereby directed as under:-  I. Firecrackers  1. On a comparison of the two systems, i.e. the present system of evaluating firecrackers on the basis of noise levels, and the other where the firecrackers shall be evaluated on the basis of chemical composition, we feel that the latter method is more practical and workable in Indian circumstances. It shall be followed unless and until replaced by a better system.
2. The Department of Explosives (DOE) shall undertake necessary research activity for the purpose and come out with the chemical formulae for each type or category or class of firecrackers. The DOE shall specify the proportion/composition as well as the maximum permissible weight of every chemical used in manufacturing firecrackers. 
3. The Department of Explosives may divide the firecrackers into two categories- (i) Sound emitting firecrackers, and (ii) Colour/light emitting firecrackers. 
4. There shall be a complete ban on bursting sound emitting firecrackers between 10 pm and 6 am. It is not necessary to impose restrictions as to time on bursting of colour/light emitting firecrackers. 
5. Every manufacturer shall on the box of each firecracker mention details of its chemical contents and that it satisfies the requirement as laid down by DOE. In case of a failure on the part of the manufacturer to mention the details or in cases where the contents of the box do not match the chemical formulae as stated on the box, the manufacturer may be held liable. 
6. Firecrackers for the purpose of export may be manufactured bearing higher noise levels subject to the following conditions:
(i) The manufacturer should be permitted to do so only when he has an export order with him and not otherwise;
(ii) The noise levels for these firecrackers should conform to the noise standards prescribed in the country to which they are intended to be exported as per the export order;
(iii) These firecrackers should have a different colour packing, from those intended to be sold in India;
(iv) They must carry a declaration printed thereon something like 'not for sale in India' or 'only for export to country AB' and so on
II. Loudspeakers
1. The noise level at the boundary of the public place, where loudspeaker or public address system or any other noise source is being used shall not exceed 10 dB(A) above the ambient noise standards for the area or 75 dB(A) whichever is lower.  2. No one shall beat a drum or tom-tom or blow a trumpet or beat or sound any instrument or use any sound amplifier at night (between 10. 00 p.m. and 6.a.m.) except in public emergencies. 
3. The peripheral noise level of privately owned sound system shall not exceed by more than 5 dB(A) than the ambient air quality standard specified for the area in which it is used, at the boundary of the private place. III. Vehicular Noise No horn should be allowed to be used at night (between 10 p.m. and 6 a.m.) in residential areas except in exceptional circumstances.
IV. Awareness
1. There is a need for creating general awareness towards the hazardous effects of noise pollution. Suitable chapters may be added in the text-books which teach civic sense to the children and youth at the initial/early level of education. Special talks and lectures be organised in the schools to highlight the menace of noise pollution and the role of the children and younger generation in preventing it. Police and civic administration should be trained to understand the various methods to curb the problem and also the laws on the subject. 
2. The State must play an active role in this process. Residents Welfare Associations, Service Clubs and Societies engaged in preventing noise pollution as a part of their projects need to be encouraged and actively involved by the local administration.  3. Special public awareness campaigns in anticipation of festivals, events and ceremonial occasions whereat firecrackers are likely to be used, need to be carried out.  The above said guidelines are issued in exercise of power conferred on this Court under Articles 141 and 142 of the Constitution of India. These would remain in force until modified by this Court or superseded by an appropriate legislation
V Generally 1. The States shall make provision for seizure and confiscation of loudspeakers, amplifiers and such other equipments as are found to be creating noise beyond the permissible limits. 2. Rule 3 of the Noise Pollution (Regulation and Control) Rules, 2000 makes provision for specifying ambient air quality standards in respect of noise for different areas/zones, categorization of the areas for the purpose of implementation of noise standards, authorizing the authorities for enforcement and achievement of laid down standards. The Central Government/State Governments shall take steps for laying down such standards and notifying the authorities where it has not already been done. Though, the matters are closed in consistantly with the directions as above issued in public interest, there will be liberty of seeking further directions as and when required and, in particular, in the event of any difficulty arising in implementing the directions.  The CWP, CA and all pending IAs be treated as disposed of. Before parting, we would like to place on record our deep appreciation of valuable assistance rendered by Shri Jitendra Sharma, Senior Advocate assisted by Shri Sandeep Narain, Advocate (and earlier by late Shri Pankaj Kalra, Advocate) who highlighted several relevant aspects of the issues before us and also helped in formulating the guidelines issued as above. [R.C.LAHOTI] [ASHOK BHAN] New Delhi July 18, 2005

Sunday, 28 February 2016

امت کے آخری حصہ کی اصلاح

امام مالک رحمہ اللہ کہتے ہیں: 
اس امت کے آخری حصہ کی اصلاح اسی طرز پر ممکن ہے جس طرز پر پہلے حصہ کی اصلاح ہوئی تھی، اور جو اعمال نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی میں دین نہیں تھے وہ آج دین نہیں بن سکتے.
خطبہ جمعہ مؤرخہ: 20 ذوالحجہ 1434 بمطابق: 25 اکتوبر 2013، خطیب علی الحذیفی حفظہ اللہ




قُلْ هَذِهِ سَبِيلِي أَدْعُو إِلَى اللَّهِ عَلَى بَصِيرَةٍ أَنَا وَمَنْ اتَّبَعَنِي وَسُبْحَانَ اللَّهِ وَمَا أَنَا مِنْ الْمُشْرِكِينَ (يوسف: 108
Say,This is my way. I call (People) to Allah with full perception,both I and my followers. Pure is Allah and I am not among those who associate partner with Allah.
Therefore, such Daee (one who invites towards Islam) need to be developed, whose desires should be consistent inknowledge, action, thought, perception, passion, compassion, and the manner of invitation to Islam following the aspirations of prophets, particularly Muhammad .Not only should they posses a strong Iman (Faith) and virtuous deeds, but their inner inspirations should be on the pattern of prophets. They should cherish a fervent love of Allah and His fear, and a state of intimacy with Him. In character and habits, they should adhere to the Sunnah of the Prophet . Their love or hatred should be for the: sake of Allah. The motivating factor behind their inviting to Islam should be a deep compassion and mercy and kindness for all mankind. The often repeated Devine principle for prophets. "Our reward is solely with Allah," should be their hallmark. They should have no other objective except the pleasure of Allah. May Allah help us (Ameen)
Maulana Yusuf Rahimullah said…..
To achieve strong connection with Allah and to gain his divine help, the only means are the way of Muhammad.If the following the prophet will be in all sphere of our life then Allah will make us successful irrespective of the situation & worldly means. (Biography page 767)
Maulana Ilyas R.A. said

<http://tablighijamaattruth.blogspot.in/2012/06/how-sahaba-did-work-of-dawah-and.html>

زملونی زملونی ....

آں حضورصلی اللہ علیه وسلم نےپہلی وحی کےوقت زملونی جمع كاصيغه استعمال فرمايا جبكہ گھرمیں فقط حضرت خدیجہ (رضی اللہ تعالی عنھا) اکیلی تھی اورمذکر کا صیغہ کیوں فرمایا ؟؟
ایسے وقت مخاطب عموما خاص نہیں ہوتا بلکہ انسان عام جمع کے صیغے سے مخاطب کرتا ہے،
جیسے بچاو بچاو چاہے وہاں ایک ہی ہو،
مذکر ہو یا مونث ہو،
والله سبحانہ اعلم 
نیز برودت کی شدت کی بناء پر جمع کا صیغہ فرمایا ..جو ایسے مواقع پر عامة عادتا جمع ہی استعمال ہوتا ہے
فرجع الرسول إلى خديجة وهو يقول: زملوني زملوني، من شدة البرد،
( سلسلة التفسير )
3109 ] وتحقيق ذلك أن المؤمنين متحدون بحسب الأرواح متعددون من حيث الأجسام والأشباح كنور واحد في مظاهر مختلفة ، أو كنفس واحدة في أبدان متفرقة ، بحيث لو تألم الواحد تأثر الجميع ، كما لوح إلى هذا المعنى قوله - صلى الله عليه وسلم : " المؤمنون كرجل واحد إن اشتكى عينه اشتكى كله ، وإن اشتكى رأسه اشتكى كله " ، وكما روي عن بعض المشايخ النقشبندية أنه أحس بالبرودة فقال : زملوني زملوني ، فغطوه فجاءه مريد له وقع في ماء بارد في شتاء شديد ، فقال الشيخ : أدفئوه ، فلما دفئ المريد قام الشيخ مستدفئا ، ونظيره أن ليلى افتصدت فخرج الدم من يد العامري ، فأنشد :
أنا من أهوى ومن أهوى أنا نحن روحان حللنا بدنا
لكن الأظهر أن يقول : نحن روح واحد تعلق بها بدنان ، فيكون إشارة إلى الأبدان المكتسبة الواقعة للسادة الصوفية ، وإلا فهو موهم للحلول
مرقات شرح مشکوة
نسب شریف
سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا بنتِ خویلد بن اسدبن عبدالعزی بن قصی بن کلاب بن مرہ بن کعب بن لوی۔ آپ کا نسب حضور پر نور شافعِ یوم النشور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کے نسب شریف سے قصی میں مل جاتا ہے۔ سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کی کنیت ام ہند ہے۔ آپ کی والدہ فاطمہ بنت زائدہ بن العصم قبیلہ بنی عامر بن لوی سے تھیں۔
(مدارج النبوت،قسم پنجم،باب دوم درذکرازواج مطہرات وی، ج۲،ص۴۶۴)
سرکار دوعالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کے اخلاقِ حسنہ کا ہر جگہ چرچا تھا حتی کہ مشرکین مکہ بھی انہیں الامین والصادق سے یاد کرتے، سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے اپنے کاروبار کے لئے آپ ﷺ کو منتخب فرمایا اور سرکار صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی بارگاہ میں پیغام پہنچایا کہ آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا مال ِ تجارت لے کر شام جائیں اور منافع میں جو مناسب خیال فرمائیں لے لیں۔ حضور اقدس صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے اس پیشکش کو بمشورۂ ابوطالب قبول فرمالیا۔ سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے اپنے غلام میسرہ کو بغرض خدمت حضور اقدس صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کے ساتھ بھیجا۔ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے اپنا مال فروخت کرکے دگنا نفع حاصل کیا نیز قافلے والوں کو آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی صحبت بابرکت سے بہت نفع ہوا جب قافلہ واپس ہوا تو سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے دیکھا کہ دو فرشتے آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم پر سایہ کنا ں ہیں ۔نیزدوران سفر کے حالات نے سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو آپ کاگرویدہ کردیا۔
(مدارج النبوت،قسم دوم،باب دوم درکفالت عبدالمطلب .الخ،ج۲،ص۲۷)
سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا نکاح
حضرت سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا مالدار ہونے کے علاوہ فراخ دل اور قریش کی عورتوں میں بہترین نسب والی تھیں۔ بکثرت قریشی آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہاسے نکاح کے خواہشمند تھے۔لیکن آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہانے کسی کے پیغام کو قبول نہ فرمایا بلکہ سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہانے آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی بارگاہ میں نکاح کا پیغام بھیجا اور اپنے چچا عمرو بن اسد کو بلایا۔ سردار دوجہاں صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم بھی اپنے چچا ابوطالب، حضرت حمزہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور دیگر رؤساء کے ساتھ سیدہ خدیجۃ الکبری رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے مکان پر تشریف لائے۔ جناب ابو طالب نے نکاح کا خطبہ پڑھا۔ ایک روایت کے مطابق سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا مہر ساڑھے بارہ اوقیہ سونا تھا۔
(مدارج النبوت،قسم دوم،باب دوم درکفالت عبدالمطلب ..الخ،ج۲،ص۲۷)
بوقتِ نکاح سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کی عمر چالیس برس اور آقائے دو جہاں صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی عمر شریف پچیس برس کی تھی۔جب تک آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہاحیات رہیں آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہاکی موجودگی میں پیارے آقا صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے کسی عورت سے نکاح نہ فرمایا۔
غمگسار اہلیہ
جب آپ ﷺ پر پہلی وحی نازل ہوئی تو اس واقعہ سے آپ ﷺ کی طبیعت بے حد متأثِر ہوئی گھر واپسی پر سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے فرمایا: ”زملونی زملونی”مجھے کمبل اڑھاؤ مجھے کمبل اڑھاؤ۔ سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کے جسم انور پر کمبل ڈالا اور چہرہ انور پر سرد پانی کے چھینٹے دیئے تاکہ خشیت کی کیفیت دور ہو۔ پھر آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے سارا حال بیان فرمایا۔ سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کو تسلی دیتے ہوئے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کے ساتھ اچھا ہی فرمائے گاکیونکہ آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم صلۂ رحمی فرماتے، عیال کا بوجھ اٹھاتے، ریاضت و مجاہدہ کرتے، مہمان نوازی فرماتے، بیکسوں اور مجبوروں کی دستگیری کرتے، محتاجوں اور غریبوں کے ساتھ بھلائی کرتے لوگوں کے ساتھ حسن اخلاق سے پیش آتے، لوگوں کی سچائی میں انکی مدد اور ان کی برائی سے حذر فرماتے ہیں، یتیموں کو پناہ دیتے ہیں سچ بولتے ہیں اور امانتیں ادا فرماتے ہیں۔ سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہانے ان باتوں سے حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کو تسلی و اطمینان دلایا کفار قریش کی تکذیب سے رحمت عالمیان صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم جو غم اٹھاتے تھے وہ سب سیدہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کو دیکھتے ہی جاتا رہتا تھا او رآپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم خوش ہوجاتے تھے اور جب سرکار صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم تشریف لاتے تو وہ آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی خاطر مدارات فرماتیں جس سے ہر مشکل آسان ہوجاتی۔
( مدارج النبوت،قسم دوم،باب سوم دربدووحی وثبوت نبوت …الخ،ج۲،ص۳۲ وقسم پنجم،باب دوم درذکرازواج مطہرات ، ج۲،ص۴۶۵)
حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے حضرت عائشہ رضی اﷲ تعالیٰ عنہا سے فرمایا: اللہ کی قسم! خدیجہ سے بہتر مجھے کوئی بیوی نہیں ملی جب سب لوگوں نے میرے ساتھ کفر کیا اس وقت وہ مجھ پر ایمان لائیں اور جب سب لوگ مجھے جھٹلا رہے تھے اس وقت انہوں نے میری تصدیق کی اور جس وقت کوئی شخص مجھے کوئی چیز دینے کے لئے تیار نہ تھا اس وقت خدیجہ نے مجھے اپنا سارا سامان دے دیا اور انہیں کے شکم سے اﷲ تعالیٰ نے مجھے اولادعطافرمائی۔
(شرح العلامۃ الزرقانی علی المواہب اللدنیۃ،حضرت خدیجۃام المؤمنین رضی اللہ عنہا،ج۴،ص۳۶۳۔الاستیعاب،کتاب النساء:۳۳۴۷،خدیجۃ بنت خویلد،ج۴، ص۳۷۹)
سابق الایمان
سب سے پہلے علی الاعلان ایمان لانے والی حضرت سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا ہیں۔ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کا ارشادِ گرامی ہے کہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا مجھ پر اس وقت ایمان لائیں جب کہ لوگ میری تکذیب کرتے تھے اور انہوں نے اپنے مال سے میری ایسے وقت مدد کی جب کہ لوگوں نے مجھے محروم کررکھا تھا۔
(المسندللامام احمد بن حنبل،مسند السیدۃعائشۃ،الحدیث۲۴۹۱۸،ج۹،ص۴۲۹)
اولادِ کرام
حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی تمام اولاد سیدہ خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے بطن سے ہوئی۔ بجز حضرت ابراہیم رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے جو سیدہ ماریہ قبطیہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے پیدا ہوئے۔ فرزندوں میں حضرت قاسم رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت عبداللہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے اسمائے گرامی مروی ہیں جب کہ دختران میں سیدہ زینب، سیدہ رقیہ ، سیدہ ام کلثوم اور سیدہ فاطمہ زہرا رضی اللہ تعالیٰ عنہن ہیں۔
السیرۃالنبویۃلابن ہشام،حدیث تزویج رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہ وسلم خدیجۃ، اولادہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہ وسلم من خدیجۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہا،ص۷۷۔اسدالغابۃ،کتاب النساء،خدیجۃ بنت خولید،ج۷،ص۹۱)
سیدہ خدیجہ رضی اللہ عنھا کے فضائل میں احادیث
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ بارگاہِ رسالت میں جبرائیل علیہ السلام نے حاضرہوکرعرض کیا: اے اللہ کے رسول! صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم آپ کے پاس حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا دستر خوان لارہی ہیں جس میں کھانا پانی ہے جب وہ آپ کے پاس آئیں ان سے ان کے رب کا سلام کہنا۔
(صحیح مسلم،کتاب فضائل الصحابۃ،باب فضائل خدیجۃ ام المؤمنین رضی اللہ تعالٰی عنھا،الحدیث۲۴۳۲،ص۱۳۲۲)
سیدنا ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہماسے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم نے فرمایا: جنتی عورتوں میں سب سے افضل سیدہ خدیجہ بنت خویلد رضی اللہ تعالیٰ عنہا ،سیدہ فاطمہ بنت محمدرضی اللہ تعالیٰ عنہا وصلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم ،حضرت مریم بنت عمران رضی اللہ تعالیٰ عنہا اور آسیہ بنت مزاحم رضی اللہ تعالیٰ عنہا ہیں۔
(المسندللامام احمدبن حنبل،مسند عبداللہ بن عباس،الحدیث۲۹۰۳،ج۱،ص ۶۷۸)
وصال
آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہا تقریباً پچیس سال حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم کی شریک حیات رہیں۔ آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہاکا وصال بعثت کے دسویں سال ماہ ِ رمضان میں ہوا۔ اور مقبرہ حجون میں مدفون ہیں۔ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم آپ رضی اللہ تعالیٰ عنہاکی قبر میں داخل ہوئے اور دعائے خیر فرمائی ۔ نماز جنازہ اس وقت تک مشروع نہ ہوئی تھی۔ اس سانحہ پر رحمت عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم بہت زیادہ ملول و محزون ہوئے۔
(مدارج النبوت،قسم پنجم،باب دوم درذکرازواج مطہرات وی،ج۲،ص۴۶۵)
حضرت خدیجہ رضی اللہ عنھا کی سہیلیوں کے ساتھ حسن سلوک
ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا فرماتی ہیں کہ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کا اکثر ذکر فرماتے رہتے تھے۔ بعض اوقات حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ واٰلہ وسلم بکری ذبح فرماتے اور پھر اس کے گوشت کے ٹکڑے کرکے حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کی سہیلیوں کے گھر بھیجتے صرف اس لئے کہ یہ حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا کی سہیلیاں تھیں۔(صحیح مسلم،کتاب فضائل الصحابۃ،باب فضائل خدیجۃ ام المؤمنین رضی اللہ تعالٰی عنہا،الحدیث ۲۴۳۵،ص۱۳۲۳)

کیسے لکھیں اینڈرائڈ میں اردو؟

ایس اے ساگر
یہ تو آپ جانتے ہی ہونگے کہ اینڈرائڈ موبائل میں نستعلیق فونٹ نصب کیا جاسکتا ہے مگر پہلے اس کیلئے موبائل کو روٹ کرنا ضروری ہوتا تھا، اولا تو روٹ کرنا بجائے خود کارے دارد، ثانیا روٹ کرنے سے موبائل کی وارنٹی گارنٹی بھی ختم ،لیکن اب نستعلیق فونٹ نصب کرنے کیلئے موبائل روٹ کرنا بھی ضروری نہیں ہے، روٹ کئے بغیر بھی نستعلیق فونٹ کے سحر میں کھویا جاسکتا ہے، اس کیلئے بس آپ کو کچھ اقدام کرنے ہونگے:
سب سے پہلے یہ فائل ڈاونلوڈ فرمائیں
ڈاونلوڈ ہوجانے کے بعد فائل کو انسٹال کرلیں، انسٹال کرلینے کے بعد باہر آجائیں
اب موبائل کی سیٹنگ میں جائیں
پھر ڈسپلے اوپشن میں
پھر فونٹ اسٹائل میں
اسکرین شاٹس ملاحظہ فرما لیں















فونٹ اسٹائل اوپشن میں آپ کو نستعلق فونٹ بھی دیگر فونٹس کے ساتھ نظر آئے گا، بس نستعلیق فونٹ سلیکٹ کیجئے اور اردو کی خوبصورتی میں کھوجائیے
گوگل نے موبائل فون اور ٹیبلٹ کمپیوٹر Tablet Computer وغیرہ کیلئے ایک اوپن سورس آپریٹنگ سسٹم، اینڈرائڈ Android) بنایا۔ 2008ء میں ایچ ٹی سی ڈریم (HTC Dream پہلا موبائل تھا، جس میں اینڈرائڈ آپریٹنگ سسٹم تھا۔ اس کے بعد اینڈرائڈ نے بہت تیزی سے ترقی کی۔ آج کل اینڈرائڈ نے مارکیٹ میں اپنا ایک نام بنا لیا ہے اور زیادہ تر اچھے و مہنگے موبائلوں میں یہی آپریٹنگ سسٹم آ رہا ہے۔ اینڈرائڈ کے کئی ایک ورژن آ چکے ہیں۔ شروع کے ایک دو ورژن اینڈرائڈ کے اپنے نام سے ہی تھے لیکن بعد کے ورژن ہیں تو اینڈرائڈ ہی لیکن مختلف ناموں سے موسوم کر دیئے گئے ہیں۔
اینڈرائڈ آپریٹنگ سسٹم
نام نام ورژن نمبر تاریخ اشاعت
Android اینڈرائڈ 1.0 ستمبر 2008ء
Android اینڈرائڈ 1.1 فروری 2009ء
Cupcake کپ کیک 1.5 اپریل 2009ء
Donut ڈونٹ 1.6 ستمبر 2009ء
Eclair ایکلیئر 2.1/2.0 اکتوبر 2009ء/جنوری 2010ء
Froyo فرویو 2.2.x مئی 2010ء
Gingerbread جنجربریڈ 2.3.x دسمبر 2010ء
Honeycomb ہنی کمب 3.x فروری 2011ء
Ice Cream Sandwich آئس کریم سینڈوچ 4.x اکتوبر 2011ء
جدول میں صرف اہم ورژن لکھے ہیں، باقی کئی ورژن کی کافی ساری اپڈیٹس آئیں، جیسے جنجر بریڈ کے تقریباً سات مزید ورژن آئے۔
خیر یہ تمہید اس لئے باندھی ہے کہ اگر آپ کو نہیں پتہ تو اندازہ ہو جائے کہ یہ اینڈرائڈ ہے کیا بلا۔۔۔ اب آتے ہیں اصل بات کی طرف۔ اینڈرائڈ میں یونیکوڈ کی سہولت غالباً شروع دن سے موجود ہے یا پھر کم از کم فرویو 2.2.2 سے تو لازم موجود ہے کیونکہ یہ میں نے خود دیکھی ہے اور اس پر تھوڑے بہت تجربات بھی کیے ہیں۔
اینڈرائڈ میں یونیکوڈ کی سہولت تو موجود ہے لیکن کئی اینڈرائڈ موبائلوں پر اردو کی جگہ ڈبے بن جاتے ہیں یا الفاظ ٹوٹ جاتے ہیں اور ساتھ ساتھ کئی موبائلوں پر الفاظ کی ترتیب بھی الٹ جاتی ہے یعنی موبائل پر اردو پڑھنے کی سہولت نہیں ہوتی۔ مگر کئی موبائلوں پر اردو بالکل ٹھیک پڑھی جاتی ہے اور کئی پر تو اردو لکھنے کی سہولت بھی موجود ہوتی ہے۔ جن موبائلوں پر اردو پڑھنے کی سہولت نہیں ہوتی دراصل ان میں اردو کا بہتر فانٹ موجود نہیں ہوتا اور بعض میں فانٹ تو ہوتا ہے لیکن حروف جوڑنے کی سپورٹ موجود نہیں ہوتی۔
موبائل بنانے والی کمپنیاں مختلف علاقوں کے لئے مختلف موبائل (سافٹ ویئر) بناتی ہیں اور پھر انہیں علاقوں کے حساب سے اس میں زبانوں کی سہولت دیتی ہیں۔ موبائل کا ماڈل وہی ہوتا ہے لیکن جوایشیاء وغیرہ کے لئے بنایا جاتا ہے اس میں ایشیاء کی زبانوں کی سہولت ہوتی ہے اور جو یورپ وغیرہ کے لئے ہوتا ہے اس میں یورپ کی زبانوں کی سہولت ہوتی ہے۔ بالکل اسی طرح اینڈرائڈ موبائلوں میں بھی ہو رہا ہے۔ ایشیاء والے ماڈل میں ایشیاء کی زبانوں کے بہتر فانٹ اور سپورٹ رکھی جاتی ہے تو دیگر علاقوں کے لئے بنائے گئے موبائلوں میں ان علاقوں کے حساب سے زبانوں کی سہولت رکھی جاتی ہے۔ اس کے علاوہ کئی کمپنیاں زیادہ سے زیادہ زبانیں پڑھنے کی سہولت (فانٹ) تو رکھ دیتی ہیں لیکن لکھنے کی سہولت صرف اس علاقے کی زبانوں کی رکھتی ہیں جس علاقے کے لئے موبائل بنایا ہوتا ہے۔ ان عجیب و غریب حالات میں اردو کے حوالے سے سہولت ہونے یا نہ ہونے والے موبائلوں کو میں تین زمروں میں تقسیم کرتا ہوں اور پھر اپنے محدود علم کے مطابق اردو لکھنے پڑھنے کی سہولت شامل کرنے کا طریقہ بتا دیتا ہوں۔ سب سے پہلے تو آپ اپنا موبائل دیکھیں کہ وہ کس زمرہ میں آتا ہے اور پھر اسی حساب سے اس کا حل کیجئے، اگر کر سکتے ہیں تو۔۔۔
آپ کا موبائل کس زمرہ میں آتا ہے یہ جاننے کے لئے پہلے آپ کو اردو مواد تھوڑا بہت دیکھنا ہو گا۔ اردو پڑھنے کی سہولت موجود ہے یا نہیں یہ جاننے کے لئے یا تو کسی دوست کو کہیں کہ وہ آپ کو خاص اردو میں ایس ایم ایس کرے یا پھر آپ اپنے موبائل پر کوئی اردو ویب سائیٹ کھولیں، ویسے آپ میرا بلاگ بھی کھول سکتے ہیں۔ :-) یاد رہے ویب سائیٹ موزیلا فائر فاکس یا اسی طرح کے کسی براؤزر میں نہیں کھولنی بلکہ موبائل کے اپنے براؤزر میں کھولنی ہے۔ اس کے علاوہ اردو لکھنے کی سہولت جاننے کے لئے اپنے اینڈرائڈ موبائل کی Settings میں جائیں اور پھر اپنے موبائل اور اس کے سافٹ ویئر کے مطابق Local and Text یا Language & Keyboard یا اس سے ملتی جلتی آپشن میں جائیں۔ دراصل یہ مختلف کمپنیوں اور اینڈرائڈ کے مختلف ورژن کے حساب سے مختلف ناموں سے ہوتی ہیں۔ خیر اس کے بعد Select Input Method یا International Keyboard یا اس سے ملتی جلتی آپشن میں جائیں۔ مزید یہاں آپ Keypad یا Input Languages یا Writing Languages یا اس سے ملتی جلتی آپشن کی فہرست میں دیکھیں کہ ”اردو“ موجود ہے یا نہیں۔ اگر اردو موجود ہے تو سمجھ جائیں کہ آپ کا اینڈرائڈ موبائل اردو لکھنے اور پڑھنے کی مکمل سہولت دیتا ہے۔ خیر یہ سب معلوم کرنے کے بعد دیکھیں کہ آپ کا موبائل درج ذیل کس زمرہ میں آتا ہے۔
1:- اردو ٹھیک پڑھی اور لکھی جاتی ہے۔
جب اردو ٹھیک پڑھی اور لکھی جاتی ہے تو پھر یہاں کیا کرنے آئے ہیں۔ معذرت جناب! بس مذاق کیا ہے۔ خیر آپ سب سے خوش قسمت زمرہ میں ہیں، اگر آپ کو اردو کی سیٹنگ کرنی ہے تو اس کے لئے اینڈرائڈ موبائل پر اردو کیبورڈ کی سیٹنگ والی تحریر پڑھیں اور پھر موبائل پر اردو کے مزے ای مزے۔۔۔
2:- اردو ٹھیک پڑھی جاتی ہے لیکن لکھی نہیں جا سکتی۔
آپ دوسرے نمبر پر آتے ہیں لیکن خوش قسمت ہی ہیں کیونکہ آپ آسانی سے اردو لکھ سکیں گے اور اس کا حل بڑا آسان ہے۔ اینڈرائڈ کے لئے فونیٹک اردو کیبورڈ لے آؤٹ والی تحریر دیکھیں۔
3:- اردو ٹھیک پڑھی نہیں جاتی۔
جب اردو ٹھیک پڑھی نہیں جاتی تو پھر لکھیں گے کہاں سے۔ آپ کی حالت انتہائی نازک ہے۔ آپ تو میری بھی اچھی بھلی کلاس لیں گے۔ ویسے کس نے مشورہ دیا تھا کہ ایسا موبائل خریدو؟ اگر کسی کزن یا عزیز نے باہر سے بھیجا ہے تو ایسا موبائل اس کے ”متھے مارو“۔اگر ایسا نہیں کر سکتے تو پھر زیادہ فکر بھی نہ کرو کیونکہ آپ کے لئے بھی حل ڈھونڈا ہے لیکن جناب منزل تو خوبصورت ہے مگر سفر تھوڑا مشکل ہے۔ خیر اینڈرائیڈ میں اردو سپورٹ شامل کرنے کے لئے یہاں دیکھیں۔
اردو لکھنے کی سہولت تلاش کرنے میں اگر کوئی مشکل ہو اور آپ مجھ سے پوچھنا چاہتے ہوں تو برائے مہربانی اپنے موبائل کی کمپنی، ماڈل اور اینڈرائڈ کا ورژن ضرور لکھیں مزید Settings والی فہرست کے بعد جو جو آپشن آتی ہیں وہ بھی ضرور لکھیں۔
یار لوگ کہتے ہیں کہ میں بلاگ باقاعدگی سے نہیں لکھتا۔ بات تو ان کی ٹھیک ہے لیکن باقاعدگی سے کیسے لکھوں؟ اب میں خبریں شائع کرنے سے تو رہا۔ خیر اسی تحریر کو دیکھ لیں، ان سب باتوں کی تفصیل پتہ کرنے میں پورا ایک مہینہ لگ گیا۔ اوپر سے تجربات کرتے ہوئے ایک دوست کے سام سنگ گلیکسی ایس 1 کو بھی خراب کر دیا اور پھر بڑا نقصان ہوتے ہوتے بچا۔ اس قربانی کیلئے میں اپنے دوست عبدالستار کا نہایت ہی شکر گزار ہوں۔ جس نے اردو کے لئے اپنا موبائل رضاکارانہ طور پر پیش کیا۔ ویسے آج کل یہی حضرت اپنا ایچ ٹی سی ڈیزائر ایس پیش کر رہے ہیں، لیکن اب مجھے خود خدشہ لاحق ہے۔

Saturday, 27 February 2016

2 ہفتے میں 10 کلو وزن سے کیسے پائیں نجات؟ ?How to lose 10 kgs in 2 Weeks

ایس اے ساگر
چینی، چاول اور چکنائی کے بڑھتے ہوئے استعمال نے انسان کو کہیں کا نہیں رکھا ہے. جسمانی مشقت سے اجتناب نے مزید گل کھلایا ہے. جدید طرز زندگی میں لیموں نے موٹاپے سے نجات کی راہ دکھائی ہے. ماہرین نے محض 2 ہفتے میں 10 کلو سے زائد وزن کم کرنے کا آسان ترین نسخہ تجویز کیا ہے :
اگر آپ وزن کم کرنے میں سنجیدہ ہیں تو آج ہم آپ کو لیموں سے بنا ایک ایسا آسان نسخہ بتائیں جے جس پر عمل کرکے آپ صرف 2 ہفتے میں 10 کلو سے زائد وزن کم کرلیں گے۔
اس نسخے کے استعمال سے آپ کے جسم سے زہریلا مواد نکل جائے گااور آپ تروتازہ ہوجائیں گے ۔آپ کو ذیل میں دی ہوئی تراکیب پر سختی سے عمل کرنا ہے اور ہر صبح خالی پیٹ اسے استعمال کرنا ہے۔
پہلا دن
ایک لیموں کو ایک کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
دوسرا دن
دولیموﺅں کو دوکپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
تیسرا دن
تین لیموﺅں کو تین کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
چوتھا دن
چار لیموﺅں کو چارکپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
پانچواں دن
پانچ لیموﺅں کو پانچ کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
چھٹا دن
چھ لیموﺅں کو چھ کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
ساتویں دن
تین لیموں لے کر10کپ پانی میں ایک چمچ شہد ملا لیں اور سارا دن یہ مشرو ب پئیں۔
آٹھویں دن
چھ لیموﺅں کو چھ کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
نویں دن
پانچ لیموﺅں کو پانچ کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
دسویں دن
چار لیموﺅں کو چارکپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
گیارہویں دن
تین لیموﺅں کو تین کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
بارہویں دن
دولیموﺅں کو دوکپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
تیرویں دن
ایک لیموں کو ایک کپ تازہ پانی میں ملا کر پئیں۔
چودھویں دن
تین لیموں لے کر10کپ پانی میں ایک چمچ شہد ملا لیں اور سارا دن یہ مشروب پئیں۔
کوشش کریں کہ یہ مشروب ایک ہی ساتھ پی لیا جائے لیکن اگر آپ کو دشواری ہوتو دن بھر میں کھانے سے کم از کم ایک گھنٹہ قبل استعما ل کریں۔حاملہ خواتین کے علاوہ ایسے افراد جنہیں معدے یا آنت کی تکالیف لاحق ہیں، وہ اس کے استعمال سے قبل اپنے معالج سے مشورہ کرلیں۔

?How to lose  10 kgs in 2 Weeks
By: S . A. Sagar
Do you know  there are a lot of vitamins in the lemon like vitamin C which strengthens the immunology system and as well helps in the process of losing weight? This plant is an incredible fruit which will detoxicate your body, blood and lymph and will speed up your metabolism. If you want to change your appearance and lose 5-10kg, you should add to your volition a lemon as well! This diet dissolves your weight and fats and also strengthens your body and purifies the blood and lymph. According to experts,  many nutritional experts claim that the lemon contains a lot of essential elements which reduce the adipose tissue in order to lose some weight.
Above all the ingredients, the lemon also contains citric acid which helps in flaming of fats, accelerates the metabolism and the most important, it reduces the appetite.
Citric acid enlarges the intensive production of gastric acid which improves digestion. The healthy peel of the lemon contains a lot of pectin which regulates the level of sugar in the blood.
Also, there are a lot of vitamins in the lemon like vitamin C which strengthens the immunology system and as well helps in the process of losing weight. This plant is an incredible fruit which will detoxicate your body, blood and lymph and will speed up your metabolism.
This diet is very simple. Every morning, before your breakfast, you should drink certain amount of lemon juice mixed with water:
Day 1: one squeezed lemon mixed with one glass of water
Day 2: two squeezed lemons mixed with two glasses of water
Day3: three squeezed lemons mixed with three glasses of water
Day 4: four squeezed lemons mixed with four glasses of water
Day 5: five squeezed lemons mixed with five glasses of water
Day 6: six squeezed lemons mixed with six glasses of water
Day 7: three squeezed lemons mixed with ten glasses of water
Add one spoon of honey and drink the mixture during the day.
Day 8: six squeezed lemons mixed with six glasses of water
Day 9: five squeezed lemons mixed with five glasses of water
Day 10: four squeezed lemons mixed with five glasses of water
Day 11: three squeezed lemons mixed with three glasses of water
Day 12: two squeezed lemons mixed with two glasses of water
Day 13: one squeezed lemon mixed with one glass of water
Day 14: three squeezed lemons mixed with 10 glasses of water
Add one spoon of honey and drink the mixture during the day.
Advise: Wash out your mouth with water after you drink the lemon juice in order to prevent damaging of the tooth enamel because of the citric acid.
Note: It is best to drink the whole mixture at once. However, if you cannot drink the whole mixture, drink as much as you can and drink the rest of the mixture few minutes later. It is very important to drink the lemonade one hour before your meal. This diet is not recommended for persons who have digestion problems. This diet has an incredible effect especially during spring or autumn, seasons in which our body needs a maximum booster with vitamins and detoxication. If the diet is combined with lower portions of calories then it would be much more effective and the results would be more obvious. You should have five small meals per day so that you would not be fed up. You should not eat pasta or white bread and you should forget about sodas, sweeten or alcoholic beverages, chips, chocolate and etc.

Friday, 26 February 2016

جمعہ کے 9 اعمال

جمعہ کے دن کے نو اعمال جن پر عمل کرنے سے ہر قدم پر ایک سال کے روزە ایک سال کی نماز کا ثواب ملتا ہے.
1.صبح کو اور دنوں سے کچھ پھلے اٹھنا
2. غسل کرنا
3. صاف کپڑے پھننا
4. مسجد میں جلد جانے کی فکر کرنا
5. مسجد پیدل جانا
6. امام کے قریب بیٹھنے کی کو شش کرنا
7. صفیں پر ہونے کی صورت میں کندھوں کو پھاند کر آگے نہ بڑھنا
8. اپنے کپڑوں سے یا بالوں سے لھو ولعب نە کرنا
9. خطبە کو غور سے سننا
علاوە ازیں جمعە کے دن جو سورە کھف پڑھے گا اس کے لئے عرش کے نیچے سے آسمان کے برابر بلند ایک نور ظاھر ھوگا جو قیامت کے اندھیرے میں اسکے کام آویگا اور اس جمعە سے پھلے جمعە کے تمام خطایا (صغیرە) ا سکے معاف ھو جائین گے
نبی کریم صلی الله علیە وسلم کا ارشاد ھے کە جمعە کے دن مجھ پر کثرت سے درود بھیجا کرو اس روز درود میں فرشتے حاضر ھوتے ھیں اور درود میرے حضور میں پیش کیا جاتا ھے

اللھم انی اعوذ بک من جار السوء

ایس اے ساگر
اسلام نے مختلف وسعت پذیر دائروں میں مسلم معاشرے کی زندگی بسر کرنے کی طرف سب سے زیادہ توجہ دی ہے تاکہ پورا معاشرہ منظم ہو جائے۔ یہ سلسلہ والدین اور رشتہ داروں کے حقوق سے شروع ہو کر پڑوسیوں ، دوستوں اور آشناﺅں سے ہوتا ہوا غریبوں اور غیر مسلموں تک جاپہنچتا ہے. پڑوسی ایک دوسرے کے حالات سے واقف ہوتے ہیں اور ایک دوسرے کے رازوں سے آشنا ہوتے ہیں۔ ہر آنے جانے والی چیز کا انہیں علم ہوتا ہے۔ مخفی باتوں کی اطلاع ہوتی ہے، صبح شام کے معاملات ان کے سامنے ہوتے ہیں، آوازیں سنتے ہیں اور ہوائیں سونگھتے ہیں۔ اختلاف ہو یا اتفاق، جھگڑا ہو یا صلح، انہیں سب خبر ہوتی ہے۔ گھر کے ذخائر ان سے مخفی نہیں ہوتے اور خاندانوں کی مخفی باتیں ان سے پوشیدہ نہیں ہوتیں۔
کسے کہتے ہیں پڑوسی؟
جوار یعنی پڑوس کا لفظ اپنے اصل معنی میں ہر اس چیز سے عبارت ہے جس کا حق عقلاً اور شرعاً بہت عظیم ہو۔ اسی لئے کہا جاتا ہے کہ اس نے فلاں سے پناہ مانگی اور فلاں نے اسے پناہ دی۔ جبکہ صرف اللہ کی ذات پناہ دینے پر قادر ہے اور جس کے خلاف کسی کو پناہ نہیں دی جا سکتی۔ ابلیس ملعون نے اپنے پیروکاروں کو یہ کہہ کر ذلیل کیا تھا کہ میں تمہارا جار (پڑوسی) ہوں۔ چنانچہ پڑوسی کو جار اس لئے کہا جاتا ہے کیونکہ وہ اپنے پڑوسی کو پناہ دیتا ہے، اس سے تکلیف اور پریشانی ہٹاتا ہے اور اس کیلئے خیر اور نفع تلاش کرتا ہے۔
پڑوسیوں کی اقسام :
پڑوسیوں کی کئی اقسام اور درجات ہیں۔ ان میں سے بعض دوسروں کی بہ نسبت زیادہ قریب ہیں۔ حافظ ابن حجر a فرماتے ہیں: پڑوسی کا لفظ مسلمان اور کافر، عابد اور فاسق، دوست اور دشمن، رشتہ دار اور اجنبی، قریب کے گھر والا اور دور کے گھر والا سب کو شامل ہے۔ ان کے درجات ہیں۔ بعض پڑوسی دوسروں کی بہ نسبت زیادہ درجہ رکھتے ہیں۔ چنانچہ ان میں سے سب سے بالا تر درجے والاوہ پڑوسی ہے جس میں پہلے ذکر کی گئی ساری صفات جمع ہو جائیں۔ علی ہذا القیاس جس میں جتنی صفات ہوں گی اسی تناسب سے اس کے حقوق ہوں گے۔ نیز ایسے پڑوسیوں کی بھی کمی نہیں ہے جن سے پناہ مانگی گئی ہے.
اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُ بِکَ مِنْ یَوْمِ السُّوْءِ ، وَمِنْ لَیْلَۃِ السُّوْءِ وَمِنْ سَاعَۃِ السُّوْءِ وَمِنْ صَاحِبِ السُّوْءِ وَمِنْ جَارِ السُّوْءِ فِی دَارِ الْمُقَامَۃ
(المعجم الکبیر 14227)
یا اللہ! میں تیری پناہ چاہتا ہوں بُرے دن سے، اور بُری رات سے، اور بُرے وقت سے، اور بُرے ساتھی سے، اورمستقل جاے قیام کے برے پڑوس سے۔ لیکن کیا سلسلہ مرنے کے بعد تک دراز ہے؟ دہلی میں ایک معروف شخصیت کے انتقال پر جنازہ اٹھانے میں تاخیر ہوئی تو پتہ چلا کہ گھر والے تدفین کیلئے ایسی جگہ کیلئے کوشاں تھے جہاں نیک لوگوں کی قبریں ہیں. کافی کوششوں کے بعد معقول رقم خرچ کرکے مسئلہ حل ہوا. سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا ميت كیساتھ دفن كرنے سے دوسرى ميت پر اثر پڑتا ہے ؟ كيا كسى ميت كے پہلو ميں دفن ہونے سے اثر پڑتا ہے، مثال كے طور پر كوئى شخص وصيت كرے كہ اسے فلاں كے پہلو ميں دفن كيا جائے اور فلاں كے پہلو ميں دفن مت كيا جائے ؟
کیا فرماتے ہیں اہل علم؟
اہل علم کے نزدیک اس سلسلے میں متعدد پہلو قابل غور ہیں.
اول:
اگر تو سائل كا كا مقصد يہ ہے كہ كسى ایک قبر ميں دو مسلمان ایک دوسرے كے پہلو ميں دفن كئے جائيں، تو ايسا كرنا جائز نہيں؛ كيونكہ ہر مسلمان شخص كو عليحدہ قبر ميں دفن كرنا واجب ہے، ليكن ضرورت كى بنا پر ایک سے زائد كو ایک ہى قبر ميں دفن كيا جا سكتا ہے.
ابن قدامہ رحمہ اللہ كہتے ہيں:
" اور ایک ہى قبر ميں بغير كسى ضرورت كے دو ميتوں كو دفن نہيں كيا جائے گا." انتہى
ديكھيں: المغنى ( 2 / 222 ).
اور شيخ ابن عثيمين رحمہ اللہ كہتے ہيں:
" بالاتفاق مشروع ہے كہ ایک قبر ميں دو مسلمان دفن نہيں كئے جائيں گے، بلكہ ہر ایک كیلئے عليحدہ قبر كھودى جائے گى." انتہى
ديكھيں: فتاوى نور على الدرب ( 1 / 337 ).
رہا يہ مسئلہ كہ آيا كوئى ميت كسى دوسرے كے پہلو ميں دفن ہونے كى صورت ميں متاثر ہوتى ہے يا نہيں، دوسرے لفظوں ميں آيا اگر پہلو ميں دفن ميت كو عذاب قبر ہو رہا ہے يا پھر اہل نعمت والا ہونے كى وجہ سے سعادت حاصل كر رہا ہے تو آيا سات والے كو بھى اس كا اثر ہو گا يا نہيں ؟
ہمارے علم كے مطابق تو سننت نبويہ ميں اس كى كوئى دليل نہيں ملتى."
شيخ ابن عثيمين رحمہ اللہ كہتے ہيں:
" يہ مسئلہ نص شرعى كا محتاج ہے اور توقيف كا محتاج ہے؛ كہ اگر پہلو ميں دفن ميت كو عذاب ہو رہا ہے تو اسے بھى اذيت ہوتى ہے، ہمارے علم كے مطابق تو سنت نبويہ ميں اس كى كوئى دليل نہيں، اگرچہ بعض علماء رحمہ اللہ يہ كہتے ہيں كہ:
اگر ساتھ والى ميت كو عذاب ہو رہا ہو تو پہلو ميں دفن ميت كو بھى اذيت ہوتى ہے، اور بعض اوقات اس كے پاس كوئى برا فعل كرنے كى بنا پر بھى اسے اذيت ہوتى ہے، ليكن مجھے تو سنت نبويہ ميں اس كى كوئى دليل نہيں ملى جو اس كى تائيد كرتى ہو "
واللہ تعالى اعلم." انتہى
ديكھيں: فتاوى نور على الدرب ( 1 / 337 ).
اور ابو نعيم كى درج ذيل حديث جو كہ ابو ہريرہ رضى اللہ تعالى عنہ سے مروى ہے وہ بيان كرتے ہيں كہ رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:
" اپنے فوت شدگان كو نيك و صالح لوگوں كے درميان دفن كيا كرو، كيونكہ جس طرح برے پڑوسى كى وجہ سے زندہ شخص اذيت محسوس كرتا ہے اسى طرح ميت كے پہلے ميں برے شخص كى بنا پر ميت كو بھى اذيت ہوتى ہے "
الحليۃ ( 6 / 354 ).
يہ حديث موضوع اور من گھڑت ہے، ديكھيں سلسلۃ الاحاديث الضعيفۃ للالبانى حديث نمبر ( 563 ).
اور ابن حبان رحمہ اللہ كہتے ہيں:
" يہ حديث باطل ہے، رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم كى كلام ميں اس كى كوئى اصل نہيں ملتى " انتہى
ديكھيں: كتاب المجروحين ( 1 / 291 ).
علماء كرام كى ايك جماعت نے صالح اور نیک لوگوں كے پہلو ميں ميت دفن كرنا مستحب قرار ديا ہے، ليكن اس پر سنت نبويہ سے كوئى صريح دليل ذكر نہيں كى، بلكہ يہ صرف بعض احاديث سے استنباط كرتے ہوئے كہا ہے، اسى طرح بعض علماء نے اس كا استنباط درج ذيل حديث سے بھى كيا ہے:
" جب موسى عليہ السلام كى موت كا وقت آيا تو انہوں نے اپنے پروردگار سے سوال كيا كہ وہ انہيں ارض مقدس كے اتنا قريب كر دے جتنى مسافت تک پتھر پھينكا جا سكتا ہو." متفق عليہ.
امام بخارى رحمہ اللہ نے اس حديث پر باب باندھتے ہوئے كہا ہے:
" ارض مقدس وغيرہ ميں دفن ہونا پسند كرنے والے شخص كے متعلق باب." انتہى
ابن بطال رحمہ اللہ كہتے ہيں:
" موسى عليہ السلام كا اپنے رب سے ارض مقدس كے قريب كرنے كے متعلق سوال كرنے كا معنى يہ ہے كہ ( باقى علم تو اللہ كے پاس ہى ہے واللہ اعلم ) كيونكہ ارض مقدس ميں دفن ہونے كى فضيلت ہے كيونكہ وہاں انبياء ( کرام علیم السلام ) اور صالحين (علیہم الرحمہ ) دفن ہيں، اس ليے فوتگى ميں ان كا پڑوس اختيار كرنا مستحب ہو، بالكل اسى طرح جس طرح زندگى ميں ان لوگوں كا پڑوس اور قرب ا ختيار كرنا مستحب ہے، اور اس ليے بھى كہ فاضل قسم كے لوگ جگہ بھى افضل ہى اختيار كرتے ہيں، اور وہ افضل اور بہتر لوگوں كى قبروں كى زيارت كرتے ہيں اور ان كے ليے دعا كرتے ہيں " انتہى
ديكھيں: شرح ابن بطال ( 5 / 359 ).
اور امام نووى رحمہ اللہ كہتے ہيں:
" اس ميں افضل جگہ اور اچھے و مبارک مقام پر دفن ہونے اور صالحين كے مدفن كے قرب كا استحباب پايا جاتا ہے." انتہى
ديكھيں: شرح مسلم ( 15 / 128 ).
اور يہ مخفى نہيں كہ يہ حديث اس مسئلہ ميں صريح نہيں ہے، اور اسى لئے امام بخارى رحمہ اللہ نے اس حديث سے ارض مقدس ميں دفن ہونے كا استحباب اخذ كيا ہے، اور اس سے يہ استنباط نہيں كيا كہ نیک و صالح افراد كے ساتھ دفن ہونا مستحب ہے.
اور پھر كئى ايک سلف اور اہل علم سے نیک و صالح افراد كے ساتھ دفن كرنے كى وصيت وارد ہے.
ابن مسعود رضى اللہ تعالى عنہما نے وصيت كى تھى كہ انہيں عثمان بن مظعون رضى اللہ تعالى عنہ كى قبر كے قريب دفن كيا جائے.
ديكھيں: الثقات لابن حبان ( 3 / 208 ).
اور امام بخارى رحمہ اللہ كے ساتھى غالب بن جبريل رحمہ اللہ نے وصيت كى تھى كہ انہيں امام بخارى رحمہ اللہ كے پہلو ميں دفن كيا جائے.
ديكھيں: المتفق و المفترق ( 3 / 201 ).
اور حافظ ابو بكر الخطيب رحمہ اللہ نے وصيت كى تھى كہ انہيں بشر بن الحارث كے پہلو ميں دفن كيا جائے.
ديكھيں: تاريخ دمشق ( 5 / 34 ).
چنانچہ جو شخص ان علماء كى اقتدا كرتے ہوئے كسى نیک و صالح شخص كے پہلو ميں دفن ہونے كى وصيت كرتا ہے تو اس كا انكار نہيں كيا جا سكتا ـ اگرچہ ہميں يقين ہے كہ اسے اس سے كوئى فائدہ نہيں ہو گا ـ كيونكہ سنت نبويہ ميں اس كا كوئى ثبوت نہيں ملتا .
ليكن اتنا ہے كہ جس كا انكار كرنا اور لوگوں كو اس سے روكنا ضرورى ہے وہ يہ كہ: كوئى يہ وصيت مت كرے كہ اسے فلاں جگہ يا فلاں كے پہلو ميں دفن كرے تا كہ وہ اس ميت كى بركت حاصل كر سكے، اور وہ ميت اسے فائدہ دے گى يا پھر اللہ كے ہاں اس كى سفارش كرے گى.
يہ سب كچھ غلط ہے اور اس كى كوئى دليل نہيں، اور يہ اعتقاد ركھنا صحيح نہيں، بلكہ ايسا كرنا لوگوں کیلئے برے عمل كا باعث بن سكتا ہے، كيونكہ وہ كسى كى سفارش كا بھروسہ كرنا شروع كر ديں گے.
مسلمان پر واجب اور ضرورى يہ ہے كہ وہ موت كى تيارى كرے، اور اچھے و نیک و صالح اعمال كرے جو قبر ميں اس كیلئے انس كا باعث ہوں گے.
امام بخارى اور مسلم نے انس بن مالک رضى اللہ تعالى عنہما سے روايت كيا ہے كہ رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:
" ميت كے پيچھے تين چيزيں جاتى ہيں، ان ميں سے دو واپس آ جاتى ہيں اور ایک اس كیساتھ رہتى ہے: اس كے پيچھے اس كے اہل و عيال اور اس كا مال اور اس كا عمل جاتا ہے، اور اس كا اہل و عيال اور مال واپس آ جاتا ہے، اور اس كے ساتھ اس كا عمل باقى رہ جاتا ہے "
صحيح بخارى حديث نمبر ( 6514 ) صحيح مسلم حديث نمبر ( 2960 ).
اور سلمان رضى اللہ تعالى عنہ فرماتے ہيں:
" يقينا زمين كسى كى بھى تقديس نہيں كرتى، بلكہ انسان كو اس كا عمل مقدس بناتا ہے "
اسے امام مالک رحمہ اللہ  نے موطا امام مالک حديث نمبر ( 1500 ) ميں روايت كيا ہے.
چنانچہ آدمى كے عمل برے ہوں تو اسے اچھا پڑوس كوئى فائدہ نہيں ديتا، اور اسى طرح اگر اس كے عمل اچھے ہوں تو اسے برا پڑوس بھى كوئى نقصان ديتا.
اللہ تعالى سے ہمارى دعا ہے كہ وہ ہمارا خاتمہ اچھا كرے. واللہ اعلم .
حضرت نانوتوی رحمۃ اللہ علیہ کا موقف :
خطبات حکیم الاسلام، جلد سوم کے حوالہ سے کہا جاتا ہے کہ حضرت مولانا محمد قاسم صاحب نانوتوی رحمۃ اللہ علیہ کے مریدین میں ایک شخص اللہ دین تھا. میں نے بھی دیکھا ہے. بوڑھا آدمی بالکل ان پڑھ اور جاہل تھا اس کی گوشت کی دوکان تھی. بے پڑھا لکھا بھی تھا اور تجارت بھی ایسی تھی جس میں پڑھنے لکھنے کی ضرورت نہیں. گائے بھینس ذبح کی، اس کا گوشت بیچ دیا. وہ حضرت سے بیعت تھا. مگر میں نے اس کو دیکھا ہے کہ اس میں دین کی سمجھ اتنی اعلی تھی کہ آج علماء میں بھی وہ نہیں ملتی. جو اس جاہل میں محض صحبت یافتہ ہونے کی وجہ سے تھی. اس نے خود ہی مجھے یہ واقعہ سنایا تھا کہ حضرت نانوتوی رحمۃ اللہ علیہ ایک مجلس میں بیٹھے ہوئے تھے میں نے حضرت سے ایک سوال کیا؟
حضرت یہ جو سننے میں آیا ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم نے ارشاد فرمایا کہ مرنے کے بعد بزرگوں کے قرب و جوار میں دفن ہونے کی کوشش کی جائے اولیاء کی مزارات کے پاس اپنی قبر بنوائیں. اس کی لوگ کوشش کریں تو اس کا کیا فائدہ ہے؟
اس لئے کہ مرنے والا اگر نیک ہے اور اعمال صالحہ اس کیساتھ ہیں اسے کہیں بھی دفن کر دو. اس کی نیکی اس کیساتھ ہے. قبر اس کی روشن ہو جائے گی.. اور اگر وہ بد عمل ہے اسے نبی کے قریب بھی دفن کر دیں تب بھی اس کی بدی سامنے آئے گی. تو انبیاء و اولیاء کے قرب و جوار میں دفن کر نے کا کیا فائدہ ہوا؟
یہ اس نے سوال کیا.. اب سوال کرنے والا بالکل ان پڑھ جاہل آدمی اور عالم برزخ کا سوال کر رہا ہے اس کو اگر حقائق سمجھائے جائیں اور علم کی باریک باتیں بتائی جائیں. وہ کچھ بھی نہ سمجھتا. موٹی سمجھ کا آدمی تھا..
حضرت نے اس کو سمجھایا. اور ایک مثال کے ذریعے مسئلے کو واضح کر دیا کہ وہ جاہل بھی سمجھ گیا اور دوسرے بھی سمجھ گئے.. جب وہ سوال کر چکا حضرت نے فرمایا اچھا ہم اس کا جواب دیں گے. ابھی جواب نہیں دیا. موقع پر جواب دیں گے وہ بھی خاموش ہو گیا.
گرمی شدید پڑ رہی تھی وہ پنکھا لے کر حضرت کو جھلنے کھڑا ہو گیا اسے بھی یاد نہیں رہا کہ میں نے سوال کیا تھا پندرہ بیس منٹ گزر چکے.. حضرت نے اس سے پوچھا. میاں اللہ دین. تم یہ پنکھا کسے جھل رہے ہو؟
کہا حضرت آپ کو جھل رہا ہوں. فرمایا یہ جو لوگ مجلس میں ساتھ بیٹھے ہیں انہیں تو نہیں جھل رہا؟کہا نہیں انہیں تو نہیں جھل رہا. اس واسطے کہ نہ میں ان کا شاگرد نہ ان کا مرید. یہ تو سارے میرے برابر ہیں. مجھے کیا ضرورت تھی کہ ان کو پنکھا جھلوں اور ان کا خادم بنوں. میں تو آپ کو پنکھا جھلنے کھڑا ہو گیا..
فرمایا ہوا ان سب لوگوں کو لگ رہی ہے؟ کہ نہیں؟
جی ہاں ہوا تو لگ رہی ہے.
فرمایا یہ تمہارے سوال کا جواب ہے
تم نے یہ سوال کیا کہ انبیاء و اولیاء کے قریب دفن کرنے سے کیا فائدہ؟ فرمایا اولیاء اللہ کی قبروں پر رحمت کی ہوائیں چلتی ہیں. رحمت کی ہوائیں اترتی ہیں. مقصود اصلی وہ ہوتے ہیں لیکن آس پاس والوں کو بھی ہوا لگتی ہے رحمت کے اثرات سب کو پہنچتے ہیں. اس واسطے دفن کر نے کے بارے میں فرمایا گیا کہ کوشش کرو اہل اللہ اور صالحین کے پاس دفن ہوں. ان پر رحمت کی ہوائیں چلیں گی. آس پاس والوں کو بھی لگیں گی. چاہے وہ مقصود اصلی نہ ہوں. مقصود فقط وہ نبی یا ولی کامل ہوں.
فرمایا یہ تمہارے سوال کا جواب ہے. تو قبر اور برزخ کے عالم کا باریک مسئلہ اس کے دل میں اتار دیا. سب لوگ سمجھ گئے. تو مثال ایک ایسی کھلی دلیل ہوتی ہے کہ دقیق سے دقیق مسائل جو سمجھ میں نہ آسکیں. وہ مثال کے ذریعے سمجھائے جا سکتے ہیں..
اللہ رب العزت حضرت مولانا محمد قاسم نانوتوی صاحب رحمۃاللہ علیہ کے اعمال صالحہ کی برکتوں سے ہم سب کو عذاب قبر سے حفاظت فرمائے آمین

اردو الفاظ کا درست استعمال

ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺑﭽﮧ ﮐﻮ ﮨﻢ ﺑﭽﮧ ﮨﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ، ﺳﺎﻧﭗ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ، ﺍﻟﻮ

ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ، ﺑﻠﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ؛ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﺪﺍ ﺟﺪﺍ ﻟﻔﻆ
ﮨﯿﮟ ۔ ﻣﺜﻼً :
ﺑﮑﺮﯼ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ : ﻣﯿﻤﻨﺎ
ﺑﮭﯿﮍ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ : ﺑﺮّﮦ
ﮨﺎﺗﮭﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ : ﭘﺎﭨﮭﺎ
ﺍﻟﻮّ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ : ﭘﭩﮭﺎ
ﺑﻠﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ : ﺑﻠﻮﻧﮕﮍﮦ
ﺑﭽﮭﮍﺍ : ﮔﮭﻮﮌﯼ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ
ﮐﭩﮍﺍ : ﺑﮭﯿﻨﺲ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ
ﭼﻮﺯﺍ : ﻣﺮﻏﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ
ﺑﺮﻧﻮﭨﺎ : ﮨﺮﻥ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ
ﺳﻨﭙﻮﻻ : ﺳﺎﻧﭗ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ
ﮔﮭﭩﯿﺎ : ﺳﻮﺭ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ
ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻌﺾ ﺟﺎﻧﺪﺍﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﺟﺎﻧﺪﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺑﮭﯿﮍ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ
ﺧﺎﺹ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﻘﺮﺭ ﮨﯿﮟ ۔ﺟﻮ ﺍﺳﻢ ﺟﻤﻊ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ؛
ﻣﺜﻼً : ﻃﻠﺒﺎﺀ ﮐﯽ ﺟﻤﺎﻋﺖ ، ﺭﻧﺪﻭﮞ ﮐﺎ ﺣﻠﻘﮧ ، ﺑﮭﯿﮍﻭﮞ ﮐﺎ ﮔﻠﮧ ،
ﺑﮑﺮﯾﻮﮞ ﮐﺎ ﺭﯾﻮﮌ ، ﮔﻮﻭﮞ ﮐﺎ ﭼﻮﻧﺎ ، ﻣﮑﮭﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﮭﻠﮍ ، ﺗﺎﺭﻭﮞ ﮐﺎ
ﺟﮭﮍﻣﭧ ﯾﺎ ﺟﮭﻮﻣﮍ ، ﺍٓﺩﻣﯿﻮﻥ ﮐﯽ ﺑﮭﯿﮍ ، ﺟﮩﺎﺯﻭﮞ ﮐﺎ ﺑﯿﮍﺍ ،
ﮨﺎﺗﮭﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﮈﺍﺭ، ﮐﺒﻮﺗﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﭨﮑﮍﯼ، ﺑﺎﻧﺴﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﻨﮕﻞ ،
ﺩﺭﺧﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﺟﮭﻨﮉ ، ﺍﻧﺎﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﮐﻨﺞ ، ﺑﺪﻣﻌﺎﺷﻮﮞ ﮐﯽ ﭨﻮﻟﯽ ،
ﺳﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﺩﺳﺘﮧ ، ﺍﻧﮕﻮﺭ ﮐﺎ ﮔﭽﮭﺎ، ﭨﮉﯼ ﺩﻝ ، ﮐﯿﻠﻮﮞ ﮐﯽ ﮔﮩﻞ ،
ﺭﯾﺸﻢ ﮐﺎ ﻟﭽﮭﺎ ، ﻣﺰﺩﻭﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﺟﺘﮭﺎ ،ﻓﻮﺝ ﮐﺎ ﭘﺮّﺍ ، ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ
ﭨﮭﭙﯽ، ﻟﮑﮍﯾﻮﮞ ﮐﺎ ﮔﭩﮭﺎ ، ﮐﺎﻏﺬﻭﮞ ﮐﯽ ﮔﮉﯼ ، ﺧﻄﻮﮞ ﮐﺎ ﻃﻮﻣﺎﺭ،
ﺑﺎﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﮔُﭽﮭﺎ، ﭘﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﮈﮬﻮﻟﯽ ، ﮐﻼ ﺑﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﻨﺠﯽ ۔
ﺍﺭﺩﻭ ﮐﯽ ﻋﻈﻤﺖ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﯿﺠﯿﮯ ﮐﮧ ﮨﺮ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﮐﯽ
ﺻﻮﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻋﻠﯿﺤﺪﮦ ﻟﻔﻆ ﮨﮯ ، ﻣﺜﻼ :
ﺷﯿﺮ ﺩﮬﺎﺭﺗﺎ ﮨﮯ ، ﮨﺎﺗﮭﯽ ﭼﻨﮕﮭﺎﺭﺗﺎ ﮨﮯ ، ﮔﮭﻮﮌﺍ ﮨﻨﮩﻨﺎﺗﺎ ﮨﮯ ، ﮔﺪﮬﺎ
ﮨﯿﭽﻮﮞ ﮨﯿﭽﻮﮞ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﮐﺘﺎ ﺑﮭﻮﻧﮑﺘﺎ ﮨﮯ ، ﺑﻠﯽ ﻣﯿﺎﺅﮞ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ،
ﮔﺎﺋﮯ ﺭﺍﻧﺒﮭﺘﯽ ﮨﮯ ، ﺳﺎﻧﮉ ﮈﮐﺎﺭﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺑﮑﺮﯼ ﻣﻤﯿﺎﺗﯽ ﮨﮯ ، ﮐﻮﺋﻞ
ﮐﻮﮐﺘﯽ ﮨﮯ ، ﭼﮍﯾﺎ ﭼﻮﮞ ﭼﻮﮞ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ، ﮐﻮﺍ ﮐﺎﺋﯿﮟ ﮐﺎﺋﯿﮟ ﮐﺮﺗﺎ
ﮨﮯ ، ﮐﺒﻮﺗﺮ ﻏﭩﺮ ﻏﻮﮞ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﻣﮑﮭﯽ ﺑﮭﻨﺒﮭﻨﺎﺗﯽ ﮨﮯ ، ﻣﺮﻏﯽ
ﮐﺮﮐﮍﺍﺗﯽ ﮨﮯ، ﺍﻟﻮ ﮨﻮﮐﺘﺎ ﮨﮯ ، ﻣﻮﺭ ﭼﻨﮕﮭﺎﺭﺗﺎ ﮨﮯ ، ﻃﻮﻃﺎ ﺭﭦ ﻟﮕﺎﺗﺎ
ﮨﮯ ، ﻣﺮﻏﺎ ﮐﮑﮍﻭﮞ ﮐﮑﮍﻭﮞ ﮐﻮﮞ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﭘﺮﻧﺪﮮ ﭼﺮﭼﺮﺍﺗﮯ ﮨﯿﮟ ،
ﺍﻭﻧﭧ ﺑﻐﺒﻐﺎﺗﺎ ﮨﮯ، ﺳﺎﻧﭗ ﭘﮭﻮﻧﮑﺎﺭﺗﺎ ﮨﮯ ، ﮔﻠﮩﺮﯼ ﭼﭧ ﭼﭩﺎﺗﯽ ﮨﮯ ،
ﻣﯿﻨﮉﮎ ﺗﺮﺍﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺟﮭﯿﻨﮕﺮ ﺟﮭﻨﮕﺎﺭﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺑﻨﺪ ﮔﮭﮕﮭﯿﺎﺗﺎ ﮨﮯ ،
ﮐﺌﯽ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮨﯿﮟ ﻣﺜﻼ
ﺑﺎﺩﻝ ﮐﯽ ﮔﺮﺝ، ﺑﺠﻠﯽ ﮐﯽ ﮐﮍﮎ ، ﮨﻮﺍ ﮐﯽ ﺳﻨﺴﻨﺎﮨﭧ ، ﺗﻮﭖ ﮐﯽ
ﺩﻧﺎﺩﻥ ، ﺻﺮﺍﺣﯽ ﮐﯽ ﮔﭧ ﮔﭧ ،ﮔﮭﻮﮌﮮ ﮐﯽ ﭨﺎﭖ ، ﺭﻭﭘﻮﮞ ﮐﯽ
ﮐﮭﻨﮏ ، ﺭﯾﻞ ﮐﯽ ﮔﮭﮍ ﮔﮭﮍ، ﮔﻮﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺎ ﺗﺎ ﺭﯼ ﺭﯼ، ﻃﺒﻠﮯ ﮐﯽ
ﺗﮭﺎﭖ، ﻃﻨﺒﻮﺭﮮ ﮐﯽ ﺁﺱ، ﮔﯿﻨﺪ ﮐﯽ ﮔﻮﻧﺞ،ﮔﮭﮍﯾﺎﻝ ﮐﯽ ﭨﻦ ﭨﻦ،
ﭼﮭﮑﮍﮮ ﮐﯽ ﭼﻮﮞ، ﺍﻭﺭ ﭼﮑﯽ ﮐﯽ ﮔﮭُﻤﺮ۔
ﺍﻥ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﮐﯽ ﺧﺼﻮﺻﯿﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻥ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﭘﺮ ﻏﻮﺭ ﮐﯿﺠﯿﮯ :
ﻣﻮﺗﯽ ﮐﯽ ﺁﺏ ، ﮐﻨﺪﻥ ﮐﯽ ﺩﻣﮏ، ﮨﯿﺮﮮ ﮐﯽ ﮈﻟﮏ ، ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﮐﯽ
ﭼﻤﮏ ، ﮔﮭﻨﮕﮭﺮﻭ ﮐﯽ ﭼﮭُﻦ ﭼﮭُﻦ ،ﺩﮬﻮﭖ ﮐﺎ ﺗﮍﺍﻗﺎ ۔ ﺑﻮ ﮐﯽ
ﺑﮭﺒﮏ ،ﻋﻄﺮ ﮐﯽ ﻟﭙﭧ ،ﭘﮭﻮﻝ ﮐﯽ ﻣﮩﮏ ۔
ﻣﺴﮑﻦ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻟﻔﺎﻅ
ﺟﯿﺴﮯ ﺑﺎﺭﺍﺕ ﮐﺎ ﻣﺤﻞ ،ﺑﯿﮕﻤﻮﮞ ﮐﺎ ﺣﺮﻡ ، ﺭﺍﻧﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻧﻮﺍﺱ،
ﭘﻮﻟﯿﺲ ﮐﯽ ﺑﺎﺭﮎ ، ﺭﺷﯽ ﮐﺎ ﺁﺷﺮﻡ ، ﺻﻮﻓﯽ ﮐﺎ ﺣﺠﺮﮦ ،ﻓﻘﯿﮧ ﮐﺎ
ﺗﮑﯿﮧ ﯾﺎ ﮐﭩﯿﺎ ،ﺑﮭﻠﮯ ﻣﺎﻧﺲ ﮐﺎ ﮔﮭﺮ ، ﻏﺮﯾﺐ ﮐﺎ ﺟﮭﻮﻧﭙﮍﺍ ، ﺑﮭﮍﻭﮞ ﮐﺎ
ﭼﮭﺘﺎ ، ﻟﻮﻣﮍﯼ ﮎ ﺑﮭﭧ ،ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﮐﺎ ﮔﮭﻮﻧﺴﻠﮧ ، ﭼﻮﮨﮯ ﮐﺎ
ﺑﻞ ،ﺳﺎﻧﭗ ﮐﯽ ﺑﺎﻧﺒﯽ ،ﻓﻮﺝ ﮐﯽ ﭼﮭﺎﻭﻧﯽ ،ﻣﻮﯾﺸﯽ ﮐﺎ ﮐﮭﮍﮎ ،
ﮔﮭﻮﮌﮮ ﮐﺎ ﺗﮭﺎﻥ

Thursday, 25 February 2016

جمعہ کے روز درود شریف کا اہتمام

ایس اے ساگر

احادیث میں جمعہ کے روز درود شریف کی فضیلت وارد ہوئی ہے. حضرت انس رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا،
جمعہ کے دن مجھ پر کثرت سے درود بھیجا کرو
کیونکہ جبرئیل علیہ السلام اپنے رب کی جانب سے
میرے پاس ابھی یہ پیغام لے کر آئے تھے
کہ روئے زمین پر جو کوئی مسلمان آپ صلى اللہ علیہ وسلم پر ایک مرتبہ درود بھیجے گا
تو میں اس پر دس رحمتیں نازل کروں گا اور میرے فرشتے اس کے لئے دس مرتبہ دعائے مغفرت کریں گے۔
"طبرانی، ترغیب"
اسی سے ملتی جلتی روایت سنن ابو داؤد میں کچھ یوں ہے
حضرت اوس بن اوس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ
رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا،
تمھارے بہتر دنوں میں سے ایک جمعہ کا دن ہے
اسی دن آدم علیہ السلام پیدا ہوئے اسی دن ان کا انتقال ہوا اسی دن صور پھونکا جائے گا
اور اس دن سب لوگ بیہوش ہوں گے
اس لئے اس دن مجھ پر کثرت سے درود بھیجا کرو کیونکہ تمھارا دردو میرے سامنے پیش کیا جاتا ہے
نیز سنن ابو داؤد میں ہی حضرت اوس بن اوس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا،
تمہارے بہتر دنوں میں ایک دن جمعہ کا دن ہے
لہذا اس دن میں مجھ پر کثرت سے درود پڑھا کرو
کیونکہ تمہارا درود میرے سامنے پیش کیا جاتا ہے
اور سنن نسائی میں اسحق بن منصور، حسین جعفی، عبدالرحمن بن یزید بن جابر، ابواشعث صنعانی، اوس بن اوس سے ایک روایت ان الفاظ کیساتھ پیش کی گئی ہے کہ
نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا
تمام دنوں میں تم لوگوں کے واسطے جمعہ کا دن ہے
اس روز حضرت آدم کی ولادت مبارکہ ہوئی اور اس روز ان کی روح قبض ہوئی
اور اس روز صور پھونکا جائے گا اور وہ لوگ بے ہوش ہو جائیں گے
تو اس روز تم لوگ بہت زیادہ درود شریف بھیجو اس لئے کہ تم لوگ جو درود بھیجو گے وہ میرے سامنے پیش ہوگا.

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام؟

جامعہ بنوری ٹاؤن ،جامعہ علوم اسلامیہ، سے سوال کیا گیا ہے کہ جمعہ کے دن درود شریف پڑھنا بھت افضل عمل ہے، ایک حدیث میں ہے کہ جو شخص جمعے کے دن دو سو دفعہ درود شریف پڑھے گا، اس کے دو سو سال کے گناہ معاف ہو جائیں گے،اب پوچھنا یہ ہے کہ اس زمانہ میں صرف درود ابراہیمی جو نماز میں پڑھتے ہیں، وہی پڑھیں یا کسی اور درود سے بھی یہ فضیلت حاصل ہو جائے گی؟ نیز اگر ہم اللھم صل علی محمد وعلی آل محمد پڑھیں تو یہ فضیلت حاصل ہو جائے گی؟

کیا ملا جواب؟

بلاشبہ درود شریف ایک فضیلت والا عمل ہے اور احادیث میں اس کے بہت سے فضائل آئے ہیں، حضرت شیخ الحدیث مولانا زکریا رحمہ اللہ نے فضائل درود شریف میں تفصیل سے احادیث ذکر کی ہیں، خاص طور پر جمعہ کے دن درود شریف پڑھنے کے بارے میں بھی مستقل فضائل ہیں،
مثلا :نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : تمہارے دنوں میں سب سے افضل دن جمعہ کا دن ہے، اس دن کثرت سے درود پڑھاکرو، کیونکہ تمہارا درود مجھے پہونچایا جاتا ہے۔ مسند احمد، ابوداوٴد، ابن ماجہ، صحیح ابن حبان ۔ ایک اور حدیث میں ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : جمعہ کے دن اور جمعہ کی رات کثرت سے درود پڑھا کرو، جو ایسا کرے گا تو میں قیامت کے دن اس کی شفاعت کروں گا بیہقی۔ رہی آپ کی بیان کردہ فضیلت پر مشتمل حدیث تو وہ ہمیں تلاش کرنے پر نہیں ملی، البتہ اس بارے میں یہ اصولی بات سمجھ لینی چاہئے کہ جن روایات میں درود کے مخصوص الفاظ کا ذکر ہے، ان کے مطابق فضیلت بھی انہی الفاظ کو پڑھنے پر ملے گی، اور جن میں مخصوص الفاظ کے بغیر کوئی فضیلت بیان کی گئی ہے تو امید ہے کہ درود کے کوئی بھی مسنون الفاظ پڑھے جائیں گے، وہ فضیلت حاصل ہو گی، اگر آپ کی بیان کردہ مذکورہ روایت ثابت ہے تو یہ اصول اس پر بھی لاگو کیا جاسکتا ہے، واللہ اعلم

Sayyiduna Anas (RadhiAllaho anho) narrates

that Rasulullah (Sallallahu Alaihi Wasallam) said:

Send Salawat excessively upon me on Friday,
for Jibrail Alaihis salam has just come to me
with a message from my Rabb 'Azza wa Jall:

When any Muslim on the earth
sends Salawat upon you once,
I bestow upon him ten blessings
and My angels seek forgiveness for him ten times.

{ Tabarani, Targhib }

شب جمعہ کو ارواح کی حاضری ؟

ایس اے ساگر

واٹس ایپ پر جمعہ کی شب کو اس قسم کی پوسٹس دیکھی جارہی ہیں جن میں کہا گیا ہے کہ جمعرات کو مرنے والوں کی روحیں دنیا میں آتی ہیں لہذا اس موقع پر ایصال ثواب کا اہتمام کیا جائے. اہل علم کے نزدیک جمعرات کو روحوں کا آنا کسی صحیح حدیث سے ثابت نہیں، نہ اس کا کوئی شرعی ثبوت ہے، باقی دعا و استغفار اور ایصالِ ثواب ہر وقت ہوسکتا ہے، اس میں جمعرات کی شام کی تخصیص بے معنی ہے۔ اس موضوع پر شہید اسلام حضرت مولانا محمد یوسف لدھیانوی رحمۃ اللہ علیہ نے خاطر خواہ روشنی ڈالی ہے.

کیا روحیں جمعرات کو آتی ہیں؟

س… سنا ہے کہ ہر جمعرات کو ہر گھر کے دروازے پر روحیں آتی ہیں، کیا یہ صحیح ہے؟ اور کیا جمعرات کی شام کو ان کیلئے دعا کی جائے؟

ج… جمعرات کو روحوں کا آنا کسی صحیح حدیث سے ثابت نہیں، نہ اس کا کوئی شرعی ثبوت ہے، باقی دعا و استغفار اور ایصالِ ثواب ہر وقت ہوسکتا ہے، اس میں جمعرات کی شام کی تخصیص بے معنی ہے۔

کیا مرنے کے بعد روح چالیس دن تک گھر آتی ہے؟

س… کیا چالیس دن تک روح مرنے کے بعد گھر آتی ہے؟

ج… روحوں کا گھر آنا غلط ہے۔

دفنانے کے بعد روح اپنا وقت کہاں گزارتی ہے؟

س… دفنانے کے بعد روح اپنا وقت آسمان پر گزارتی ہے یا قبر میں یا دونوں جگہ؟

ج… اس بارے میں روایات بھی مختلف ہیں اور علماء کے اقوال بھی مختلف ہیں۔ مگر تمام نصوص کو جمع کرنے سے جو بات معلوم ہوتی ہے وہ یہ کہ نیک ارواح کا اصل مستقر علّییّن ہے (مگر اس کے درجات بھی مختلف ہیں)، بد ارواح کا اصل ٹھکانا سجین ہے اور ہر روح کا ایک خاص تعلق اس کے جسم کے ساتھ کردیا جاتا ہے، خواہ جسم قبر میں مدفون ہو یا دریا میں غرق ہو، یا کسی درندے کے پیٹ میں۔ الغرض جسم کے اجزاء جہاں جہاں ہوں گے روح کا ایک خاص تعلق ان کے ساتھ قائم رہے گا اور اسی خاص تعلق کا نام برزخی زندگی ہے، جس طرح نورِ آفتاب سے زمین کا ذرہ چمکتا ہے، اسی طرح روح کے تعلق سے جسم کا ہر ذرہ “زندگی” سے منور ہوجاتا ہے، اگرچہ برزخی زندگی کی حقیقت کا اس دنیا میں معلوم کرنا ممکن نہیں۔

کیا روح کو دنیا میں گھومنے کی آزادی ہوتی ہے؟

س… روح کو دنیا میں گھومنے کی آزادی ہوتی ہے یا نہیں؟ کیا وہ جن جگہوں کو پہچانتی ہے، مثلاً گھر، وہاں جاسکتی ہے؟

ج… کفار و فجار کی روحیں تو “سجین” کی جیل میں مقید ہوتی ہیں، ان کے کہیں آنے جانے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ اور نیک ارواح کے بارے میں کوئی ضابطہ بیان نہیں فرمایا گیا۔ اس لئے اس سلسلہ میں قطعیت کے ساتھ کچھ کہنا مشکل ہے، اصل بات یہ ہے کہ روح اپنے تصرفات کے لئے جسم کی محتاج ہے، جس طرح جسم روح کے بغیر کچھ نہیں کرسکتا، اسی طرح روح بھی جسم کے بغیر تصرفات نہیں کرسکتی۔ یہ تو ظاہر ہے کہ موت کے بعد اس ناسوتی جسم کے تصرفات ختم کردئیے جاتے ہیں، اس لئے مرنے کے بعد روح اگر کوئی تصرف کرسکتی ہے تو مثالی جسم سے کرسکتی ہے، چنانچہ احادیث میں انبیاء کرام، صدیقین، شہداء اور بعض صالحین کے مثالی جسم دئیے جانے کا ثبوت ملتا ہے۔ خلاصہ یہ کہ جن ارواح کو مرنے کے بعد مثالی جسم عطا کیا جاتا ہے وہ اگر باذن اللہ کہیں آتی جاتی ہوں تو اس کی نفی نہیں کی جاسکتی۔ مثلاً: لیلة المعراج میں انبیاء کرام علیہم السلام کا آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی اقتداء میں نماز ادا کرنے کیلئے بیت المقدس میں جمع ہونا، شہداء کا جنت میں کھانا پینا اور سیر کرنا، اس کے علاوہ صالحین کے بہت سے واقعات اس قسم کے موجود ہیں لیکن جیسا کہ پہلے عرض کیا گیا کہ اس کیلئے کوئی ضابطہ متعین کرنا مشکل ہے۔

ایک حدیث میں ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم جب احد سے واپس ہوئے تو حضرت مصعب بن عمیر رضی اللہ عنہ اور ان کے ساتھیوں کی قبر پر ٹھہرے اور فرمایا:
میں گواہی دیتا ہوں کہ تم اللہ تعالیٰ کے نزدیک زندہ ہو۔ (پھر صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین سے مخاطب ہوکر فرمایا) پس ان کی زیارت کرو، اور ان کو سلام کہو، پس قسم ہے اس ذات کی جس کے قبضہ میں میری جان ہے! نہیں سلام کہے گا ان کو کوئی شخص مگر یہ ضرور جواب دیں گے اس کو قیامت تک۔ (حاکم، وصححہ بیہقی، طبرانی)

مسند احمد اور مستدرک حاکم کے حوالہ سے حضرت ام الموٴمنین عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کا ارشاد نقل کیا ہے کہ:
میں اپنے گھر میں (یعنی حجرہٴ شریفہ روضہٴ مطہرہ میں) داخل ہوتی تو پردہ کے کپڑے اتار دیتی تھی، میں کہا کرتی تھی کہ یہ تو میرے شوہر (صلی اللہ علیہ وسلم) اور میرے والد ماجد ہیں، لیکن جب سے حضرت عمر رضی اللہ عنہ دفن ہوئے اللہ کی قسم! میں کپڑے لپیٹے بغیر کبھی داخل نہیں ہوئی، حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے حیا کی بنا پر۔
(مشکوٰة باب زیارة القبور ص:۱۵۴)

کیا روحوں کا دنیا میں آنا ثابت ہے؟

س… کیا روحیں دنیا میں آتی ہیں یا عالم برزخ میں ہی قیام کرتی ہیں؟ اکثر ایسی شہادتیں ملتی ہیں جن سے معلوم ہوتا ہے کہ روحیں اپنے اعزہ کے پاس آتی ہیں، شب برأت میں بھی روحوں کی آمد کے بارے میں سنا ہے۔ آپ اس مسئلے کی ضرور وضاحت کیجئے مرنے کے بعد سوم، دسواں اور چہلم کی شرعی حیثیت کی وضاحت بھی بذریعہ اخبار کردیجئے تاکہ عوام الناس کا بھلا ہو۔

ج… دنیا میں روحوں کے آنے کے بارے میں قطعی طور پر کچھ کہنا ممکن نہیں اور نہ اس سلسلہ میں کوئی صحیح حدیث ہی وارد ہے۔ سوئم، دسواں اور چہلم خودساختہ رسمیں ہیں، ان کی مکمل تفصیل آپ کو میری کتاب “اختلافِ امت اور صراطِ مستقیم” میں ملے گی۔

حادثاتی موت مرنے والے کی روح کا ٹھکانا

س… ایک صاحب کا دعویٰ ہے کہ جو ہنگامی موت یا حادثاتی موت مرجاتے ہیں یا کسی کے مارڈالنے سے، سو ایسے لوگوں کی روحیں برزخ میں نہیں جاتیں وہ کہیں خلاء میں گھومتی رہتی ہیں اور متعلقہ افراد کو بسااوقات دھمکیاں دینے آجاتی ہیں۔ مگر مجھے یہ سب باتیں سمجھ میں نہیں آتیں، میرا خیال ہے کہ روح پرواز کے بعد علّییّن یا سجین میں چلی جاتی ہے اور ہر ایک کے لئے برزخ ہے اور قیامت تک وہ وہیں رہتی ہے، براہ کرم قرآن و سنت کی روشنی میں میری تشفی فرمائیے۔

ج… ان صاحب کا دعویٰ غلط ہے اور دورِ جاہلیت کی سی توہم پرستی پر مبنی ہے۔ قرآن و سنت کی روشنی میں آپ کا نظریہ صحیح ہے، مرنے کے بعد نیک ارواح کا مستقر علّییّن ہے اور کفار و فجار کی ارواح سجین کے قیدخانہ میں بند ہوتی ہیں۔

صحیح نہیں ہے

فتاوی بسم اللہ جلد ۲ میں اسکا تذکرہ ہے.