Sunday, 11 April 2021

لاؤڈ اسپیکر سے اذان کا شرعی حکم کیا ہے؟ Atrocious Use of Loudspeakers

#لاؤڈاسپیکر_سے_اذان_کا_شرعی_حکم_کیا_ہے؟

#ایس_اے_ساگر

#لاؤڈاسپیکر_سے_ہونے_والی_تکلیف اور علمائے اسلام کے_فتوے

چند دنوں سے ہمارے ملک میں ایک گویّے کے سبب لاؤڈاسپیکر پر اذان وغیرہ کا مسئلہ زیرِبحث ہے، جب کہ اسلام اور علمائے اسلام نے پہلے ہی سے اس جانب توجہ مبذول رکھی ہے اور لاؤڈ اسپیکر کے استعمال کے سخت اصول بنائے ہیں، تاکہ کسی مسلمان ہی نہیں کسی انسان کو بھی اس سے کسی قسم کی تکلیف کا سامنا نہ کرنا پڑے، جس کی تفصیل ہم نے اپنے ایک مضمون بعنوان: 

حکومتی قوانین، اسلامی و شرعی ہدایات اور صوتی آلودگی

اسلام امن و آشتی کا مذہب ہے، جس میں کسی انسان تو کجا، کسی ذی روح کو تکلیف دینے کی ہرگز اجازت نہیں۔ اسی لئے موجودہ دور میں پھیل رہی مختلف آلودگیوں کے متعلق بھی اسلامی ہدایات واضح اور دو ٹوک ہیں، یہاں ہم صوتی آلودگی سے متعلق چند باتوں کا ذکر کررہے ہیں کہ یقینا صوتی آلودگی انسان کے لیے کچھ کم مضرت رساں نہیں اور یہ شور اور غیر معتدل آواز کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے ،جس کا شریعتِ اسلامی نے پورا لحاظ رکھا ہے، اس کے باوجود بعض ناوقفوں کی جانب سے بعض بے سر و پا کی باتیں سامنے آتی رہتی ہیں۔

پریشان کُن کارخانے:

سب جانتے ہیں کہ کارخانے کی بعض مشینیں بہت پُر شور ہوتی ہیں، حکومت کی طرف سے ان کو آبادی سے باہر لگانے کی ہدایت ہوتی ہے، یہ ہدایت شرعاً بھی قابلِ لحاظ ہیں۔ کیوں کہ مشاہدہ ہے کہ بعض مشینوں سے شہریوں کو بہت زیادہ تکلیف ہوتی ہے، اس لئے شریعت کا ماننا ہے کہ حکومت کی طرف سے ان کو آبادی سے باہر نکالنے کی ہدایت خیرخواہی پر مبنی ہے، جس پر عمل نہ کرنے سے انسانی آبادی کے ساتھ کھلواڑ ہوتی ہے، بنا بریں یہ ہدایت شرعاً واجب کے درجے میں ہے۔نیز اس کا ثبوت خیرالقرون میں بھی موجود ہے، چناں چہ ایک روایت کے مطابق امیر المومنین سیدنا حضرت عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے ایک لوہار کی دکان کو ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کردیا تھا، کیوں کہ وہ پریشان کن آلودگی کا سبب بنی ہوئی تھی۔ نیز امام ابو یوسف رحمۃ اللہ علیہ نے فتویٰ دیا تھا کہ ہر شخص کو یہ اختیار ہے کہ وہ اپنے کسی پڑوسی کو اپنا گھر حمام میں تبدیل کرنے یا اس کے دھویں سے دوسروں کو تنگ کرنے سے روک دے۔ (تطہیرِ ماحول اور اسلام کے معمولات: 113-115)

گاڑیوں کے زوردار ہارن:

اکثر بڑے شہروں میں گاڑیوں کے ہارنوں کی آواز بھی بہت بڑھی ہوئی ہوتی ہے، بعض لوگ غیرضروری طور پر ہارن بجاتے ہیں اور بعض حضرات اپنی گاڑی میں ضرورت سے زیادہ تیز آواز کا ہارن‘ یہاں تک کہ ایمبولنس میں لگائے جانے والے سائرن کی طرح کے ہارن لگاتے ہیں، اس سے صوتی آلودگی بھی پیدا ہوتی ہے اور دوسرے راہگیروں کو دہشت بھی ہوتی ہے۔ایسی صورت میںبے جا اور ضرورت سے زیادہ تیز آواز کے یعنی زوردار ہارن کا استعمال شرعاً ممنوع ہوگا، اس لیے کہ ایسا کرنے والے افراد اپنا مختصر سا وقت بچانے کے لئے دوسروں کی تکلیف کا باعث بنتے ہیں، جس کی شریعت میں ممانعت وارد ہوئی ہے ۔اول تو سڑکوں پر کوئی بھی ٹھہرنے اور بسنے کے لئے نہیں اترتا، جب وہ سڑک پر آیا ہے‘ خواہ پیدل ہو یا سوار‘ اسے بھی آگے جانا ہوگا، پھر جب آگے راستہ ہی بند یا سواریوں سے گھرا ہوا ہو تو ایسے میں بلاوجہ زور شور سے ہارن بجاتے رہنا بالکل غیرمناسب و مکروہ عمل ہوگا۔ ہارن کا استعمال جہاں تک ہم سمجھتے ہیں‘ فقط اتنا ہے کہ اپنے آس پاس والوں کو جتادیا جائے کہ کوئی اور بھی منتظر ہے، نہ یہ کہ پوری سڑک پر ایک ہنگامہ بپا کیا جائے۔ الضرر لا یزال بالضرر۔ (الاشباہ والنظائر)

مروّج ڈی جے:

ہمارے معاشرے میں بدقسمتی سے مختلف تقریبات میں ڈی جے کا رواج بڑھتا جارہا ہے، اس کا شور انسان کی سماعت اور ماحول کے لیے سخت نقصان دہ ہے، یعنی مزامیر میں داخل ہونے سے قطعِ نظر ڈی جے کا معاشرے میں بے جا استعمال واقعی تکلیف دہ ہے، جس میں ذرا غور کریں تو معلوم ہوگا کہ مزامیر کی قباحت کے سوا آس پاس کے لوگوں کو تکلیف دینا بھی ہے۔ کتنے لوگ بہت زیادہ آواز سے دل کے دوروں اور دماغی پریشانیوں کا شکار ہوجاتے ہیں، جیسے کہ ربیع الاول کے مہینے میں ایک خبر شائع ہوئی تھی کہ ڈی جے میں بلند آواز کے سبب جشنِ عید میلادالنبی کے جلوس میں ایک سولہ سالہ لڑکے کی روح قفسِ عنصری سے پرواز کرگئی، اسی لئے ضرورت سے زیادہ آواز اور بلاوجہ شور مچانے کو شریعت سخت ناپسندگی کی نظر سے دیکھتی ہے۔ قال تعالیٰ: وَاغْضُضْ مِن صَوْتِکَ،اِنَّ أَنکَرَ الْأَصْوَاتِ لَصَوْتُ الْحَمِیْرِ۔ (لقمان: 19)

جلسوں و مشاعروں کا شور:

ہمارے معاشرے میں مذہبی، سیاسی جلسوں اور مشاعروں کا رواج بھی عام ہے، قانونی اعتبار سے اس کا ایک وقت مقرر ہوتا ہے، مثلاً رات کے دس یا ساڑھے دس بجے تک، کہ اس کے بعد پروگرام جاری نہیں رکھا جاسکتا، اسی طرح آواز کے بارے میں بھی تحدید ہوتی ہے کہ جس درجے کا ساؤنڈ سسٹم ہونا چاہئے اور کتنے ساؤنڈ بکس رکھے جاسکتے ہیں؟ اس کا مقصد لوگوں کی صحت اور ماحولیات کا تحفظ دونوں ہوتا ہے، لیکن بہت سے لوگ ان ہدایات پر عمل نہیں کرتے، آواز کا شور پوری آبادی تک پہنچاتے ہیں اور رات رات بھر پروگرام چلائے جاتے ہیں،ایسے لوگوں کو جاننا چاہیے کہ اس طرح کے قوانین کی خلاف ورزی‘ معاہدے کو توڑنے کے حکم میں داخل اور ناجائز ہے بقول حضرت تھانوی رحمۃ اللہ علیہ؛ اگر کوئی حکم ایسا ہے کہ اس میں عام لوگوں کی مصلحت ہے (اور اس کے) خلاف کرنے میں عام ضرر ہے، اس میں حاکم کی اطاعت؍قانون کی پابندی ظاہراً و باطناً واجب ہے (یعنی اعلانیہ طور پر بھی واجب ہے اور خفیہ طور پر، یعنی حاکم کو اطلاع بھی نہ ہو، تب بھی واجب ہے)۔ (اسلام اور سیاست)

جب شریعت میں قرآن کی تلاوت کے جہر میں تکلّف کرنا یا اتنا جہر کہ نماز میں تشویش کا باعث بنے یا کسی کے لیے باعثِ ایذا ہو‘ ناجائز ہے ، تو کسی اور دینی یا دنیوی موقع پر اس کی کیسے اجازت دی جا سکتی ہے ۔ فی الشامیۃ: (قولہ: فان زاد علیہ أساء) وفی الزاھدی عن أبی جعفر: لو زاد علی الحاجۃ فھو أفض، الا اذا اجھد نفسہ، او اٰذی غیرہ، قہستانی۔(ردالمحتار) آیت: ’وَلَا تَجْھَرْ بِصَلَاتِکَ وَلَا تُخَافِتْ بِھَا‘ کا شانِ نزول یہ ہے کہ حضورِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم بہ آوازِ بلند قرأت فرماتے تو مشرکین سن کر بُرا بھلا کہتے تھے، اس پر یہ حکم نازل ہوا کہ معتدل آواز سے قرأت کریں تاکہ صرف صحابۂ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم سنیں اور مشرکین تک آواز نہ پہنچے ۔(احسن الفتاویٰ) ویسے بھی کہیں کوئی بیمار ہوتا ہے، کوئی پریشان‘ اس لیے زبردستی کسی کے کانوں میں آواز ڈالنا قانون کی خلاف ورزی کے ساتھ ساتھ اخلاق کے بھی خلاف ہوگا، جس کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔صحابہ کے دور کا واقعہ ملاحظہ ہو کہ ایک واعظ صاحب حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے مکان کے بالکل سامنے بہت بلند آواز سے وعظ کہا کرتے تھے، ظاہر ہے کہ وہ زمانہ لاؤڈ اسپیکر کا نہیں تھا، لیکن ان کی آواز بہت بلند تھی، اور اس سے حضرت عائشہؓ کی یک سوئی میں فرق آتا تھا‘ یہ حضرت فاروقِ اعظم رضی اللہ عنہ کی خلافت کا زمانہ تھا، اس لیے حضرت عائشہ نے حضرت عمر رضی اللہ عنہا سے شکایت کی کہ یہ صاحب بلند آواز سے میرے گھر کے سامنے وعظ کرتے رہتے ہیں، جس سے مجھے تکلیف ہوتی ہے اور مجھے کسی اور کی آواز سنائی نہیں دیتی۔ حضرت عمر نے اُن صاحب کو پیغام بھیج کر انھیں وہاں وعظ کرنے سے منع کیا، لیکن کچھ عرصے کے بعد واعظ صاحب نے دوبارہ وہی سلسلہ پھر شروع کر دیا۔ حضرت عمر کو اطلاع ہوئی تو انھوں نے خود جاکر اُن صاحب کو پکڑا، اور ان پر تعزیری سزا جاری کی۔ (اخبار مدینہ لعمر بن شبہ)

بات صرف یہ نہیں تھی کہ حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا اپنی تکلیف کا ازالہ کرنا چاہتی تھیں، بلکہ دراصل وہ اسلامی معاشرے کے اس اصول کو واضح اور نافذ کرنا چاہتی تھیں کہ کسی کو کسی سے کوئی تکلیف نہ پہنچے، نیز یہ بتانا چاہتی تھیں کہ دین کی دعوت و تبلیغ کا پُروقار طریقہ کیا ہے؟ چناں چہ امام احمد رحمہ اللہ نے اپنی مسند میں روایت نقل کی ہے کہ ایک مرتبہ ام المؤمنین حضرت عاشہ رضی اللہ عنہا نے مدینہ منورہ کے ایک واعظ کو وعظ و تبلیغ کے آداب تفصیل کے ساتھ بتائے اور ان آداب میں یہ بھی فرمایا کہ اپنی آواز کو اُنھی لوگوں کی حد تک محدود رکھو جو تمھاری مجلس میں بیٹھے ہیں، اور انھیں بھی اُسی وقت تک دین کی باتیں سناؤ‘ جب تک ان کے چہرے تمھاری طرف متوجہ ہوں، جب وہ چہرے پھیرلیں تو تم بھی رُک جاؤ، الخ۔ (مجمع الزوائد)

لاؤڈ اسپیکر پر اذان:

’اذان ‘جو کہ چند منٹ کی ایک ایسی عبادت ہے کہ اسلام کی سب سے اہم عبادت نماز کے کامل طور پر ادا ہونے کا ایک وسیلہ اور مقدِّمہ ہے، جس کا کا مقصد لوگوں کو نماز کی اطلاع دینا ہوتا ہے کہ لوگ معینہ وقت پر مسجد پہنچ جاتے اور باجماعت نماز پڑھتے ہیں۔ نیز رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشادہے کہ مؤذن کی اذان کی آواز جہاں تک جاتی ہے، وہاں تک موجود ہر تر و خشک چیز قیامت کے دن مؤذن کے حق میں گواہی دے گی اور اس کی برکت سے مؤذن کی بخشش کر دی جائے گی، اس لئے بلند آواز سے اذان دی جائے۔ (ابوداؤد) اس حدیث سے اذان کو بلند کرنے کا اشارہ ملا، جس کے لیے فی زمانہ لاؤڈ اسپیکر کا استعمال کیا جاتا ہے، نیز اگر فی زمانہ اذان کے لیے لاؤڈ اسپیکر کا استعمال نہ کیا جائے تو یقینا اذان کا مقصد‘ جو کہ لوگوں کو نماز کے وقت کی اطلاع دینا ہے، فوت ہو جائے گا۔ پھر آبادی کی کثرت وغیرہ بھی ایسے اسباب ہیں، جن سے ایسے کاموں کے لیے لاؤڈ اسپیکر کی ضرورت لازمی ہو گئی ہے، اس لیے اذان کے لیے اس کا محتاط استعمال نہ صرف درست بلکہ مستحسن ہے۔ علما نے لکھا ہے کہ اذان سے مقصود اعلان ہوتا ہے، لہٰذا اذان جتنی بلند آواز سے دی جائے اتنا ہی اچھا ہے، اگرچہ بغیر لاؤڈ اسپیکر کے بستی والوں تک اذان کی آواز پہنچتی ہے، لیکن اگر لاؤڈ اسپیکر میں اذان دی جائے تو اذان کی آواز علی وجہ الکمال پہنچے گی۔ (نجم الفتاویٰ)"



میں پیش کردی ہے، یہاں اس بابت صرف چند ایسے فتوے ذکر کیے جارہے ہیں، جن سے واضح ہوگا کہ اذان جیسی چند منٹ کی عبادت کے سوا خود اسلام اور علماے اسلام نے لاؤڈ اسپیکر کے بے جا استعمال کی اجازت نہیں دی،اور لوگوں کے چین، سکون اور آرام کا بہت لحاظ رکھا ہے، اس کے باوجود بھی کوئی اذان جیسی مختصر سی عبادت پر غنڈہ گردی کا الزام لگائے، تو اسے اپنے دماغ کا علاج کروانے پر توجہ دینی چاہئے۔

مفتیِ اعظم ہند حضرت مولانا مفتی محمود حسن گنگوہی رحمۃ اللہ علیہ رقم طراز ہیں:

لاؤڈ اسپیکر پر صرف پانچ وقت کی اذان کہیں، جس سے مقصود لوگوں کو نماز کے لیے بلانا ہو، بقیہ دوسری چیزوں کے لیے لاؤڈ اسپیکر استعمال نہ کریں۔ (فتاویٰ محمودیہ: 15/3، جدید محقق)

سابق مفتیِ اعظم گجرات، مفتی سیدعبدالرحیم لاجپوری رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں:

(اگر بلا مائک اذان ناکافی ہو تو) بلا تردّد مائک کا استعمال جائز ہے، افضل تو یہی ہے کہ بلند آواز مؤذن کا تقرر ہوسکتا ہو تو مائک کا استعمال نہ کرے۔ (فتاویٰ رحیمیہ: 6/36)

مولانا محمد یوسف صاحب لدھیانوی شہید رحمۃ اللہ علیہ بڑی تفصیل کے ساتھ لکھتے ہیں:

اذان کے لئے (مسجد میں) اُوپر کے اسپیکر کھولنے کا تو مضائقہ نہیں کہ باہر کے لوگوں تک اذان کی آواز پہنچانا مطلوب ہے، لیکن نماز، تراویح، درس وغیرہ کے لیے اگر لاوٴڈ اسپیکر کے استعمال کی ضرورت ہو تو اس کی آواز مسجد کے مقتدیوں تک محدود رہنی چاہئے باہر نہیں جانی چاہیے۔ تراویح کے لئے اور درس وغیرہ کے لئے باہر کے اسپیکر کھولنا عقلاً و شرعاًنہایت قبیح ہے، جس کے وجوہ حسبِ ذیل ہیں:

(۱) بعض مساجد اتنی قریب قریب ہیں کہ ایک کی آواز دُوسری سے ٹکراتی ہے، جس سے دونوں مسجدوں کے نمازیوں کو تشویش ہوتی ہے اور ان کی نماز میں خلل واقع ہوتا ہے، ایسے واقعات بھی پیش آتے ہیں کہ ایک مسجد کے مقتدی جو پچھلی صفوں میں تھے، دُوسری مسجد کی تکبیر پر رُکوع، سجدے میں چلے گئے، نمازیوں کو ایسی تشویش میں مبتلا کرنا کہ ان کی نماز میں گڑبڑ ہوجائے، صریح حرام ہے، اور اس حرام کا وبال ان تمام لوگوں کی گردن پر ہوگا جو نماز کے دوران اُوپر کے اسپیکر کھولتے ہیں۔

(۲) مسجد کے نمازیوں تک آواز پہنچانا تو ایک ضرورت ہوئی، لیکن نماز میں اُوپر کے اسپیکر کھول دینا جس سے آواز دُور دُور تک پہنچے، یہ محض ریاکاری ہے، جس سے عبادت کا ثواب باطل ہوجاتا ہے۔ رمضان مبارک میں بعض حافظ صاحبان ساری رات لاوٴڈ اسپیکر پر قرآن مجید پڑھتے رہتے ہیں، جس میں ریاکاری کے سوا کوئی بھی صحیح غرض نظر نہیں آتی۔

(۳) تراویح میں باہر کے اسپیکر کھولنے میں ایک قباحت یہ ہے کہ چلتے پھرتے اور گھروں میں بیٹھے ہوئے لوگوں کے کان میں سجدہٴ تلاوت کی آیات آتی ہیں، جن کی وجہ سے ان پر سجدہٴ تلاوت واجب ہوجاتا ہے، ان میں سے بہت سے لوگوں کو یہ معلوم بھی ہوگا کہ یہ سجدے کی آیت ہے، پھر بھی وہ لوگ سجدہ نہیں کرتے ہوں گے، ان بے شمار لوگوں کے ترکِ واجب کا وبال بھی سنانے والوں کی گردن پر رہے گا۔

(۴) لاوٴڈ اسپیکر کی بلند آواز سے پورے محلے کا سکون غارت ہوجاتا ہے، بیمار آرام نہیں کرسکتے، گھروں میں خواتین کا اپنی نماز پڑھنا دُوبھر ہوجاتا ہے، وغیرہ وغیرہ، اور لوگوں کو اس طرح مبتلائے اذیت کرنا حرام ہے۔

(۵) بعض قاری صاحبان اپنے لحنِ داوٴدی سنانے کے شوق میں تہجد کے وقت بھی لاوٴڈ اسپیکر پر تلاوت یا نعت خوانی شروع کردیتے ہیں، جس کی وجہ سے تہجد کا پُرسکون وقتِ مناجات بھی شور و ہنگامے کی نذر ہوجاتا ہے، اس وقت اگر کوئی تہجد میں اپنی منزل پڑھنا چاہے تو نہیں پڑھ سکتا، اور بعض ظالم اس وقت تلاوت کا ریکارڈ لگاکر لوگوں کا سکون برباد کردیتے ہیں۔

خلاصہ یہ کہ جو لوگ اذان کے علاوہ پنج گانہ نماز میں، تراویح میں یا درس و تقریر میں باہر کے اسپیکر کھول دیتے ہیں، وہ اپنے خیال میں تو شاید نیکی کا کام کر رہے ہوں، لیکن ان کے اس فعل پر چند در چند مفاسد مرتب ہوتے ہیں اور بہت سے محرّمات کا وبال ان پر لازم آتا ہے، اور یہ سب محرّمات گناہِ کبیرہ میں داخل ہیں، اس لیے لاوٴڈ اسپیکر کی آواز حدودِ مسجد تک محدود رکھنا ضروری ہے، اور اذان کے علاوہ دُوسری چیزوں کے لیے باہر کے اسپیکر کھولنا ناجائز اور بہت سے کبائر کا مجموعہ ہے۔ (آپ کے مسائل اور ان کا حل: 3/398-399)

مفتی سید نجم الحسن امروہی رحمۃ اللہ علیہ (رئیس دارالافتا دارالعلوم یاسین القرآن، کراچی) لکھتےہیں:

اذان سے مقصود اعلان ہوتا ہے، لہٰذا اذان جتنی بلند آواز سے دی جائے اتنا ہی اچھا ہے، اگرچہ بغیر لاؤڈ اسپیکر کے بستی والوں تک اذان کی آواز پہنچتی ہے، لیکن اگر لاؤڈ اسپیکر میں اذان دی جائے تو اذان کی آواز علی وجہ الکمال پہنچے گی۔ (نجم الفتاویٰ: 2/234)

مولانا خالد سیف اللہ رحمانی صاحب رقم طراز ہیں:

اذان کا مقصود نماز کا اعلان اور زیادہ سے زیادہ لوگوں کو اس کی اطلاع دینا ہے ۔۔۔ لاؤڈ اسپیکر چوں کہ اس مقصد کے لیے بہت مفید اور کار آمد ہے اور کسی شرعی ممانعت کے بغیر آسانی اور سہولت کے ساتھ دور دور تک اس کے ذریعے آواز پہنچائی جاسکتی ہے، اس لئے اس کا استعمال بہتر اور مستحسن ہوگا۔ (جدید فقہی مسائل: 1/117-118)

مفتی امین پالنپوری صاحب لکھتے ہیں:

اگر آبادی بڑی یا پھیلی ہوئی ہو تو اذان کی آواز دور تک پہنچانے کے لئے لاؤڈاسپیکر پر اذان دینا جائز ہے، کفایت المفتی میں ہے: اذان کی آواز دور تک پہنچانے کے لیے منارے پر لاؤڈ اسپیکر لگانا مباح ہے۔ (کفایت المفتی: 3/13، آدابِ اذان و اقامت: 43)

ان واضح ترین ہدایات کا ہی ثمرہ ہے کہ مسلمان اپنی عبادتوں میں لاؤڈاسپیکر کا استعمال کم سے کم اور ضرورت کے تحت ہی کرتے ہیں، للاکثر حکم الکل۔ ہاں جو مذکورہ بالا ہدایات میں کوتاہی کا مرتکب ہو،اسے ذاتی طور پر سمجھا دیا جانا چاہیے، لیکن کسی مذہب کے ایک فرد یا چند افراد کی غلطی کی وجہ سے پورے مذہب پر طعنہ زنی کرنا ہرگز مناسب نہیں۔ (ندیم احمد انصاری)



اذان میں لاؤڈاسپیکر کا استعمال!

اذان عبادت کا اعلان بھی ہے اور بجائے خود ایک عبادت بھی؛ اسی لئے اسلام میں اذان کو بڑی اہمیت حاصل ہے، اسلام سے پہلے مختلف مذاہب میں مروجہ عبادت کی اطلاع کے لئے مختلف طریقے مروج تھے، بعض قومیں گھنٹے بجاتی تھیں، اور اب بھی بجاتی ہیں بعض ناقوس بجایا کرتے تھے، بعض آگ سلگایا کرتے تھے، غور کیا جائے تو گھنٹوں کی آواز بہت تیز ہوتی ہے، اور کانوں کے لئے بوجھ بن جاتی ہے اور آگ کا دھواں فضائی آلودگی پیدا کرتا ہے، اور اس سے بھی قرب وجوار کے لوگوں کو تکلیف ہوتی ہے، پھر یہ کہ یہ طریقے علامت کا کام تو کرتے ہیں؛ لیکن ان میں کوئی روحانی کیفیت نہیں، جس میں خالق ومالک کی بندگی کی طرف دعوت دی جاتی ہو، نہ اس کا کوئی ذکر اور نہ اس کی عظمت وبڑائی کا کوئی بیان، اسلام نے نماز جیسی عبادت کے اعلان کے لئے ایک ایسا طریقہ اختیار کیا جس میں روحانیت بھی ہے، معنویت بھی اور اللہ کی کبریائی کا اعلان بھی، اذان کے کلمات اتنے وجد آفریں اور روح پرور ہیں کہ کئی لوگوں کے لئے قبول اسلام کا سبب بن چکے ہیں، اس کی اہمیت کا اندازہ اس سے کیا جا سکتا ہے کہ اس کومسلم آبادی کی شناخت مانا گیا ہے۔

بدقسمتی سے ابھی ہندوستان میں لاؤڈاسپیکر پر اذان کو نزاعی بنانے کی کوشش کی جارہی ہے، یقیناََ اس میں متعصب ذہن، فرقہ وارانہ پروپیگنڈوں اور نفرتوں کا دخل ہے؛ لیکن بعض پہلوؤں پر خود ہمیں بھی غور کرنے کی ضرورت ہے:

الف: دینی کاموں میں جہاں آواز کا استعمال ہوتا ہے، اس کے بارے میں اسلام کا تصور کیا ہے؟ غور کیا جائے تو اسلام کی تمام تعلیمات میں اعتدال اور میانہ روی کو پیش نظر رکھا گیا ہے، اور اس بات کا لحاظ رکھا گیا ہے کہ ہمارا کوئی عمل دوسروں کے لئے اذیت کا سبب نہ بن جائے؛ اسی لئے شریعت نے بلاضرورت اور حداعتدال سے بڑھ کر آواز بلند کرنے کو ناپسند کیا ہے، خود اللہ تعالیٰ نے ارشاد فرمایا کہ چال میں اعتدال رکھو اور آواز کو ہلکی رکھو (لقمان: ۱۹) قرآن مجید کی تلاوت سے بڑھ کر کیا عمل ہوسکتا ہے؛ لیکن اس میں بھی آپ نے میانہ روی اختیار کرنے کا حکم فرمایا اور ہلکی آواز میں تلاوت کو پسند کیا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم مسجد نبوی میں معتکف تھے، آپ کے قیام کے لئے مسجد کے اندر چمڑے کا ایک گنبد بنادیا گیا تھا، اس میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا قیام تھا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سنا کہ لوگ زور زور سے قرآن پڑھ رہے ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تنبیہ فرمائی: تم اپنے رب کے ساتھ سرگوشی کررہے ہو تو ایک دوسرے کو تکلیف مت پہنچاؤ، اور نماز میں قرآن پڑھتے ہوئے ایک دوسرے پر اپنی آواز بلند مت کرو. (مستدرک حاکم، حدیث نمبر: ۱۱۶۹) خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا معمول یہ تھا کہ آپ کے دولت خانہ سے متصل مسجد کا صحن تھا تو ایسی آواز میں آپ تلاوت فرماتے کہ جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم دولت کدہ میں تلاوت فرماتے تو صحن کی حد تک اس کو سنا جاسکتا تھا، (سنن ابی داؤد، حدیث نمبر: ۱۳۲۷)

ایک بار رات کے وقت آپ صلی اللہ علیہ وسلم باہر نکلے، حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے مکان کے پاس سے گزرے تو دیکھا کہ بہت ہلکی آواز میں نماز پڑھ رہے ہیں، پھر حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے پاس سے گزرے تو وہ بہت بلند آواز میں نماز پڑھ رہے تھے، بعد میں جب یہ دونوں حضرات خدمت اقدس میں حاضر ہوئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ سے دریافت کیا: میں تمہارے پاس سے گزرا تو تم بہت ہی ہلکی آواز میں نماز پڑھ رہے تھے، انھوں نے عرض کیا: میں جس ذات کے ساتھ سرگوشی کررہا تھا، اس نے سن لیا تھا، پھر حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے دریافت فرمایا: تم بلند آواز میں کیوں تلاوت کررہے تھے؟ انھوں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! میں سوئے ہوئے کو جگا رہا تھا، اور شیطان کو بھگا رہا تھا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ سے فرمایا: تم اپنی آواز ذرا بلند کرو، اور حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے کہا: تم اپنی آواز ذرا ہلکی کرو، (مستدرک حاکم، حدیث نمبر: ۱۱۶۸) اس سے معلوم ہوا کہ عبادت اور نیک عمل میں بھی آواز کو معتدل رکھنے کا حکم ہے؛ تاکہ لوگوں کو تکلیف نہ پہنچے، فقہاء نے بھی اس کو پیش نظر رکھا ہے، اس لئے کہا ہے کہ نماز میں جہاں زور سے قرأت کرنے کا حکم ہے، وہاں زور سے قرأت کرنا چاہئے؛ لیکن اس حد تک کہ سونے والے کی نیند میں خلل نہ ہو، یہ حکم تنہا نماز پڑھنے والے کے لئے بھی ہے اور تراویح اور جہری نمازوں کی امامت کرنے والوں کے لئے بھی: والجھر افضل مالم یؤذ نائما ونحوہ (النہر الفائق: ۱؍۲۲۹)

اسی اصول کو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے باہمی ملاقات وکلام میں بھی منطبق فرمایا؛ چنانچہ حضرت مقداد بن اسود رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم رات میں تشریف لاتے اور اس طرح سلام کرتے کہ جو لوگ بیدار ہوں، وہ سن لیں، اور جو سوئے ہوئے ہوں ان کی نیند میں خلل پیدا نہ ہو (الادب المفرد، حدیث نمبر: ۱۰۲۸)

ب: اذان چوں کہ عبادت ہونے کے ساتھ ساتھ عبادت کا اعلان بھی ہے، اعلان کا مقصد لوگوں کو سنانا اور ان تک اپنی آواز پہنچانا ہے؛ اس لئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بلند آواز میں اذان دینے کی تلقین فرمائی ہے؛ اسی لئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت بلال رضی اللہ عنہ کو اذان کی ذمہ داری سونپی اور ان کو نصیحت کی کہ اذان دیتے وقت وہ اپنی انگلیاں اپنے کانوں میں رکھیں؛ کیوں کہ اس سے آواز بلند ہوتی ہے: أن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم أمر بلالا أن یجعل إصبعیہ فی أذنیہ، وقال: إنہ أرفع لصوتک (ابن ماجہ، حدیث نمبر: ۷۱۰)؛ لیکن اس میں بھی اس بات کو پسند نہیں کیا گیا کہ آواز اتنی بلند ہوکہ لوگوں کے لئے باعث تکلیف ہوجائے، اور خود اذان دینے والے کے لئے مشقت کا باعث ہو: ولا یبالغ فیجھد نفسہ کی لا یتضرر (دررالاحکام: ۱؍۲۲۲، نیز دیکھئے: النہر الفائق: ۲؍۷۲) اگر انسان صرف اپنی آواز میں اذان دے، آواز بڑھانے کے لئے کوئی آلہ استعمال نہ کرے تو آواز حد اعتدال سے باہر نہیں جاتی؛ کیوں کہ انسان کے اندر آواز بلند کرنے کی صلاحیت محدود ہے؛ لیکن جس کسی بھی آواز کے لئے جب لاؤڈاسپیکر کا استعمال ہوتا ہے تو آواز غیرمحدود ہو جاتی ہے، اور اتنی اونچی بھی ہوسکتی ہے کہ انسان کے کان بجنے لگیں، اور اگر کوئی شخص کان کا یا قلب کا مریض ہو تو اس کی صحت کو نقصان پہنچ سکتا ہے، گانے بجانے اور ڈی جے وغیرہ میں تو یہ کیفیت ہوتی ہی ہے، گلا پھاڑ پھاڑ کر تقریر کرنے والے مقررین بھی اس معاملہ میں پیچھے نہیں ہیں، اللہ کا شکر ہے کہ ہمارے ملک میں ایک ایک محلہ میں کئی کئی مسجدیں ہیں، میرا ایک مسلم محلہ میں قیام ہے، عموماََ فجر کے و قت تقریباََ نصف گھنٹہ تک اذان کا سلسلہ جاری رہتا ہے اور یہ ساری اذانیں مائک پر نہایت بلند آواز میں ہوتی ہیں؛ حالاں کہ نماز پڑھنے والے زیادہ دور سے نہیں آتے، مسجد کے اڑوس پڑوس کے ہی ہوتے ہیں۔

ج: پھر اس پر مزید اضافہ یہ ہے کہ بعض مسجدوں سے اذان واقامت کے درمیان مسلسل اعلان ہوتا رہتا ہے کہ فلاں مسجد میں جماعت کے لئے اب پندرہ منٹ رہ گئے ہیں، اب دس منٹ باقی ہیں، اب پانچ منٹ باقی ہیں، اب صرف تین منٹ رہ گئے ہیں ………. اذان جتنے وقت میں ہوتی ہے، یہ اعلان اس سے زیادہ وقت لے لیتا ہے، بعض مسجدوں میں نماز کے بعد کے اوراد اذکار بھی مائک پر پڑھے جاتے ہیں، قرآن وحدیث کا درس بھی مسجد کے اندرونی مائک کی بجائے بیرونی مائک پر دیا جاتا ہے، اور پورے محلہ میں اس کی آواز گونجتی رہتی ہے، بعض جگہ تراویح کی نماز بھی مائک پر ہونے لگی ہے، جمعہ کا بیان بھی بعض مسجدوں میں بیرونی مائک میں ہوتا ہے، اور بعض اوقات اس کی آواز باہم ٹکراتی رہتی ہے، لاؤڈاسپیکر کا اس طرح مبالغہ آمیز استعمال بیماروں، معذوروں اور مختلف کاموں میں مشغول لوگوں کے لے باعث تکلیف ہوسکتا ہے، اگر کسی محلہ میں مسلم وغیر مسلم ملی جلی آبادی ہو، یا جہاں چند گھر مسلمانوں کے اور بڑی آبادی غیرمسلموں کی ہو، وہاں دینی افعال کی اس طرح ادائیگی برادران وطن کے لئے تکلیف کا باعث ہوجاتی ہے، اور یہ ایک فطری بات ہے، اگر کوئی مسلم محلہ ہو اور اس میں دیر تک مندر کی گھنٹیاں بجیں تو ہمیں ناگوار خاطر ہوتا ہے، اسی سے غیرمسلم بھائی کے احساس کو سمجھنا چاہئے۔

یہ بات ہمارے ذہن میں ہونی چاہئے کہ ’’اذان‘‘ دینا نہایت اہم اور ضروری عمل ہے، مگر مائک پر اذان دینا ایک الگ بات ہے؛ اگرچہ ہمیں فرقہ پرستوں کی اذان کے خلاف یورش کا مقابلہ کرنا چاہئے؛ لیکن اسلامی تعلیمات کے مطابق خود بھی کوشش کرنی چاہئے کہ ہمارا عمل اعتدال پر مبنی ہو، یہ سوچنا کہ فلاں قوم کے لوگ بھی تو شور شرابہ کرتے ہیں، شادیوں اور الیکشن کے پروگراموں میں بھی تو بلند آواز متلاطم موجوں کی طرح فضاء میں بہتی رہتی ہیں، پھر ہم ہی کیوں اپنی آواز کو ہلکی کریں، درست نہیں ہے، نہ ہمارے لئے یہ درست ہے کہ ہم دوسری قوموں کی نقل کریں اور نہ یہ صحیح ہے کہ ہمارا عمل ردعمل پر مبنی ہو، ہمیں شریعت کے مزاج کو سامنے رکھ کر کام کرنا چاہئے، جس میں اعتدال اور دوسروں کو ایذا سے بچنے کا قدم قدم پر خیال رکھا گیا ہے۔

اس لئے اذان اور مسجد کے پروگراموں کے سلسلہ میں ہمیں درج ذیل نکات پر عمل کی کوشش کرنی چاہئے:

۱۔ اگر ایک محلہ میں کئی مسجدیں ہوں تو ایک بڑی مسجد میں بیرونی مائک پر اذان دی جائے، اور اس میں بھی خیال رکھا جائے کہ آواز بہت تیز نہ ہو، اتنی ہو کہ پڑوس کے لوگوں تک پہنچ جائے، بقیہ مسجدوں میں اذان اندرونی مائک میں دی جائے، یا مسجد کے باہر بغیر مائک کے دی جائے، ظاہر ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کے زمانہ میں اذان بغیر مائک کے ہی دی جاتی تھی، بعض فقہاء نے تو یہاں تک لکھا ہے کہ ہر مسجد میں اذان واجب نہیں ہے، مستحب ہے، محلہ کی کم سے کم ایک مسجد میں اذان دینا واجب ہے: فھو واجب فی البلد والحیی ولیس بواجب فی کل مسجد (المناسک فی شرح المؤطا مالک: ۲؍۳۲۳) یہ رائے اگرچہ امام مالک رحمۃ اللہ علیہ کی ہے؛ مگر اس سے یہ بات تو اخذ کی جاسکتی ہے کہ ہر مسجد میں مائک پر اذان ضروری نہیں، اس میں کوئی اختلاف نہیں ہے کہ مائک میں اذان دینا نہ واجب ہے نہ سنت، اور نہ بغیر مائک کے اذان دینے میں کوئی کراہت ہے؛ اس لئے یہ ایک بہتر شکل ہوگی کہ محلہ کی ایک بڑی مسجد میں لاؤڈاسپیکر میں اذان ہو اور بقیہ مسجدوں میں زبانی اذان ہوجائے۔

۲۔ اسپیکر کی سیٹنگ میں اس بات کا خیال رکھا جائے کہ بیرونی مائک کا رُخ غیرمسلم آبادی یا اسپتالوں کی طرف نہیں ہو؛ تاکہ یہ دوسروں کے لئے تکلیف کا سبب نہ بنے۔

۳۔ اذان اور اقامت کے درمیان مزید اعلان سے گریز کیا جائے، آج کل ہر شخص کے پاس موبائل فون میں الارم کی سہولت ہے، بار بار وقت یاد دلانے کی ضرورت نہیں، اور تجربہ یہ ہے کہ اس بار بار کی یاددہانی کے باوجود مسجد وہی لوگ آتے ہیں، جو پابند نماز ہوتے ہیں، اور ان کے لئے بار بار کی تنبیہ کی ضرورت نہیں ہوتی، فقہاء کے یہاں اس میں بھی اختلاف ہے کہ اذان کے بعد پھر بہ تکرار نماز کا اعلان جس کو فقہ کی اصطلاح میں ’تثویب‘ سے تعبیر کیا گیا ہے، جائز ہے یا مکروہ؟ اس لئے یہ بار بار کا اعلان ایک بے فائدہ عمل ہے۔

۴۔ مسجدوں میں ہونے والے بیانات، قرآن مجید کا درس، حدیث شریف کا درس، تلاوت، جہری نمازوں کی قرأت کو مسجد کے اندرونی مائک میں ہونا چاہئے، ان امور کو مسجد کے بیرونی مائک میں انجام دینا کراہت سے خالی نہیں؛ کیوں کہ اس سے قرآن مجید اور دینی باتوں کی بے احترامی ہوتی ہے، قرأت ہوتی رہتی ہے، قرآن وحدیث کے مضامین نشر ہوتے رہتے ہیں، اور لوگ اپنے اپنے کاموں میں مشغول رہتے ہیں، یہاں تک کہ بعض لوگ قضاء حاجت کی حالت میں ہوتے ہیں، ظاہر ہے کہ اس میں قرآن مجید اور دینی باتوں کی بے احترامی ہے۔

۵۔ عام جلسوں میں بھی ان نکات کا لحاظ رکھنا ضروری ہے، جلسے میں حسب ضرورت مائک کا استعمال ہو اور قانون کے اعتبار سے جو اوقات مقرر ہیں، اتنی ہی دیر جلسہ رکھا جائے۔

غرض کہ ہمارے دین نے ہر کام کے لئے سلیقہ سکھایا ہے، طریقۂ کار کی رہنمائی کی ہے، اگر اس کے دائرہ میں رہتے ہوئے، اس عمل کو انجام دیا جائے تبھی یہ اطاعت واتباع کی صورت ہوگی، وباللہ التوفیق۔ فقیہ العصر حضرت مولانا خالد سیف اللہ رحمانی (ترجمان وکارگزار جنرل سکریٹری آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ)



لاؤڈ اسپیکر کا ظالمانہ استعمال

ظلم صرف یہ نہیں ہے کہ کسی کا مال چھین لیا جائے، یا اسے جسمانی تکلیف پہنچانے کے لئے اس پر ہاتھ اٹھایا جائے ، بلکہ عربی زبان میں ’’ ظلم‘‘ کی تعریف یہ کی گئی ہے کہ ’’کسی بھی چیز کو بے جگہ استعمال کرنا ظلم ہے‘‘ چونکہ کسی چیز کابے محل استعمال یقیناًکسی نہ کسی کو تکلیف پہنچانے کا موجب ہوتا ہے، اس لئے ہر ایسا استعمال ’’ظلم‘‘ کی تعریف میں داخل ہے۔ اور اگر اس سے کسی انسان کو تکلیف پہنچتی ہے، تو وہ شرعی اعتبار سے گناہ کبیرہ ہے۔ لیکن ہمارے معاشرے میں اس طرح کے بہت سے گناہ کبیرہ، اس طرح رواج پاگئے ہیں کہ اب عام طور سے ان کے گناہ ہونے کا بھی احساس باقی نہیں رہا۔

’ایذا رسانی‘ کی ان بے شمار صورتوں میں سے ایک انتہائی تکلیف دہ صورت لاؤڈاسپیکر کا ظالمانہ استعمال ہے۔ ابھی چند روز پہلے ایک انگریزی روز نامہ میں ایک صاحب نے شکایت کی ہے کہ بعض شادی ہالوں میں رات تین بجے تک لاؤڈاسپیکر پر گانے بجانے کا سلسلہ جاری رہتا ہے، اور آس پاس کے بسنے والے بے چینی کے عالم میں کروٹیں بدلتے رہتے ہیں، اور ایک شادی ہال پرکیا موقوف؟ ہر جگہ دیکھنے میں یہی آتا ہے کہ جب کوئی شخص کہیں لاؤڈاسپیکر نصب کرتا ہے، تو اسے اس بات کی پروا نہیں ہوتی کہ اس کی آواز کو صرف ضرورت کی حد تک محدود رکھا جائے، اور آس پاس کے ان ضعیفوں او ربیماروں پر رحم کیا جائے جو یہ آواز سننا نہیں چاہتے۔

گانے بجانے کا سلسلہ تو الگ رہا، اس کو بلند آواز سے پھیلانے میں دوہری بُرائی ہے، اگر کوئی خالص دینی اور مذہبی پروگرام ہوتو اس کو بھی لاؤڈاسپیکر کے ذریعے زبردستی شریک کرنا شرعی اعتبار سے ہرگز جائز نہیں ہے، لیکن افسوس ہے کہ ہمارے معاشرے میں سیاسی اور مذہبی پروگرام منعقد کرنے والے حضرات بھی شریعت کے اس اہم حکم کا بالکل خیال نہیں کرتے۔ سیاسی او رمذہبی جلسوں کے لاؤڈاسپیکر بھی دور دور تک مارکرتے ہیں، اوران کی موجودگی میں کوئی شخص اپنے گھر میں نہ آرام سے سو سکتا ہے نہ یکسوئی کے ساتھ اپناکوئی کام کرسکتا ہے ۔ لاؤڈ اسپیکر کے ذریعہ اذان کی آواز دورتک پہنچانا تو برحق ہے،لیکن مسجدوں میں جو وعظ اور تقریریں یا ذکر تلاوت لاؤڈاسپیکر پر ہوتی ہیں، ان کی آواز دور دور تک پہنچانے کاکوئی جواز نہیں ہے۔ اکثر دیکھنے میں آتاہے کہ مسجد میں بہت تھوڑے سے لوگ وعظ یا درس سننے کے لئے بیٹھے ہیں جن کو آواز پہنچانے کے لئے لاؤڈاسپیکر کی سرے سے ضرورت ہی نہیں ہے، یا صرف اندرونی ہارن سے بآسانی کام چل سکتا ہے، لیکن بیرونی لاؤڈاسپیکر پوری قوت سے کھلا ہوتا ہے اور اس کے نتیجے میں یہ آواز محلے کے گھر گھر میں اس طرح پہنچتی ہے کہ کوئی شخص اس سے متاثر ہوئے بغیر نہیں رہتا۔

دین کی صحیح فہم رکھنے والے اہل علم خواہ کسی مکتب فکر سے تعلق رکھتے ہوں ،کبھی یہ کام نہیں کرسکتے، لیکن ایسا ان کی مسجدوں میں ہوتا ہے ، جہاں کا انتظام علم دین سے ناواقف حضرات کے ہاتھ میں ہے۔ بسااوقات یہ حضرات پوری نیک نیتی سے کام کرتے ہیں ، اور وہ اسے دین کی تبلیغ کا ایک ذریعہ سمجھتے ہیں اوراسے دین کی خدمت قرار دیتے ہیں، لیکن ہمارے معاشرے میں یہ اصول بھی بہت غلط مشہور ہوگیا ہے، کہ نیت کی اچھائی سے کوئی غلط کام بھی جائز اور صحیح ہوجاتاہے، واقعہ یہ ہے کہ کسی کام کے درست ہونے کے لئے صرف نیک نیتی ہی کافی نہیں، اس کا طریقہ بھی درست ہونا ضروری ہے، لاؤڈاسپیکر کا ایسا ظالمانہ استعمال نہ صرف یہ کہ دعوت و تبلیغ کے بنیادی اصولوں کے خلاف ہے،بلکہ اس کے الٹے نتائج برآمد ہوتے ہیں۔

جن حضرات کو اس سلسلے میں کوئی غلط فہمی ہو، ان کی خدمت میں دردمندی اور دلسوزی کے ساتھ چند نکات ذیل میں پیش کرتا ہوں:

(1) مشہور محدث حضرت عمر شبّہ نے مدینہ منورہ کی تاریخ پر چار جلدوں میں بڑی مفصل کتاب لکھی ہے جس کا حوالہ بڑے بڑے علماء و محدثین دیتے رہتے ہیں ۔ اس کتاب میں انہوں نے ایک واقعہ اپنی سند سے روایت کیا ہے کہ ایک وعظ صاحب حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے مکان کے بالکل سامنے بلند آواز سے وعظ کہا کرتے تھے ظاہر ہے کہ اس زمانہ میں لاؤڈاسپیکر نہیں تھا، لیکن ان کی آواز بہت بلند تھی، اور اس سے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کی یکسوئی میں فرق آتا تھا ، یہ حضرت فاروق اعظم رضی اللہ عنہ کی خلافت کا زمانہ تھا، اس لئے حضرت عائشہ نے حضرت عمر سے شکایت کی، کہ یہ صاحب بلند آواز سے میرے گھر کے سامنے وعظ کہتے رہتے ہیں، جس سے مجھے تکلیف ہوتی ہے اور مجھے کسی اور کی آواز سنائی نہیں دیتی، حضرت عمر نے ان صاحب کو پیغام بھیج کر انہیں وہاں سے وعظ کہنے سے منع کیا، لیکن کچھ عرصے کے بعد واعظ صاحب نے دوبارہ وہی سلسلہ پھر شروع کرد یا۔ حضرت عمر کو اطلاع ہوئی انہوں نے خود جاکر ان صاحب کو پکڑا، اوران پر تعزیری سزا جاری کی۔ (اخبار المدینی لعمر بن شبّہ ، ج :1، ص :15)

(2) بات صرف یہ نہیں کہ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہ اپنی تکلیف کا ازالہ کرنا چاہتی تھی، بلکہ دراصل وہ اسلامی معاشرت کے اس اصول کو واضح او رنافذ کرناچاہتی تھیں کہ کسی کو کسی سے تکلیف نہ پہنچے ، نیز یہ بتانا چاہتی تھیں کہ دین کی دعوت وتبلیغ کا پرُوقار طریقہ کیا ہے؟ چنانچہ امام احمد نے اپنی مسند میں روایت نقل کی ہے کہ ایک مرتبہ امّ المومنین حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے مدینہ منورہ کے ایک واعظ وتبلیغ کے آداب تفصیل کے ساتھ بتائے اور ان آداب میں یہ بھی فرمایا کہ:

’’اپنی آواز کو انہیں لوگوں کی حد تک محدود رکھو جو تمہاری مجلس میں بیٹھے ہیں او رانہیں بھی اسی وقت تک دین کی باتیں سناؤ جب تک ان کے چہرے تمہاری طرف متوجہ ہوں، جب وہ چہرے پھیر لیں، تو تم بھی رک جاؤ۔ اور ایسا کبھی نہ ہوناچاہئے کہ لوگ آپس میں باتیں کررہے ہوں، اور تم ان کی بات کاٹ کر اپنی بات شروع کردوبلکہ ایسے موقع پر خاموش رہو، پھر جب وہ تم سے فرمائش کریں تو انہیں دین کی بات سناؤ‘‘۔ (مجمع الزوائد، ج:1، ص:191)

(3) حضرت عطا بن ابی رباح بڑے اونچے درجے کے تابعین میں سے ہیں، علم تفسیر و حدیث میں ان کا مقام مسلم ہے ان کا مقولہ ہے کہ ’’عالم کو چاہئے کہ اس کی آواز اس کی مجلس سے آگے نہ بڑھے.‘‘ ( ادب الاملاء والا ستملا ء للسمعانی، ص 5)

(4) یہ سارے آداب درحقیقت خود حضور سرورکونین صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے قول و فعل سے تعلیم فرمائے ہیں، مشہور واقعہ ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم حضرت عمر فاروق اعظم کے پاس سے گذرے، وہ تہجد کی نماز میں بلند آواز سے تلاوت کررہے تھے، حضرت عمر نے جواب دیا کہ میں ’’سوتے کو جگا تا ہوں اور شیطان کو بھگاتا ہوں‘‘ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اپنی آواز کو تھوڑا اپست کردو‘‘۔ (مشکوۃ، ج 1 ص:107)

اس کے علاوہ حضرت عائشہ سے ہی روایت ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم جب تہجد کے لیے بیدار ہوتے تو اپنے بستر سے آہستگی کے ساتھ اٹھتے تھے ( تاکہ سونے والوں کی نیند خراب نہ ہو)

(5) انہیں احادیث کی روشنی میں تمام فقہاء امت اس بات پر متفق ہیں کہ تہجد کی نماز میں اتنی بلند آواز سے تلاوت کرنا، جس سے کسی کی نیند خراب ہو، ہر گز جائز نہیں ، فقہاء نے لکھا ہے کہ اگر کوئی شخص اپنے گھر کی چھت پر سے بلند تلاوت کرے جب کہ سو رہے ہوتو تلاوت کرنے والا گناہ گار ہے‘‘۔ (خلاصۃ الفتاویٰ ، ج :1،ص 103، شامی، ج 1، ص 444,403)

ایک مرتبہ ایک صاحب نے یہ سوال ایک استفتاء کی صورت میں مرتب کیا تھا کہ بعض مساجد میں تراویح کی قرآت لاوڈاسپیکر پر اتنی بلند آواز سے کی جاتی ہے کہ اس سے محلے کی خواتین کے لئے گھر وں میں نماز پڑھنا مشکل ہوجاتا ہے، نیز جن مریض او رکمزور لوگوں کو علاجاً جلدی سونا ضروری ہے وہ سو نہیں سکتے، اس کے علاوہ باہر کے لوگ قرآن کریم کی تلاوت ادب سے سننے پر قادر نہیں ہوتے، اوربعض مرتبہ ایسا بھی ہوتا ہے کہ تلاوت کے دوران کوئی سجدے کی آیت آجاتی ہے، سننے والوں پر سجدہ واجب ہوجاتاہے، او ریا توان کو پتہ ہی نہیں چلتا ، یا وہ وضو سے نہیں ہوتے، اور بعد میں بھول جاتے ہیں، کیا ان حالات میں تراویح کے دوران بیرونی لاوڈاسپیکر زورسے کھولنا شرعاً جائز ہے؟

یہ سوال مختلف علماء کے پاس بھیجا گیا اور سب نے مفتقہ جواب یہی دیا کہ ان حالات میں تراویح کی تلاوت میں بیرونی لاؤڈاسپیکر بلاضرورت زور سے کھولنا شرعاً جائزنہیں ہے، یہ فتویٰ ماہنامہ ’البلاغ‘ کی محروم 1407ھ کی اشاعت میں شائع ہوا ہے۔ اور یہ واقعہ ہے کہ کوئی اختلافی مسئلہ نہیں ہے اس پر تمام مکاتب فکر کے علماء متفق ہیں ۔

اب رمضان کامقد س مہینہ شروع ہونے والا ہے، یہ مہینہ ہم سے شرعی احکام کی سختی کے ساتھ پابندی کامطالبہ کرتا ہے، اوریہ عبادتوں کامہینہ ہے اورا س میں نماز ، تلاوت اور ذکر جتنابھی ہوسکے، باعث فضیلت ہے لیکن ہمیں یہ یاد رکھنا چاہئے کہ یہ ساری عبادتیں اس طرح انجام دی جائیں کہ ان سے کسی کو تکلیف نہ پہنچے، اور ناجائز طریقوں کی بدولت ان عبادتوں کا ثواب ضائع نہ ہو۔ لاؤڈاسپیکر کااستعمال بوقت ضرورت اور بقدر ضرورت کیا جائے ، اس سے آگے نہیں ۔

مذکورہ بالا گذارشات سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ شریعت نے دوسروں کو تکلیف سے بچانے کاکتنا اہتمام کیا ہے؟ جب قرآن کریم کی تلاوت اور وعظ نصیحت جیسے مقدس کاموں کے بارے میں بھی شریعت کی ہدایت یہ ہے کہ ان کی آواز ضرورت کے مقامات سے آگے نہیں بڑھنی چاہئے ،تو گانے بجانے اور دوسری لغویات کے بارے میں خود اندازہ کر لیجئے کہ ان کو لاؤڈاسپیکر پر انجام دینے کا کس قدر دُہرا وبال ہے۔ (ختم شد) 6 فروری، 1994 (مفتی تقی عثمانی)

लाउडस्पीकरों का क्रूर उपयोग

अत्याचार केवल यह नहीं है कि किसी का माल छीन लिया जाए, या उसे शारीरिक परेशानी पहुंचाने के लिए उस पर हाथ उठाया जाए, बल्कि अरबी भाषा में '' अत्याचार '' की परिभाषा की गई है कि '' कुछ भी बे जगह का उपयोग कर न गलत है ''क्योंकि किसी चीज का बे महल उपयोग बेशक किसी न किसी को चोट पहुँचाने का सबब होता है, इसलिए हर ऐसा उपयोग '' अत्याचार '' की परिभाषा में प्रवेश है। और अगर इससे किसी इंसान को तकलहीफ पहुंचती है,तो वह धर्म आधार पाप कबीरा है। लेकिन हमारे समाज में इस तरह के बहुत से पाप कबीरा,ऐसे रिवाज पा गए हैं कि अब आम तौर पर उनके पाप होने का भी एहसास बाकी नहीं रहा।

''धमकी'' इन अनगिनत मामलों में से एक छोर कोई दर्दनाक स्थिति लाउडस्पीकरों का क्रूर ासपमा लिमिटेड। अब कुछ दिन पहले एक अंग्रेजी दैनिक में एक साहब ने शिकायत की है कि कुछ शादी हॉल में रात तीन बजे तक लाउडस्पीकर पर गाने बजाने का सिलसिला जारी रहता है,और आसपास के रहने वाले बेचैनी की हालत में करवटें बदलते रहते हैं,और एक शादी हॉल क्या थामने?हर जगह देखने में यही आता है कि जब कोई व्यक्ति कहीं लाउडस्पीकर स्थापित करता है, तो उसे इस बात की परवाह नहीं होती कि उसकी आवाज बस जरूरत सीमा तक सीमित रखा जाए, और आस-पास के इन बुड्ढे और बीमारों पर दया जाए जो यह आवाज सुनना नहीं चाहते।

गाने बजाने का सिलसिला तो अलग रहा,उसे जोर से फैल दोहरी बुराई है,अगर कोई शुद्ध देना और धार्मिक कार्यक्रम हो तो उसे भी लाउडस्पीकर के माध्यम से ज़बरदस्ती साझा कर ना शरई आधार हरगिज़ जा यज़ नहीं है , लेकिन खेद है कि हमारे समाज में राजनीतिक और धार्मिक कार्यक्रम आयोजित करने वाले लोग भी व्यवस्था इस महत्वपूर्ण आदेश बिल्कुल विचार नहीं करते। राजनीतिक और धार्मिक सभाओं के लाउडस्पीकर भी दूर तक मार करते हैं,और उनकी उपस्थिति में कोई व्यक्ति अपने घर में न आराम से सो सकता है न एकाग्रता के साथ अपना कोई काम कर सकता है। लाउडस्पीकर द्वारा अज़ान की आवाज़ दूर तक पहुंचाना तो बुर अधिकार है,लेकिन मस्जिदों में जो उपदेश और भाषण या चर्चा और सुनाना लाउडस्पीकर पर होती हैं,उनकी आवाज दूर तक पहुंचाने का कोई औचित्य नहीं है। अक्सर देखने में आता है कि मस्जिद में बहुत थोड़े से लो जी उपदेश या शिक्षण सुनने के लिए बैठे हैं जिन्हें आवाज पहुंचाने के लिए लाउडस्पीकरों की सिरे से जरूरत ही नहीं है,या केवल आंतरिक हॉर्न से आसानी काम चल सकता है,लेकिन बाहरी लाउडस्पीकरों पूरी ताकत से खुला होता है और फलस्वरूप यह आवाज पड़ोस घर घर जैसे पहुंचती है कि कोई व्यक्ति इससे प्रभावित हुए बिना नहीं रहता।

दीन सही समझ रखने वाले विद्वानों चाहे किसी विचारधारा से संबंध रखते हैं,कभी यह काम नहीं कर सकते, लेकिन ऐसा उनकी मस्जिदों में होता है, जहां का प्रबंधन इल्मे दीन से अपरिचित सज्जनों के हाथ में है। कभी-कभी यह सज्जनों पूरी नेकनीयत से यह काम करते हैं,वे उसे धर्म प्रचार का एक स्रोत समझते और उसे दीन सेवा बताते हैं,लेकिन हमारे समाज में यह नियम भी बहुत गलत प्रसिद्ध हो गया है,कि इरादा अच्छा कोई से कोई गलत काम भी जायज़ और सही हो जाता है,घटना है कि किसी काम सही होने के लिए केवल नेकनीयत ही प्रति नहीं,उसका तरीका भी सही होना चाहिए, और लाउडस्पीकर ऐसा क्रूर प्रयोग न केवल कि निमंत्रण और प्रचार के बुनियादी सिद्धांतों के खिलाफ है,बल्कि इसके उल्टे नतायज सामने आते हैं।

जिन सज्जनों को इस संबंध में कोई गलतफहमी हो,उनकी सेवा में करुणा और दलसवज़ी के साथ कुछ बिंदुओं नीचे प्रदान करता हूँ।

(1) प्रसिद्ध मुहद्दिस हज़रत उमर बिन शक ने मदीना की तारीख पर चार संस्करणों में बड़ी विस्तृत किताब लिखी है जिसका संदर्भ बड़े उलमा व मोहद्देसीन देते रहते हैं। इस पुस्तक में उन्होंने एक घटना अपनी सनद सुनाई है कि एक प्रवचन साहब हज़रत आयशा रज़ियल्लाहू अन्हा के मकान पूरी तरह से सामने बहुत जोर से उपदेश कहा करते थे जाहिर है कि उस ज़माने में ला उड वक्ता नहीं था, लेकिन उनकी ध्वनि बहुत ऊंची थी, और हज़रत आयशा रज़ियल्लाहु अन्हा की एकाग्रता में अंतर आता था, यह हज़रत फारूक आजम रा की खिलाफत का ज़माना था, इसलिए हज़रत आयशा ने उमर से शिकायत की, कि यह साहब जोर मेरे घर के सामने उपदेश कहते रहते हैं,जो मुझे तकलीफ होती है और मुझे किसी और की आवाज सुना कोई नहीं देती,उमर ने इन साहब को संदेश भी ग कर उन्हें वहां से उपदेश कहने से मना किया,लेकिन कुछ समय के बाद प्रवचन साहब ने फिर वही सिलसिला फिर शुरू कर दिया। उमर को सूचना हुई तो उन्होंने खुद जाकर इन साहब को पकड़ा,और उन पर पज़ीरिय सजा जारी। (अखबार ालमदीनिय लिमर बन शक जवाब: 1, पी: 15)

(2) बात केवल यह नहीं थी कि हज़रत आयशा रज़ियल्लाहू अन्हा अपनी असुविधा निवारण करना चाहता था, बल्कि दरअसल वह इस्लामी समाज के इस सिद्धांत को स्पष्ट और लागू करना चाहता था कि किसी को किसी परेशानी न पहुंचे, तथा यह बताना चाहती थीं कि दीन की दावत और प्रचार पर गरिमा तरीका क्या है?इसलिए इमाम अहमद ने अपनी गद्दी में परंपरा नकल है कि एक बार उम मोमेनीन हज़रत आयशा रज़ियल्लाहू अन्हा ने मदीना के एक प्रवचन को उपदेश और प्रचार शिष्टाचार विवरण के साथ बता हुए और उनके शिष्टाचार में यह भी फर माया कि:

'' अपनी आवाज उन्हें लोगों की सीमा तक सीमित रखें जो तुम्हारी सभा में बैठे हैं और उन्हें भी उसी समय तक दीन बातें सुनाओ जब तक उनके चेहरे तुम्हारी आकर्षित हूँ,जब वह चेहरे बारी,तो आप भी बंद जाकर । और ऐसा कभी नहीं होना चाहिए कि लोग आपस में बातें कर रहे हों,और आप उनकी बात काटकर अपनी बात शुरू कर दो बल्कि ऐसे अवसर पर चुप रहो,फिर जब वह तुम्हें फर तिश तो उन्हें दीन बात सुनाओ ''(भीड़ ाल्सवायद, जवाब: 1, पी: 191)

हज़रत दी बिन अबी रबअह बड़े उच्च स्तरीय ताबेईन में हैं,ज्ञान टीका हदीस में उनका स्थान मुस्लिम है उनका मकोलह है कि ''आलम को चाहिए कि इक्की ध्वनि इस मजलिस से आगे न बढ़े '' (साहित्य ालामलाय और ालाज्यमलाय ललसमझनी, पी 5)

(4) यह सारे शिष्टाचार वास्तव खुद पवित्र सर्वर कोनीन (स.अ.व.) ने अपने कथनी और करनी से शिक्षा फर मा हुए हैं, प्रसिद्ध घटना है कि आप (स.अ.व.) उमर फारूक प्रधानमंत्री के पास से गुजरे, वह तहज्जुद की नमाज़ में जोर से पढ़ रहे थे, उमर ने कहा कि मैं '' सोते को जगाती हूँ और शैतान को भगा हूँ '' आँ हज़रत (स.अ.व.) ने फर माया कि अपनी आवाज को थोड़ा कम कर दो '' (मिशक़ात, सी 1 देखा: 107)

इसके अलावा हज़रत आयशा से ही परंपरा है कि आँ हज़रत (स।) जब तहज्जुद के लिए जागरूक होते तो अपने बिस्तर धीरज के साथ उठते थे (ताकि सोने वालों की नींद खराब न हो)

(5) उन्हें हदीसों प्रकाश सभी फ़ुक़्हा अमित इस बात पर सहमत हैं कि तहज्जुद की नमाज़ में इतनी जोर से पढ़ कर न,जो किसी की नींद खराब हो,हरगिज़ जा यज़ नहीं फ़ुक़्हा ने लिखा है कि यदि कोई व्यक्ति अपने घर की छत पर जोर से तिलावत करे जबकि लो जी सो रहे हो तो सुनाना कर वाला गुनाहगार है '' (रिासतह ाल्फ़तावी, जवाब: 1, पी 103, सीरिया, सी 1, पी 403,444)

एक मर तबह एक साहब ने यह सवाल एक ाज्यफ़्ताय की स्थिति में सेट किया था कि कुछ मस्जिदों में तरावीह की मेलबलि आवृत्ति लाउडस्पीकरों पर इतनी जोर से है कि इससे मोहल्ले की महिलाओं के लिए घरों में नमाज़ पढ़ना कठिन हो जाता है तथा जिन रोगी और कमजोर लोगों को इलाज जल्दी सोना चाहिए वह सो नहीं सकते,इसके अलावा बाहर के लोग कुरान की तिलावत साहित्य से सुनने में सक्षम नहीं होते, और कई बार ऐसा भी होता है कि पाठ के दौरान कोई सजदे कविता आती है, सुनने वालों पर गिराया वाजिब हो जाता है, और या तो उन्हें पता ही नहीं चलता, या वह वुज़ू नहीं होते, और बाद में भूल जाते हैं, कि इन स्थितियों में तरावीह के दौरान बाहरी लाउडस्पीकर जोर से खोलना शरअन वैध है?

यह सवाल अलग विद्वानों के पास भेजा गया और सबने एकमत जवाब यही दिया कि इन स्थितियों में तराीह सुनाना बाहरी लाउडस्पीकरों कोई जरूरत जोर से खोलना शरअन जा यज़ नहीं है, यह फतवा मासिक ''बलाग़ 'की मुहर्रम 1407 आह प्रकाशन में प्रकाशित हुआ है .और यह घटना है कि यह कोई अंतर समस्या नहीं है पर सभी मतों के उलेमा सहमत हैं।

अब रमजान का पवित्र महीना शुरू होने वाला है,इस महीने हमसे शरई अहकाम की सख्ती के साथ पा करने की मांग करता है,और यह इबादतों का महीना है और इसमें प्रार्थना सुनाना और उल्लेख जितना भी हो सके, जिससे पुण्य लेकिन हमें यह याद रखना चाहिए कि यह सारी इबादतें इस तरह अंजाम दी जायें कि उनसे किसी को चोट न पहुंचे,और ना जा यज़ तरीकों की बदौलत इन इबादतों का इनाम बर्बाद न हो। लाउडस्पीकर का उपयोग बोकत जरूरत और थ्रूपुट जरूरत किया जाए, इससे आगे नहीं।

उपरोक्त प्रस्तुतियाँ से अनुमान लगाया जा सकता है कि व्यवस्था ने दूसरों को परेशानी से बचाने के लिए कितना व्यवस्था क्या है?जब कुरान की तिलावत और नसीहत जैसे पवित्र कार्यों के बारे में भी व्यवस्था के निर्देश है कि उनकी आवाज जरूरत स्थानों से आगे नहीं बढ़ना चाहिए,तो संगीत वाद्ययंत्र और दूसरी ठगना के बारे में खुद अंदाज़ा लगा लीजिए कि उन्हें लाउडस्पीकर पर अंजाम देने का कितना दोहरा ाोबाल है। 6 फरवरी 1994 य: मुफ्ती तक़ी उस्मानी

(समाप्त)

https://saagartimes.blogspot.com/2021/04/atrocious-use-of-loudspeakers.html




Friday, 9 April 2021

امیرشریعت: ہمہ جہت خدمات کے چند نقوش

امیر شریعت: ہمہ جہت خدمات کے چند نقوش

بقلم: محمد منصور عالم رحمانی جامعہ فیضان ولی ایجوکیشنل اینڈ ویلفیئر ٹرسٹ الہنڈا بارسوئی گھاٹ ضلع کٹیہار بہار

حضرت امیرشریعت مولانا سید محمد ولی رحمانی صاحب نوراللہ مرقدہ ایسے وقت میں اس دنیا سے گئے جب کہ ملک و ملت کو آپ کی ہمہ جہت شخصیت کی شدید ضرورت تھی۔ آپ کی وفات سے دنیا ایک ولی صفت زندہ دل انسان، دور رس، دوربین، اہل زبان، اہل قلم، قول فیصل، بیان فیصل، بے باک قائد، بے لوث خادم، ماہرمعلم، قانون داں، پیغام محبت کے داعی، ملک و ملت کے دلوں کی دھڑکن، آس اور امید سے محروم ہوگئی. ملت یتیم ہوگئی، إنا لله و إنا إليه راجعون
حضرت امیرشریعت یقیناً ایک خدا رسیدہ انسان اور سچے عاشق رسول تھے، آپ کی اصل منزل اللہ تک رسائی اور رضائے الٰہی تھی. آپ کی بے پناہ خداداد  صلاحتیں، کاموں کو بحسن وخوبی انجام دینے کے سلیقے، ملت اسلامیہ ہندیہ کے لئے آپ کی جانب سے خدمات جلیلہ آپ کی للہیت اور نبوی عشق کے مظاہر ہیں. آپ ایک جید عالم دین تھے، جامعہ رحمانی خانقاہ مونگیر، دارالعلوم ندوۃ العلماء لکھنؤ، دارالعلوم دیوبند اور تلکامانجھی یونیورسٹی بھاگلپور بہار جیسے اداروں سے آپ نے علوم وفنون حاصل کئے.
آپ جامعہ رحمانی مونگیر کے تاحیات مدرس رہے.
جیتے جی آپ نے اپنے لئے کچھ نہیں کیا یہاں تک کہ ملت کے لئے آپ نے پٹنہ میں اپنا ذاتی مکان فروخت کرکے رحمانی 30 کو قائم کیا.
 آپ جامعہ رحمانی کے تاحیات سرپرست رہے، آپ کی سرپرستی کے عہد میں جامعہ رحمانی نے تعلیمی اور تعمیری دونوں میدان میں ترقیات کی منزلیں طے کیا. وہاں سے ایسے قابل اور ہونہار فارغین کو تیار کیا جو ملکی ہی نہیں بلکہ عالمی پیمانے پر ملت کی ترجمانی کررہے ہیں، ایک سے بڑھ کر ایک فقیہ، محدث اور قاضی پیدا ہوئے۔
جامعہ رحمانی کی تعلیم و تربیت میں حالات اور وقت کا لحاظ کرتے ہوئے ہر دور میں اس کی ضرورتوں اور تقاضوں کو پورا کرنے کیلئے نئے نئے اقدامات کئے، مختلف قسم کے نئے انداز میں مقابلاجات منعقد کرواکے فارغین کو میدان عمل میں ہرممکن کامیاب بنانے کی کوشش میں تسلسل رہا اور اس میں سو فیصد کامیابی بھی ملتی رہی.
 ترجمہ و تفسیر کے ساتھ حفظ قرآن مجید کا نیا نظام قائم کرکے کامیاب تجربہ پیش کیا، جامعہ ازہر مصر کے طرز پر عربی زبان میں درس و تدریس کا سلسلہ قائم کیا.
في البديه کسی بھی موضوع پر کامیابی کے ساتھ بولنا سکھانے کے لئے ارتجالی مسابقہ کا نظام جاری کیا۔
جامعہ رحمانی کے تعلیمی معیار کو بلند کرنے کے ساتھ ساتھ اس کی تعمیری ترقی بھی کی، تعلیم گاہ، دانش گاہ کی بلند وعظیم عمارتیں، شاندار مطبخ، اساتذہ کی قیام گاہیں اس کی گواہ ہیں۔
سجادہ نشینی کے عہد میں آپ نے بیعت و ارادت کے حلقے وسیع تر کیا۔ خانقاہ کے پلیٹ فارم سے پیغام محبت  کو عام کیا، اختلاف سے کوسوں دور رہے، امت کو ہر ممکن جوڑے رکھنا آپ کا تاحیات مشن رہا، مسلکی، آپ کے والد ماجد حضرت امیرشریعت رابع مولانا منت اللہ صاحب رحمانی کے ذریعے تحفظ شریعت اور وحدت امت کی غرض سے آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کا قیام اسی خانقاہ رحمانی کا فیض ہے، آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے اسٹیج پر کلمہ توحید کی بنیاد پر امت کا اتحاد خانقاہ رحمانی کے پیغام محبت اور وحدت امت کا مظہر ہے۔
ہزاروں مصروفیات کے باوجود خانقاہ رحمانی کی مسجد میں ہر ماہ پابندی کے ساتھ تاحیات مجلس دورود شریف منعقد کرتے رہے، جس میں ہزاروں اللہ کے بندے پابندی کے ساتھ شریک مجلس ہوتے اور آپ کے ہاتھ پر بیعت توبہ و استغفار کرتے تھے، لاکھوں اللہ کے بچھڑے بندوں نے آپ کے ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر توبہ و استغفار کیا اور اللہ سے لو لگانے کے قابل ہوگئے.
 آپ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ میں اس کی تاسیس کے وقت ہی سے شریک رہے، امیرشریعت رابع مولانا منت اللہ رحمانی کی وفات کے بعد سکریٹری منتخب ہوئے اور حضرت مولانا سید نظام الدین صاحب کے انتقال کے بعد باتفاق رائے بورڈ کے جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے۔ اپنی جرأت و استقامت اور صلاحیتوں سے بورڈ کی خدمات کو وسیع کیا. سلگتے حالات میں ملی مسائل کو حل کیا اور پرسنل لا کے تحفظ میں کوئی کسر نہیں چھوڑا.
 ایک عظیم اور باوقار ادارہ رحمانی فاؤنڈیشن قائم کرکے پورے ملک میں معیاری عصری اداروں کے قیام کا ایک بے مثال نمونہ پیش کیا، آئی آئی ٹی کی تعلیم کے لئے رحمانی 30 کا قیام رحمانی فاؤنڈیشن کی خدمات کا روشن باب ہے۔
 آپ امارت شرعیہ بہار و اڑیسہ اور جھارکھنڈ کے جب امیرشریعت نہیں تھے اس وقت بھی امارت کو آپ نے ٹوٹنے اور تقسیم ہونے سے بچایا تھا۔ جب امیرشریعت منتخب ہوئے تو آپ نے امارت شرعیہ کے دائرہ کار اور اصول و ضوابط پر کاربند رہتے ہوئے امارت سے متعلق ملت کے مفادات کو عام کیا، تعلیم و تربیت، قیام دارالقضاء، عصری اداروں کے قیام، بینادی دینی تعلیم کے فروغ اور اردو زبان کے تحفظ میں بھرپور توجہ دی، موثر اقدامات کئے، اداروں کا جال بچھایا.
  حکومت کی غلط پالیسیوں کے آگے ہندوستانی عوام میں ایک سناٹا چھایا ہوا تھا۔ حکومت وقت کے خلاف ایک زبان بولنا بھی جرم عظیم تھا. ایسے نازک وقت میں آپ نے امارت شرعیہ کے پلیٹ فارم سے 'دین بچاؤ دیش بچاؤ' آندولن کے بینر تلے گاندھی میدان پٹنہ میں ایک کروڑ سے زائد مجمع اکٹھا کرکے حکومت کو جو پیغام دینا تھا وہ دیا ساتھ میں ہندوستانی عوام کو یہ سبق دیا کہ زبان کے تالے توڑو، اگر حقوق کا تحفظ چاہتے ہو اور دین تمہیں عزیز ہے تو تمہیں سڑکوں پر اترنا ہوگا، پھر اس کے بعد ملک کے اندر آندولن کا ایک سلسلہ شروع ہوا۔
ہندوستان کی آزادی میں ہمارے اکابر و اسلاف اور مسلم حکمرانوں نے جو کارنامے، کردار اور رول ادا کیا ہے اور جان، مال اور عزت و آبرو کی قربانیاں دی ہیں تاریخ میں سنہرے حروف سے لکھے ہوئے ہیں، اگر ہندوستانی مسلمانوں نے قربانیاں نہیں دی ہوتی تو ہندوستان آزاد نہ ہوتا؛ لیکن حکومت وقت نے ہندوستانی مسلمانوں کی عظیم قربانیوں پر پردہ ڈالنے کی ناپاک سعی کی، نصابی کتب میں تبدیلیاں شروع کیں، اور آزادی کی تاریخ کا آغاز 1857 سے کیا، یہاں تک کہ تاریخ کا استاذ بھی آزادی کی تاریخ کو اٹھارہ سو ستاون سے پڑھانا شروع کیا، اور اس مہم کو مکمل پلاننگ کے ساتھ سرکاری اور غیرسرکاری دونوں سطح پر چلایا جانے لگا.
   حضرت امیرشریعت مولانا سید محمد ولی رحمانی صاحب نے بحیثیت تاریخ کا ایک طالب علم تاریخ کے ساتھ چھیڑچھاڑ اور مسلمانوں کی عظیم قربانیوں پردہ ڈالنے کی کی سعی و کوشش کو ناکام بنانے اور صحیح تاریخ کو سامنے لانے کے لئے تحریکی انداز میں لکھنا اور بولنا شروع کیا، سب سے پہلے "کیا ۱۸۵۷/ کی جدوجہد 'پہلی' جنگ آزادی تھی؟" نام سے ایک چھوٹا رسالہ تحریر کیا، رحمانی فاؤنڈیشن کے پلیٹ فارم سے اہل قلم اساتذہ تاریخ کو مختلف عنوانات اور موضوعات دے کر ادھر متوجہ کیا، اسکول، کالج اور مدرسوں کے طلبہ کو آزادی کی تاریخ کے مطالعے کی ترغیب دی مختلف ریاستوں کے دینی و عصری  طلبہ کے درمیان اس موضوع پر تحریری مسابقے کروائے اور بھاری اور قیمتی انعامات دے کر ایسے لوگوں کی حوصلہ افزائی بھی کی، رحمانی فاؤنڈیشن کے پلیٹ فارم سے اس موضوع پر مختلف سیمینار بھی کروائے، ان سیمیناروں میں ملکی سطح پر تاریخ کے لکچرر بھی مدعو ہوئے، لمبی لمبی بحثیں ہوئیں بالآخر حضرت نوراللہ مرقدہ نے تاریخ کے ساتھ چھیڑچھاڑ اور اس پر پردہ ڈالنے کی مہم کے لکھنے اور بولنے کا ایک ماحول بنایا اور آزادی کی تاریخ کو 1731 سے شروع کرکے امام الہند حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی نور اللہ مرقدہ کی تحریک سے جوڑا جس کی بنیاد پر تاریخ کے طلبہ و اساتذہ دونوں طبقوں میں یہ بات تسلیم کی جانے لگی اور لوگوں نے آزادی کی جد وجہد کو حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی سے جوڑ کر بیان کرنا شروع کیا.
بی جے پی کے اقتدار میں مدارس پر دہشت گردی کا الزام زوروشور سے لگایا جارہا تھا، مدارس پر تالے لگوانے کی تیاریاں چل رہی تھیں. ایسے نازک موڑ پر پورے ملک میں سناٹا چھایا ہوا تھا. 2002 میں حضرت امیرشریعت مولانا سید محمد ولی رحمانی صاحب نے ملک کی مختلف ریاستوں سے مدارس اسلامیہ کنونشن کے عنوان کے بینر تلے تمام اہل مدارس اور مکاتب کو مدعو کیا. حکومت وقت کے نمائندوں کو بھی مدعو کیا ان تمام لوگوں کی موجودگی میں دو ٹوک انداز میں ارباب اقتدار کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر مدارس پر دہشت گردی کے بے بنیاد الزام اور جھوٹ کو بے نقاب کیا ،اہل مدارس کو مضبوط حوصلہ دیا، حوصلہ ،ہمت اور جرأت کے ساتھ مدارس کے وقار کو بلند کیا اور دہشت گردی کے الزام سے مدارس کو بری کیا،یہاں تک کہ صدرجمہوریہ ہند عظیم سائنسدان ڈاکٹر ابوالفاخر زین العابدین عبدالکلام نے خانقاہ رحمانی پہنچ کر آپ کی آواز کو یہ کہہ کر کہ میں نے بھی مدرسے میں پڑھا ہے مزید مضبوطی دی، خود سورہ پڑھ فاتحہ کر سنائی اور طلبہ کو بھی پڑھایا ساتھ ہی سورہ فاتحہ کا ترجمہ بھی کروایا۔ اس کے بعد ارباب اقتدار نے مدارس کے تئیں اپنے ناپاک قدموں کو پیچھے کیا۔
 آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے پلیٹ فارم سے پورے ملک کے اندر دارالقضاء کا جال بچھایا، تفہیم شریعت کی تحریک شروع کی، گلی گلی اور چپے چپے میں پرسنل لا کی تفہیم و تشریح کا ماحول بنایا، علماء اور دانشوروں کو اس جانب راغب کیا.
آخر عمر میں کورونا مہاماری کی وجہ سے جب مدارس کا تعلیمی نظام متأثر ہوا، عصری اداروں میں بھی دینی تعلیم و تربیت کے فقدان کو محسوس کیا اور حکومت وقت نے اردو جیسی عالمی زبان کے ساتھ سوتیلہ پن کا رویہ اختیار کیا، اس کی لزومیت کو منسوخ کیا؛ تو آپ نے امارت شرعیہ کے پلیٹ فارم سے بنیادی دینی تعلیم، معیاری عصری اداروں کا قیام اور اردو زبان کا تحفظ اور فروغ کے عنوان پر مختلف ریاستوں میں ایک تحریک چلائی۔
اپنے تو اپنے ہی ہیں معاندین اور مخالفین بھی یہ کہنے پر مجبور ہوگئے کہ: حضرت امیر کی وفات سے ایک عہد کا خاتمہ ہوگیا، ایک صدی کا خاتمہ ہوگیا، پورا ہندوستان یتیم ہوگیا، ایک بے باک لیڈر، قائداور جرأت مند فرشتہ صفت انسان اس دنیا سے رخصت ہوگیا.
حضرت سے میرا استاذ حدیث اور شیخ ومرشد کا رشتہ بھی رہا، زبان و قلم اور ظاہر و باطن کی جو بھی نعمتیں اللہ نے دی ہیں یہ سب حضرت ہی کی توجہات ہیں، اللہ نے مجھے اپنے فضل و احسان سے دینی و عصری تعلیم و تربیت کیلئے ایک ادارہ  قائم کرنے کی توفیق دی، اسی مضبوط رشتے کی بنیاد پر ہم نے حضرت کی جانب نسبت کرتے ہوئے اپنے ادارے کا نام جامعہ فیضان ولی ایجوکیشنل اینڈ ویلفیئر ٹرسٹ رکھا۔
3 اپریل بروز ہفتہ امارت شرعیہ کے پلیٹ فارم سے حضرت کے حکم کے مطابق بنیادی دینی تعلیم، معیاری عصری اداروں کا قیام اور اردو زبان کا تحفظ اور فروغ کے عنوان پر حلقہ بارسوئی انومنڈل ضلع کٹیہار کے علماء اور دانشوران اپنی اپنی کارگزاری دینے کے لئے جمع ہوئے تھے، یہاں حضرت کی صحت کے لئے دعائیں ہوئیں، اختتام کے بعد اچانک خبر ملی کہ اب ہم سب یتیم ہوگئے، انا للہ و انا الیہ راجعون
بڑا گہرا صدمہ پہنچا، دل تھامے نہیں تھم رہا تھا، آنکھیں پرنم تھیں، جنازے میں شرکت کیلئے حاضری ہوئی اور بعد تدفین اپنا مقام لوٹا۔
اللہ سے دعاء ہے کہ امت مسلمہ ہندیہ کو حضرت کا نعم البدل عطاء فرمائے، حضرت کی صفات عالیہ ہم سبھوں میں منتقل فرمائے۔ حضرت کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور درجات کو بلند فرمائے آمین
بقلم: محمد منصور عالم رحمانی
http://saagartimes.blogspot.com/2021/04/blog-post.html?m=1

Tuesday, 30 March 2021

کھانا کھانے کے آداب

کھانا کھانے کے آداب

حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے روضۂ مبارک پر ایک عرب دیہاتی حاضر ہوکر رب سے کچھ یوں دعاء کرتا ہے،

اس کے مانگنے کا انداز دیکھئے، 

الفاظ پر غورکیجئے!

یقین جانئے ....

رب سے مانگنے کا بھی ایک خاص فن، انداز اور ڈھنگ ہوتا ہے جوکہ اس گاؤں کے رہنے والے عربی سے سیکھنا چاہئے.

اے اللہ!

یہ آپ کے حبیب ہیں،

میں آپ کا غلام ہوں اور شیطان آپ کا دشمن ہے۔

خدایا اگر تو مجھے بخش دے گا تو تیرا حبیب خوش ہوگا،

تیرا بندہ کامیاب ہوگا اور تیرا دشمن غمگین ہوگا...

مولا اگر تو نے میری بخشش نہیں کی تو تیرا حبیب غمگین ہوگا،

تیرا غلام ناکام ہوگا اور تیرا دشمن خوش ہوگا...

الہی! تیری شان اس سے بڑی ہے کہ تو اپنے حبیب کو غمگین کردے،

اپنے بندے کو ناکام اور اپنے دشمن کو خوش کردے...

میرے پروردگار،

ہم عرب ہیں ہمارے یہاں جب کوئی سردار فوت ہوجائے تو اس کی قبر پر غلاموں کو آزاد کیا جاتا ہے. یہ تو تمام جہانوں کے سردار محمد الرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  کی قبر ہے، پس یہاں مجھ غلام کو جہنم کی آگ سے آزاد فرما دے۔ آمین۔  

میں نے یہ دعا سُنی تو دنگ رہ گیا.

پھر ان سے بات کی. میں نے اپنی عمر بتائی اور ان کی عمر پوچھی تو معلوم ہوا وہ ۹۵ برس کے تھے اور ان کی والدہ کا انتقال ۱۰۵ برس کی عمر میں ہوا تھا.

میں نے ذرا ہچکچاہٹ سے پوچھا کہ: اچھی صحت کا راز تو بتائیں؟

کہنے لگے: بس بیمار نہ پڑو.

میں نے کہا: یہ تو ہمارے بس کی بات نہیں۔

ہنستے ہوئے کہنے لگے: بس کی بات ہے.

میں نے کہا: آپ بتائیں میں ضرور عمل کرونگا.

میرے قریب آکر آہستہ سے کہنے لگے: منہ میں کبھی کوئی چیز 'بسم اللہ' کے بغیر نہ ڈالنا چاہے پانی کا قطرہ ہو یا چنے کا دانہ...

میں خاموش سا ہوگیا.

پھر کہنے لگے: اللہ تعالیٰ نے کوئی چیز بے مقصد اور بلاوجہ نہیں بنائی ہر چیز میں ایک حکمت ہے اور اس میں فائدے اور نقصان دونوں پوشیدہ ہیں- جب ہم کوئی بھی چیز 'بسم اللہ' پڑھ کر منہ میں ڈالتے ہیں تو اللہ اس میں سے نقصان نکال دیتا ہے-

ہمیشہ بسم اللہ پڑھ کر کھاؤ پیو اور دل میں بار بار خالق کا شکر ادا کرتے رہو اور جب ختم کرلو تو بھی ہاتھ اٹھاکر شکر ادا کرو کبھی بیمار نہ پڑوگے- انشاءاللہ

میری آنکھیں تر ہوچکی تھیں کہ یہ شخص کتنا بڑا عالم تھا!

خیر دیر ہورہی تھی میں سلام کرکے اٹھنے لگا تو میرا ہاتھ پکڑ کر کہنے لگے:

کھانے کے حوالے سے آخری بات بھی سنتے جاؤ، 

میں جی کہہ کر پھر بیٹھ گیا.

کہنے لگے: اگر کسی کے ساتھ بیٹھ کر کھارہے ہو تو کبھی بھول کر بھی پہل نا کیا کرو ... چاہے کتنی ہی بھوک لگی ہو. پہلے سامنے والی کی پلیٹ میں ڈالو اور وہ جب تک لقمہ اپنے منہ میں نہ رکھ لے تم نہ شروع کیا کرو.

میری ہمت نہیں پڑ رہی تھی کہ اس کا فائدہ پوچھوں!

لیکن وہ خود ہی کہنے لگے: یہ تمہارے کھانے کا صدقہ ادا ہوگیا اور ساتھ ہی اللہ بھی راضی ہوا کہ تم نے پہلے اس کے بندے کا خیال کیا- یاد رکھو! غذا جسم کی اور 'بسم اللہ' روح کی غذا ہے- اب بتاؤ کیا تم ایسے کھانے سے بیمار پڑسکتے ہو؟

میں شرمندگی میں ڈوبا ہوا بے ساختہ ان کے چہرے پر اپنے دونوں ہاتھ رکھ کر اجازت لے کر تیزی سے جانے کے لئے مڑگیا کہ دین کی چھوٹی چھوٹی باتوں سے ہم اور ہماری اولادیں کتنی محروم ہیں۔ تبھی تو ہمارا معاشرہ ہر برائی میں ڈوبا ہوا ہے. اللہ پاک ہمیں دل و جان سے شاکر بنائے اور دین کا صحیح علم اور اچھی سمجھ عطا فرمائے آمین

میں راقم تحریر آگے پڑھنے والوں سے دست بستہ عرض گذار ہے۔ مجھےبھی اپنی دعاؤں میں یاد فرماتے رہیں۔  (نقلہ: #ایس_اے_ساگر)

https://saagartimes.blogspot.com/2021/03/blog-post_30.html





Saturday, 20 March 2021

معراجِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم: غم کا مداویٰ و مرتبے کی بلندی

 معراجِ رسول صلی اللہ علیہ وسلم: غم کا مداویٰ و مرتبے کی بلندی

دلائل نبوت: رسالت محمدی برحق ہے، اس پر ایمان لانا اسلام کے بنیادی عقائد میں سے ہے، جس کو باری تعالیٰ نے بہت ہی عظیم الشان طریقے پر ذکر فرمایا ہے، وَمَا یَنطق عن الہویٰ انْ ہُوَ الاَّ وحی یوحیٰ اور دوسری جگہ ارشاد ہے: ما آتاکم الرّسولُ فخذوہ وما نہاکم عنہ فانتہوا واتقو اللّٰہ، چنانچہ سیرت کے بہت سے واقعات سیدالمرسلین محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت کی دلیلیں بھی ہیں، اور آپ کے معجزات میں سے بھی ہیں، جیسے معجزہ شق القمر، کنکریوں کا کلمہ پڑھنا وغیرہ۔ اسی طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی جسمانی معراج یعنی رات کے چند لمحات کے اندر ساتوں آسمان کا سفر کرکے سدرة المنتہیٰ کے پاس تشریف لیجانا، باری تعالیٰ سے ہم کلام ہونا، بار بار کی تخفیف کے بعد امت کیلئے پانچ وقت کی نماز کا تحفہ لے کر چند لمحات میں بیت ام ہانی رضی اللہ عنہا کے اندر واپس تشریف لانا، ارشاد باری ہے، سُبْحٰنَ الذیْ أَسْریٰ بعَبْدہ لَیْلاً مّنَ المسْجد الحرام الی المسجد الأقصیٰ o الذی بارکنا حولہ لِنریہ من آیاتنا انّہ ہُو السمیع البصیر (سورہ بنی اسرائیل، آیت:۱-۲) ترجمہ: پاک ہے وہ ذات جس نے اپنے خاص بندہ یعنی محمد  صلی اللہ علیہ وسلم کو رات کے ایک قلیل حصہ میں مسجدحرام سے مسجد اقصیٰ تک لے گیا، (جس سے اصل مقصود یہ تھا کہ آپ  صلی اللہ علیہ وسلم کو آسمانوں کی سیر کروائیں اور وہاں کی) خاص خاص نشانیاں آپ کو دکھلائیں (جن کا کچھ ذکر سورة النجم میں فرمایا ہے کہ آپ سدرة المنتہیٰ تک تشریف لے گئے اور وہاں جنت و جہنم اور دیگر عجائباتِ قدرت کا مشاہدہ فرمایا) تحقیق کہ اصل سننے والا اور اصل دیکھنے والا حق تعالیٰ ہے۔ (وہی جس کو چاہتا ہے اپنی قدرت کے نشانات دکھلاتا ہے اور پھر وہ بندہ اللہ کی تبصیر سے دیکھتا ہے اور اللہ کے اسماع سے سنتا ہے۔

تبلیغ و دعوت اور رنج و غم کے لمحات:

نبوت ملنے کے بعد حکم ہوا ”یا أیہا الرسول بلغ ما أنزل الیکَ من ربکَ وان لم تفْعَل فما بلغت رسالتہ“ (المائدہ)

ترجمہ: اے رسول  صلی اللہ علیہ وسلم آپ وہ (پیغام لوگوں تک) پہنچادیجئے جو آپ کے پاس آپ کے رب کی طرف سے نازل کیاگیا، اور اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا نہیں کیا تو (گویا کہ) آپ نے اپنے رب کا پیغام لوگوں تک نہیں پہنچایا۔

چنانچہ بعثت کے بعد تین سال تک آپ  صلی اللہ علیہ وسلم خفیہ طریقہ پر دین اسلام کی تبلیغ کرتے رہے، اور لوگ آہستہ آہستہ اسلام میں داخل ہوتے رہے، تین سال کے بعد یہ حکم نازل ہوا فَاصْدَعْ بمَا تُوٴمَرُ وَأَعْرِضْ عَنِ الْمُشرکین (سورہ الحجر)

ترجمہ: جس بات کا آپ کو حکم دیا گیا ہے، اس کا صاف صاف اعلان کردیجئے، اور مشرکین کی پروا نہ کیجئے۔ 

چنانچہ کوہ صفا پر چڑھ کر آپ نے احکام الٰہی کو لوگوں تک پہنچایا، اور اعلانیہ دعوت کا کام شروع کردیا، اِدھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دعوت کا کام شروع کیا، اور اُدھر مکہ کے قریش و مشرکین کی ریشہ دوانیوں، منصوبہ بندیوں اور ایذاء رسانیوں کا سلسلہ شروع ہوگیا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم تنہا مسجد حرام اور خانہ کعبہ میں نماز پڑھنے کے لئے جاتے تو طرح طرح کی کلفتوں اور مشقتوں کا سامنا کرنا پڑتا تھا۔ کبھی کوئی آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر پتھر پھینکتا، کبھی آوازیں کستا، اور تمسخر و مذاق اڑاتا، اسی طرح راستے میں کبھی آپ کے سرپر اوپر سے کوڑا کرکٹ ڈال دیا جاتا، کبھی اوجھڑی پھینک دی جاتی، اور آپ کیلئے تبلیغ کی راہ میں رکاوٹیں پیدا کی جاتیں۔ یہ سارے حالات ذہنی کلفت و اذیت کا سبب بھی تھے، اور جسمانی مشقت و پریشانی کا باعث بھی۔ وہ بھی کس مپرسی افلاس اور کم مائیگی کے عالم میں، لیکن پھر بھی آپ کی تسلی اور دل کی مضبوطی و اطمینان کیلئے دو سہارے موجود تھے، اول یہ کہ آپ  صلی اللہ علیہ وسلم کی آٹھ سال کی عمر کے وقت آپ کے دادا عبدالمطلب کا انتقال ہوا، آخری وقت میں انھوں نے آپ کے چچا ابوطالب کو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی تربیت اور پرورش کیلئے وصیت کی، پھر باپ سے بڑھ کر انھوں نے شفقت و ہمدردی اور تربیت کاحق ادا کیا اور اسی طرح آپ  صلی اللہ علیہ وسلم کی سب سے پہلی بیوی حضرت خدیجة الکبریٰ رضی اللہ عنہا جو غار حرا سے واپسی اور نبوت ملنے کے بعد سب سے پہلے آپ پر ایمان لائیں، اور زندگی بھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کیلئے سہارا اور قلبی راحت و سکون کا سبب بنی رہیں کہ ساری اذیتوں اور پرخاش ماحول کے بعد جب گھر تشریف لاتے تو آپ کے دل کو قرار اور چین و سکون نصیب ہوجاتا۔ لیکن مرتبے کی بلندی مصائب و ابتلاء سے گھری ہوئی رہتی ہے، چنانچہ ۱۰/ نبوی عام الحزن والملال کے نام مشہور ہوا، کہ چند دن کے اندر دو دو سہارے آپ کی زندگی سے ختم ہوگئے۔ شعب ابی طالب سے نکلنے کے چند ہی روز بعد ماہ رمضان یا شوال ۱۰ نبوی میں ابوطالب کا انتقال ہوا، پھر تین یا پانچ دن بعد حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا کا بھی انتقال ہوگیا۔

سفر طائف سلسلہٴ مشقت کی ایک کڑی:

ابوطالب کے بعد آپ کا کوئی حامی و مددگار نہ رہا اور حضرت خدیجہ کے رخصت ہوجانے سے کوئی تسلی دینے والا غمگسار نہ رہا، اس لئے آپ  صلی اللہ علیہ وسلم نے قریش مکہ کی چیرہ دستیوں سے مجبور ہوکر اخیر شوال ۱۰ نبوی میں دعوت کے لئے طائف کا قصد فرمایا کہ شاید یہ لوگ اللہ کی ہدایت کو قبول کریں، اور اس کے دین کے حامی و مددگار ہوں، زید بن حارثہ کو ہمراہ لے کر طائف تشریف لے گئے۔ (سیرت مصطفی، جلد: ۱، ص: ۲۷۴)

پھر طائف میں کیا کچھ ہوا اور وہاں کے شریر بچوں نے آپ کے ساتھ کیسا سلوک کیا اور کس طرح زدوکوب کے ساتھ آپ کو خون میں لت پت کیا اس کے لئے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کی روایت کافی ہے۔

”حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ میں نے ایک بار عرض کیا: یا رسول اللہ آپ  صلی اللہ علیہ وسلم پر اُحد سے بھی زیادہ سخت دن گذرا ہے، آپ  صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیری قوم سے جو تکلیفیں پہنچیں سو پہنچیں، لیکن سب سے زیادہ سخت دن وہ گذرا کہ جس دن میں نے اپنے آپ کو عبدیالیل کے بیٹے پر پیش کیا، اس نے میری بات کو قبول نہیں کیا، میں وہاں سے غمگین ورنجیدہ واپس ہوا۔“ (ملخص از ترجمہ فتح الباری، ج: ۶، ص: ۲۲۵)

کفار مکہ کی ستم ظریفی:

اور یہ تو سفر کی مختصر سی مدت تھی اگرچہ کلفت و مشقت اور رنج و غم کے اعتبار سے پوری زندگی کے اوقات میں سب سے دشوار معلوم ہوئی، اس کے علاوہ مکہ معظمہ کے قیام میں بھی کیا کم مصائب اور اذیتوں سے دوچار ہونا پڑا، دونوں میں فرق کیلئے بس اتنا ہی کہا جاسکتا ہے کہ ایک مرحلہ سانپ کے کاٹنے کی طرح ہے کہ جس سے اچانک انسان جاں بحق ہوجاتا ہے، اور دوسرا بچھو کے ڈنک مارنے کی طرح ہے جس کا زہر لہریں مارتا رہتا ہے۔ چنانچہ ابن ہشام اپنے ماخذ سیرت میں رقمطراز ہیں:

قال ابن اسحاق: ومرّ رسول اللہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ۔ فیما بلغنی۔ بالولید بن المغیرة وأمیة بن خلف، وبأبی جہل ابن ہشام فہمزوہ واستہزووا بہ فغاظہ ذلک فأنزل اللّٰہ تعالیٰ علیہ فی ذلک من أمرہم ”ولقد اسْتہزیَ برسل من قبلکَ فحاق بالذین سخروا منہم ما کانوا بہ یستہزوٴن“ (سیرة ابن ہشام، ج: ۱، ص: ۳۹۵)

ابن اسحاق نے فرمایا: جہاں تک مجھے خبر ملی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا گذر ولید بن المغیرہ، امیہ بن خلف اور ابوجہل ابن ہشام پر ہوا، تو ان لوگوں نے آپ پر طعن و تشنیع کیا، اور آپ کا مذاق اڑایا، تو اس کی وجہ سے آپ غصہ ہوئے، جس کی بناء پر قرآن پاک کی یہ آیت نازل ہوئی۔ ”ولقد استہزی الخ“ تحقیق کہ آپ سے پہلے رسولوں کا مذاق اڑایا گیا سو جن لوگوں نے استہزا کیا تھا ان پر وہ عذاب نازل ہوگیا جس کا وہ استہزاء کیا کرتے تھے۔

قال ابن اسحق فأقام رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم علی أمر اللّٰہ صابرًا محتسبًا موٴدیاً الی قومہ النصیحة علی ما یلقی عنہم من التکذیب والأذیٰ (والاستہزاء) (سیرة ابن ہشام، ج:۱، ص: ۴۰۸)

ابن اسحاق نے فرمایا کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم اللہ کے حکم پر قائم رہے، صبر کرتے ہوئے ثواب کی امید کرتے ہوئے اور اپنی قوم تک نصیحت کی باتیں پہنچاتے ہوئے باوجودیکہ ان کی جانب سے آپ کی شانِ اقدس میں تکذیب و مذاق بازی اور ایذاء رسانی کا سلسلہ جاری تھا۔

اور اسی پر بس نہیں بلکہ فَترتِ وحی کے موقع پر بھی طرح طرح سے کفار مکہ نے آپ کو تمسخر و استہزا کا نشانہ بنایا۔

زخم خوردہ نبی کی تسلی:

اسی طرح جب مسلسل مصائب و آلام کے پہاڑ توڑے گئے، مشقت و کلفت کی انتہا ہوگئی، تو ارحم الراحمین نے طرح طرح سے مختلف آیتوں کے نزول اور واقعات کے ذریعہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کیلئے صبر و تسلی کا سامان مہیا فرمایا، اور قوت و پختگی اور عزم و حوصلہ کے ذریعہ آپ کی مدد فرمائی حتی کہ دو سورتوں یعنی ”والضحیٰ اور ألم نشرح“ کا نزول ہوا، جس میں باری تعالیٰ نے آپ کے رخِ انور کی قسم کھاکر ارشاد فرمایا: ”مَا وَدّعک ربک و ما قلیٰ“ یعنی آپ کے رب نے آپ کو چھوڑا نہیں اور نہ ہی آپ سے ناراض ہوا، ارشاد ہوا:

ألم نشرح لک صدرک ووضعنا عنک وزرک الذی أنقض ظہرک ورفعنا لک ذکرک (سورة الانشراح)

کیا ہم نے آپ کی خاطر آپ کا سینہ (علم وحلم) سے کشادہ نہیں کردیا اور ہم نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر سے آپ کا وہ بوجھ اتاردیا جس نے آپ کی کمر توڑ رکھی تھی اور ہم نے آپ کی خاطر آپ کا آوازہ بلند کیا۔ (یعنی اکثر جگہ شریعت میں اللہ کے نام کے ساتھ آپ کا نام مبارک مقرون کیاگیا) کذا فی الدر المنثور، معارف القرآن، ج: ۸

اسلامی فلاسفر اور ادیب مفسرقرآن مولانا عبدالماجد دریابادی رحمۃ اللہ علیہ لکھتے ہیں: ”ہندوستان کے چھوٹے چھوٹے قریوں اور موضعوں، عرب کے ریگستان اور چٹیل میدان اور افریقہ کے صحرا و بیابان سے لے کر لندن اور پیرس اور برلن کے تمدن زاروں تک، ہر روز اور ہر روز میں بھی پانچ پانچ بار کس کے نام کی پکار اللہ کے نام کے ساتھ ساتھ بلند رہتی ہے؟ اپنی ذاتی عقیدت مندی کو الگ رکھئے محض واقعات پر نظر رکھ کر فرمائیے کہ یہ مرتبہ یہ اکرام دنیا کی تاریخِ معلوم سے لیکر آج تک کسی ہادی کسی رہبر کسی مخلوق کو حاصل ہوا ہے؟ جس بے کس اور بے بس سے عین اس وقت جبکہ اسے زور اور قوت والے سردارانِ قریش اپنے خیال میں کچل کر رکھ چکے تھے، اور اس کا نام و نشان تک مٹاچکے تھے، یہ وعدہ ہوا تھا، ”ورفعنا لک ذکرک“ ہم نے تیرے لئے تیرا ذکر بلند کررکھا ہے، اگر آوازہ اس کا بلند نہ ہوگا تو اور کس کا ہوگا؟ (ذکر رسول، ص: ۶۳)

خورشید مبین کی تابانی (معراج رسول):

ابتلا و آزمائش بہت زبردست تھی، صبر آزما مراحل اورمصائب کے پہاڑ تھے، جس پر اللہ تعالیٰ کی طرف سے صبر کی تلقین کی گئی۔

فاصْبِر کَمَا صَبَر أُوْلُوا العزمِ منَ الرسُلِ وَلاَ تَسْتَعْجِلْ لَّہُمْ (سورہ الاحقاف، آیت: ۳۵)

تو آپ صبر کیجئے جیسا اور ہمت والے پیغمبروں نے صبر کیا تھا اور ان لوگوں کیلئے (انتقام الٰہی کی) جلدی نہ کیجئے۔

باری تعالیٰ نے آپ کی صبر و تسلی کے لئے فرمایا: ”ووضعنا عنکَ وزرک الذی أنقض ظہرک ورفعنا لک ذکرک“ ترجمہ: ہم نے آپ پر سے آپ کا وہ بوجھ اتار دیا جس نے آپ  صلی اللہ علیہ وسلم کی کمر توڑ رکھی تھی، اور ہم نے آپ کی خاطر آپ کا آوازہ بلند کیا۔ (سورہ الانشراح، آیت:۴)

حزن و ملال کا ہجوم، مصائب و آلام کی یلغار ہی کیا کم تھی کہ مزید برآں اعزاء و اقرباء اور اہل خاندان کی مخالفت کفار و مشرکین اہل مکہ کا دعوت کی راہ میں حائل ہونا وغیرہ جو حوصلہ شکنی کے لئے کافی تھے۔ حتی کہ آپ کی پریشان حالی پر باری تعالیٰ نے آپ کو مخاطب فرمایا: فلعلک باخعٌ نفسک علی آثارہم ان لم یوٴمنوا بہذا الحدیث أسفًا (سورہ الکہف، آیت: ۶) ترجمہ: شاید آپ ان کے پیچھے اگر یہ لوگ اس مضمون پر ایمان نہ لائے تو غم سے اپنی جان دے دیں گے۔

ظاہر ہے جو حبیب و محبوب ہو، آخری رسول ہو، ع ”بعد از خدا بزرگ توئی قصہ مختصر“ کا مصداق ہو، تاریکیوں میں چراغ روشن کرنے کا عزم رکھتا ہو، دشوار گذار مراحل، اور خاردار وادیوں کو پار کرتا ہو، حوصلہ شکن حالات کا پامردی سے مقابلہ کرتا ہو، تو اس کو تمغہ بھی اتنا ہی بڑا ملنا چاہئے، اور اس کے بلندیٴ مرتبہ پر دلیل بھی اتنی بڑی قائم ہونی چاہئے کہ جس کے اوپر اور دلیل نہ ہو، اور جس سے زیادہ عظیم الشان کوئی واقعہ اس کرہ ارض پر نہ پیش آیا ہو اور نہ آسکتا ہو، اور وہ اسراء و معراج کا عظیم الشان واقعہ۔ اسراء اور معراج کے بارے میں بہت سے موضوعات زیربحث آتے ہیں۔

(۱) اختلاف اقوال کی روشنی میں اس واقعہ کی تاریخ کا تعین

(۲) یہ واقعہ روحانی ہے یا جسمانی، (یا منامی)

(۳) مکہ معظمہ سے بیت المقدس کا سفر اور امامت انبیاء

(۴) ثمّ دنی فتدلّٰی کی واقعاتی توضیح

(۵) مولیٰ سے ہمکلامی، اور حاصل ہونے والے تحفہ کی تفصیل

(۶) جنت اور جہنم کی سیر اور چند مشاہدات

لیکن یہ سب کچھ اس عظیم الشان واقعاتی تجزئیے سے تعلق رکھنے و الے موضوعات ہیں، لہٰذا، اس کو دوسرے موقع کیلئے محفوظ رکھتے ہوئے، اس سے ماخوذ چند عجائب سفر اور لطائف و معارف کا ذکر ضروری معلوم ہوتا ہے، تاہم قرآن پاک کے اجمال اور احادیث رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی تفصیل سے یہ بات واضح ہوجاتی ہے، کہ جبرئیل امین علیہ السلام براق کے ساتھ تشریف لائے، اور سرورکائنات جناب محمد رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم کو ام المومنین حضرت ام ہانی رضی اللہ عنہا کے مکان سے مسجد حرام، پھر وہاں سے مسجد اقصیٰ، اور انبیاء کرام علیہم الصلوۃ والسلام کی امامت کرنے کے بعد آسمان کی سیر کرواتے ہوئے اور انبیاء سابقین سے ملاقات کرواتے ہوئے ساتوں آسمان کے اوپر لے گئے، پھر وہ مقام آیا کہ جس کے آگے بڑھنے سے جبرئیل امین کے قدم عاجز و قاصر رہے، جیساکہ شیخ سعدی رحمۃ اللہ علیہ کے اس شعر سے ظاہر ہے۔

اگر یک سرِ موئے برتر برم                        

فروغِ تجلی بسوزد پرم

باری تعالیٰ کا ارشاد ہے:

ثم دنی فتدلّی فکان قاب قوسین أو أدنی o فأوحیٰ الی عبدہ ما أوحیٰ ما کذب الفوٴادُ ما رأی، أفتمارونہ علی ما یریٰ، ولقد رأٰہ نزلةً أخریٰ عند سدرة المنتہیٰ عندہا جنة الماویٰ اذ یغشی السدرة ما یغشیٰ، مازاغ البصر ومَا طغیٰ، لقد رأیٰ من آیات ربہ الکبریٰ (سورة النجم)

ترجمہ: پھر وہ فرشتہ (آپ کے) نزدیک آیا، (سو قرب کی وجہ سے) دونوں کمانوں کے برابر فاصلہ رہ گیا، بلکہ اور بھی کم پھر اللہ تعالیٰ نے اپنے بندہ (محمد  صلی اللہ علیہ وسلم) پر وحی نازل فرمائی، جو کچھ نازل فرمانا تھی۔ (جس کی تعیین بالتخصیص معلوم نہیں) قلب نے دیکھی دیکھی ہوئی چیز میں غلطی نہیں کی، تو کیا ان سے دیکھی ہوئی چیز میں نزاع کرتے ہو، انھوں نے (پیغمبر نے) اس فرشتہ کو اور دفعہ بھی (صورت اصلیہ میں) دیکھا ہے، سدرة المنتہیٰ کے پاس جنت الماویٰ ہے، جب اس سے سدرة المنتہیٰ کو لپٹ رہی تھی جو چیزیں لپٹ رہی تھیں، نگاہ تو نہ ہٹی (بلکہ ان چیزوں کو خوب دیکھا) اور نہ (ان کی طرف دیکھنے کو) بڑھی (یعنی قبل اِذن نہیں دیکھا) پیغمبر  صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے رب کے بڑے عجائبات دیکھے۔ (معارف القرآن، ج: ۸، ص: ۱۹۲)

پھر آپ کو رب ذوالجلال سے ہمکلامی کا شرف حاصل ہوا، پچاس نمازوں کی فرضیت کا تحفہ عطا کیا گیا، جو تخفیف کے بعد پانچ وقت کی صورت میں باقی رہا، اجر و ثواب میں پچاس وقت کی کیفیت کے ساتھ۔

اسی طرح آپ نے اقلام تقدیر کے چلنے کی آوازوں کو سنا، بعد ازاں جنت و جہنم کا مشاہدہ فرمایا، پھر جبرئیل امین علیہ السلام کی معیت میں مسجد اقصیٰ میں نزول فرمایا، اور وہاں سے مسجد حرام واپس ہوکر بیت ام ہانی میں تشریف لائے۔

یہ تھی ایک طائرانہ نظر معراج رسول کے مبارک سفر پر جس میں آپ کے رنج و غم کا مداویٰ بھی تھا اور ذکر کی بلندی بھی، شخصیت کی جلوئ آفرینی بھی، اور ختم نبوت کی دلیل بھی، سارے جہانوں کی سرداری بھی، آپ کی امت اور آپ کے پیغام کے خلود وبقاء کی علامت بھی، نیز ساتھ ہی بے مثال واقعات کے معجزہ نمائی بھی جو سارے فلسفہ و علوم اور اسباب و علل کی دسترس سے باہر ہو سچ ہے:

لا یمکن الثناء کما کان حقہ

بعد از خدا بزرگ توئی قصہ مختصر

اب ان خصائص و امتیازات، اور فوائد و ثمرات کو شعور و وجدان کی کیفیت کے ساتھ اخذ کرنے اور گہرائی و گیرائی سے آشنا ہونے کیلئے، ان اسرار و حکم حقائق و معارف اور دروس و عبر کا قلب و ذہن میں پیوست ہونا اور نظر میں آنا ضروری ہے، جو اس بلندی و رفعت کے دلچسپ سفر میں مضمر ہے۔

سفرمعراج کے اسرار و حکم:

واقعہٴ معراج محض ایک مشاہداتی سفر اور قطع مسافت کی پرکیف و عجیب داستان نہیں ہے، سورہ اسراء اور سورہ نجم اوراس سلسلے میں مروی صحیح ومشہور احادیث سے بہت سے اسرار و حکم اور لطائف و معارف سامنے آتے ہیں۔

(۱) خاتم النّبیین صلی اللہ علیہ وسلم مسجد حرام اور مسجد اقصیٰ دونوں قبلوں کے نبی اور مشرق و مغرب دونوں سمتوں کے امام ہیں۔

(۲) آپ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے پیش رو تمام انبیاء کرام کے وارث اور بعد میں آنے والی پوری نسل انسانی کے رہبر و رہنما ہیں۔

(۳) آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیغام، دعوت کی عمومیت و آفاقیت آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی امامت کی ابدیت اور آپ  صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیمات کی ہمہ گیری و صلاحیت کی دلیل و علامت ہے۔

(۴) آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی شخصیت کا صحیح تعارف اور صحیح نشاندہی ہے۔

(۵) آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی امت کے اصل مقام و حیثیتِ عرفی کا تعین ہے۔

(۶) آپ کی نبوت کی محدود، مقامی اور عارضی نوعیت اور ابدی و عالمگیری حیثیت کے درمیان خطّ فاصل ہے۔

(۷) آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی قیادت و سیادت کا قومی اور سیاسی قیادت پر غلبہ و تفوق اور بالاتری کا ثبوت اور امتیازی حیثیت ہے۔

(۸)  ایسا معجزہ اور کرامت ہے جو آپ کے سوا کسی کو حاصل نہیں ہوا۔

(۹)  عبادت اور تقرب و بندگی کے ذریعہ کو بطور تحفہ آسمان کے اوپر مہمان بناکر عطا کرنا جو رفعِ ذکر کی وقوعی اور خارجی تفسیر ہے۔

(۱۰) نبی آخرالزماں صلی اللہ علیہ وسلم کو دوسرے انبیاء پر جو فضیلت ہے، ان میں دو باتیں خاص طور پر فضیلت کا باعث ہیں: دنیا میں معراج اور آخرت میں شفاعت۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ دونوں دولتیں تواضع کی بدولت حاصل ہوئیں، آپ  صلی اللہ علیہ وسلم نے حق تعالیٰ کے ساتھ تواضع کی، تو دولت معراج کی پائی، اور مخلوق کے ساتھ تواضع کی تو دولت شفاعت کی پائی، حق تعالیٰ کے سوال پر شب معراج میں آپ نے فرمایا کہ تمام القاب میں سب سے زیادہ پسندیدہ لقب میرے لئے عبد کا ہے، تیرا بندہ ہونا، یعنی عبدیت کی اساسی صفت جو باری تعالیٰ کو انسانیت کی جانب سے سب سے زیادہ مطلوب اور محبوب ہے۔

(۱۱) رات کی خلوت و تنہائی میں بلانا، مزید تقرب اور اختصاصِ خاص کی دلیل ہے۔

(۱۲) مسجد اقصیٰ کے معاملات کا سارے عالم اسلام سے گہرے ربط و تعلق کا ثبوت، نیز یہ کہ فلسطین، کا دفاع اور مسجد اقصیٰ کی حفاظت ساری دنیا کے مسلمانوں پر حسب استطاعت واجب ہے، اوراس سے غفلت ایسی کوتاہی ہے جس پر موٴاخذہ بھی ہوسکتا ہے۔

(۱۳) امت مسلمہ کے مرتبے کی بلندی اور عظمت شان اور دنیا کی خواہشات و رغبات سے اس امت کے مستوی اور معیار کی رفعت ہے۔

(۱۴) اس میں اشارہ ہے کہ فضاء کا خلائی سفر اور کرئہ ارضی کے مقناطیسی دائرے سے نکل کر اوپر دوسرے دائرے میں داخل ہونا ممکن ہے، اور آپ  صلی اللہ علیہ وسلم ساری دنیا کی تاریخ میں سب سے پہلے خلا باز مسافر ہیں، اور آپ  صلی اللہ علیہ وسلم کے سفر معراج سے یہ بات روز روشن کی طرح واضح ہے کہ آسمان سے کرئہ ارضی کی طرف صحیح سالم لوٹ کر آنا ممکن ہے۔

(۱۵) معراج میں نماز کی فرضیت سے یہ اشارہ ملتا ہے کہ روزانہ پانچ مرتبہ اللہ کے حضور سارے مومنین کی روحوں اور دلوں کو پہنچنا چاہئے، تاکہ خواہشات کی سطح سے بلندی نصیب ہو۔

سفر معراج دعوت و تبلیغ کی ایک کڑی:

یہ تھے سفر معراج کے اندر پوشیدہ بلند و بالا مقاصد اور لطائف ومعارف، دروس و عبر، جو آپ کے اوپر پے بہ پے نازل ہونے والے رنج و غم کا مداویٰ ثابت ہوئے، جس کے ذریعہ آپ کے اوپر سے حزن و ملال کے بادل چھٹ گئے، آپ  صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی زندگی کے لمحات میں ولسَوف یعطیک ربُّک فترضیٰ کا منظر دیکھا، اور خوشی و مسرت کا سانس لیا، اور فرحت و انبساط کے حالات کی طرف عود کر آئے، اور نہ صرف غم و اندوہ کافور ہوئے بلکہ دعوت و تبلیغ کی راہیں ہموار ہوتی گئیں، بلکہ رغبت و لگن اور مولیٰ کی رضا جوئی کے ساتھ قدم بڑھتے رہے، آپ کے عزم و حوصلہ اور پختگی و ثبات قدمی کو مہمیز کرنے والی قوت ملی، کیونکہ اس سفر مبارک میں آپ کے مرتبے کی بلندی بھی تھی۔

سچ ہے جب کفار و مشرکین نے آپ کے نرینہ اولاد کے زندہ نہ رہنے کی وجہ سے آپ کو طنز و تشنیع کا نشانہ بنایا، اور آپ کو منقطع النسل اور قلیل الخیر ہونے کا طعنہ دیا، تو آپ کے قلب اطہر پر سورة الکوثر نازل کرکے ان دشمنان رسول کا دندان شکن جواب دیاگیا، اور ان کے باطل نظریات پر کاری ضرب لگائی گئی: انا أعطینٰک الکوثر، فصَلّ لربک وانحر، انَّ شَانئک ہُوالأبتر․ اس میں مفسرین کے اقوال کے مطابق کوثر، حوض کوثر کے ساتھ خیر کثیر کے معنی کو بھی شامل ہے، اور آپ کے دشمنوں کے منقطع النسل ہونے کا اعلان ہے، جیسا کہ ”ہو الابتر“ سے ظاہر ہے، اور کسی بھی تحریک اور مشن کو لے کر چلنے والے کے لئے راستہ سے موانع و عوائق کا دور ہوجانا اس کے قلب و ذہن کا غم و اندوہ اور افکار پریشاں سے خالی ہوجانا اور مرتبے کی بلندی کے ذریعے عزم کا پختہ ہونا، حوصلے کا بلند ہونا، فلاح و کامیابی کا پیش خیمہ اور حیرت انگیز پیش قدمی کا ضامن ہوتا ہے۔ چنانچہ اسی عظمت و رفعت کا کرشمہ تھا کہ ایسے ماحول میں جبکہ اہل مکہ بلکہ تمام اہل عرب نہ صرف یہ کہ ضلالت و شقاوت میں ڈوبے ہوئے تھے، بلکہ اسی کے دلدادہ تھے، اور وہی ان کی طبیعت بن گئی تھی، اور جہالت و بہیمیت کی حدود کو پار کرنے میں ایک فرد دوسرے سے پیچھے رہنا گوارہ نہیں کرتا تھا، اور اس کیلئے دنیا کا سارا خسارہ اور آخرت کی محرومی قبول کرلینا سستا سودا سمجھتا تھا۔

آپ نے تنہا دعوتِ عظمیٰ اور رسالت خداوندی کی تمام تر ذمہ داری تیئس (۲۳) سال کی قلیل مدت میں ایسے حیرت انگیز طریقہ پر پوری کی کہ شہنشاہ عالم بونا بارٹ اس کے اعتراف پر مجبور ہوگیا، کہ صدیوں میں پایہٴ تکمیل کو نہ پہنچنے والا پیغام محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے تیئس (۲۳) سال کی قلیل مدت میں اس طرح مکمل کردکھایا کہ تاریخ عالم اس کی نظیر پیش کرنے سے عاجز ہے۔

یتیمے کہ ناکردہ قرآں درست

کتب خانہٴ چند ملت بشست

از: مولانا حفیظ الرحمن اعظمی مدنی استاذ مدرسہ عربیہ منبع العلوم، خیرآباد

https://saagartimes.blogspot.com/2021/03/blog-post.html



Thursday, 11 February 2021

صدقہ سے کیا کیا مصیبتیں ٹلتی ہیں؟

صدقہ سے کیا کیا مصیبتیں ٹلتی ہیں؟

فقیہ ابواللیث سمرقندی

فقیہ ابواللیث سمرقندی رحمۃ اللہ علیہ اپنی سند کے ساتھ نقل کرتے ہیں کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام ایک بستی پر سے گزرے۔ وہاں پر ایک دھوبی رہتا تھا۔ بستی والوں نے آپ کے پاس اس کی شکایت کی کہ یہ ہمارے کپڑے پھاڑ دیتا ہے اور اپنے پاس روک بھی رکھتا ہے، اللہ تعالیٰ سے دعا کیجئے کہ یہ اپنی کپڑوں والی گانٹھ سمیت واپس نہ آسکے۔ حضرت عیسیٰ علیہ السلام نے یہ دعاء کردی، اگلے دن دھوبی حسب معمول کپڑے دھونے کے لئے چلاگیا، تین روٹیاں ساتھ تھیں۔ قریب ہی پہاڑوں میں ایک عابد رہتا تھا۔ وہ دھوبی کے پاس آیا اور پوچھا: کیا تیرے پاس کھانے کو روٹی ہے؟ اگر ہے تو ذرا اسے سامنے کردے تاکہ میں اسے دیکھ سکوں یا اس کی بو ہی سونگھ لوں کیوں کہ ایک عرصہ سے کھانا نہیں کھایا۔ دھوبی نے اسے ایک روٹی کھانے کو دے دی۔ عابد نے دعاء دیتے ہوئے کہا کہ: اللہ تیرے گناہ معاف فرمائے اور دل کو پاک کرے۔ دھوبی نے دوسری روٹی بھی دے دی. وہ کہنے لگا: اللہ تعالیٰ تیرے اگلے پچھلے سارے گناہ معاف کردے۔ دھوبی نے تیسری روٹی بھی پیش کردی۔ عابد بولا: اے دھوبی! اللہ تعالیٰ تیرے لئے جنت میں محل بنائے۔ القصہ شام ہوئی تو دھوبی صحیح وسالم واپس آگیا۔ بستی والوں نے حیران ہوکر حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو بتایا کہ دھوبی تو واپس آگیا ہے؟ آپ علیہ السلام نے دھوبی کو طلب فرمایا اور پوچھا کہ سچ بتا آج تو نے کیا عمل کیا ہے؟ وہ کہنے لگا کہ ان پہاڑوں میں سے ایک عابد میرے پاس آیا، اس کے مانگنے پر میں نے تین روٹیاں اسے دیں اور ہر روٹی کے بدلے اس نے مجھے دعائیں دیں، حضرت عیسیٰ علیہ السلام نے فرمایا: ذرا اپنی کپڑوں والی گانٹھ تو کھول کر دکھا، اسے کھولا تو کیا دیکھتے ہیں کہ ایک سیاہ سانپ بیٹھا ہے، منہ میں لوہے کی لگام ہے۔ آپ علیہ السلام نے سانپ کو پکارا تو اس نے لبیک (اے اللہ کے نبی میں حاضر ہوں) یا نبی اللہ کہہ کر جواب دیا۔ فرمایا: کیا تجھے اس شخص کی طرف نہیں بھیجا گیا تھا؟ وہ بولا: بے شک! لیکن اس کے پاس ان پہاڑوں میں سے ایک عابد آیا اور اس سے روٹی مانگی۔ اور ہر روٹی کے بدلے اس کو دعائیں دیتا رہا۔ اور ایک فرشتہ پاس کھڑا آمین کہتا رہا۔ اس پر اللہ تعالیٰ نے ایک فرشتہ بھیجا، جس نے مجھے یہ لوہے کی لگام پہنادی۔ حضرت عیسیٰ علیہ السلام نے دھوبی سے فرمایا: اس عابد پر صدقہ کرنے کی بدولت تیرے پچھلے گناہ معاف ہوگئے ہیں، اب نئے سرے سے اعمال شروع کردے۔

سالم بن ابی الجعد رحمۃ اللہ علیہ کہتے ہیں کہ ایک عورت باہر نکلی، گود میں چھوٹا سا بچہ تھا، ایک بھیڑیا آیا اور عورت سے بچہ اُچک کر لے گیا۔ عورت پیچھے ہوئی، راستہ میں ایک سائل ملا، عورت کے پاس ایک روٹی تھی، وہ سائل کو دے دی۔ اتنے میں بھیڑیا ازخود بچے کو واپس لے آیا اور ایک پکارنے والے کی آواز سنائی دی کہ یہ لقمہ اس سائل والے لقمہ کے بدلہ میں واپس ہے۔

جناب معتب بن سمعی رحمۃ اللہ علیہ کہتے ہیں کہ بنی اسرائیل کے ایک راہب نے ساٹھ سال تک اپنے معبد میں اللہ تعالیٰ کی عبادت کی، ایک دن جنگل کی طرف نظر دوڑائی، زمین خوش نما معلوم ہوئی۔ جی میں آیا کہ اترکر زمین کے مناظر سے لطف اندوز ہونا چاہئے۔ چلنا پھرنا چاہئے اتر آیا، ایک روٹی بھی ساتھ تھی۔ ایک عورت سامنے آئی بے قابو ہوکر گناہ میں مبتلا ہوگیا۔اس اثنا میں موت کے حالات طاری ہوگئے، ایک سائل نے آواز دی، راہب نے روٹی اسے دے دی اور خود مرگیا۔ ادھر اس کے ساٹھ سال کے اعمال ترازو کے ایک طرف اور اس کا یہ گناہ دوسری طرف رکھا گیا۔ ساٹھ سال کی عبادت پر یہ گناہ بھاری ثابت ہوا، پھر اس کی وہ روٹی اعمال والے پلڑے میں رکھی گئی، جس سے گناہ کے مقابلہ میں وہ پلڑا بھاری ہوگیا۔

مشہور ہے کہ صدقہ برائی کے ستر دروازے بند کرتا ہے۔ حضرت ابوذر غفاری رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ زمین میں جب بھی کوئی صدقہ کیا جاتا ہے تو ستر شیطان اس سے دور کیے جاتے ہیں، جن میں سے ہر ایک اس کے لیے رکاوٹ بنا ہوا تھا۔ حضرت قتادہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ہم نے سنا ہے کہ صدقہ گناہ کو یوں ختم کرتا ہے جیسے پانی آگ کو۔

صدقہ کو ناپسند کرنے کا نتیجہ:

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ وہ بیٹھی ہوئی تھیں کہ ایک عورت آئی، اس نے ہاتھ آستین میں چھپا رکھا تھا ۔حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے پوچھا ہاتھ باہر کیوں نہیں نکالتی؟ اس نے جواب سے گریز کیا۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے کہا: ضرور بتانا ہوگا۔ تو کہنے لگی: ام الموٴمنین! قصہ یہ ہے کہ میرے والد صاحب صدقہ کا شوق رکھتے تھے اور والدہ اتنا ہی ناپسند سمجھتی تھی اور کبھی دیکھنے میں نہ آیا تھا کہ اس نے چربی کے ٹکڑے کسی پرانے کپڑے کے سوا کچھ صدقہ کیا ہو۔ قضائے الہٰی سے دونوں فوت ہوگئے، میں نے خواب میں دیکھا کہ قیامت قائم ہے۔ اور میری ماں بھری خلقت میں یوں کھڑی ہے کہ پرانے کپڑے سے پردہ کا بدن چھپایا ہوا ہے۔ اور چرپی کا ٹکڑا ہاتھ میں لیے چاٹ رہی ہے اور ہائے پیاس پکار رہی ہے۔ ادھر میرا والد ایک حوض کے کنارے بیٹھا لوگوں کو پانی پلارہا ہے اور یہی عمل میرے والد کو دنیا میں بھی بہت محبوب تھا۔ میں نے ایک پیالہ پانی کا لے کر اپنی والدہ کو پلایا، اتنے میں اوپر سے آواز آئی، جس نے اسے پانی پلایا ہے اس کا ہاتھ شل ہوجائے۔ چناں چہ میں بیدار ہوئی تو ہاتھ شل تھا۔

مالک بن دینار رحمۃ اللہ علیہ کی بیوی کا قصہ:

کہتے ہیں کہ ایک دن مالک بن دینار رحمۃ اللہ علیہ بیٹھے ہوئے تھے، ایک سائل نے آکر کچھ مانگا، گھر میں کجھوروں کی ٹوکری پڑی تھی۔ بیوی سے منگواکر نصف سائل کو دے دی اور نصف واپس کردی۔ بیوی کہنے لگی: سبحان اللہ! تیرے جیسے بھی زاہد کہلاتے ہیں؟ کیا ایسا شخص بھی دیکھا ہے جو بادشا ہ کے حضور ناقص ہدیہ بھیجے؟ مالک رحمۃ اللہ علیہ نے سائل کو واپس بلالیا اور بقیہ کھجوریں بھی اس کو دے دیں، پھر بیوی کی طرف متوجہ ہوکر فرمانے لگے: اری! محنت کیاکر اور خوب ہمت سے کام لے، اللہ پاک کا ارشاد ہے:

﴿خُذُوہُ فَغُلُّوہُ ،ثُمَّ الْجَحِیْمَ صَلُّوہُ،ثُمَّ فِیْ سِلْسِلَةٍ ذَرْعُہَا سَبْعُونَ ذِرَاعاً فَاسْلُکُوہُ ﴾․ (سورہ الحاقہ، آیت: 32-30)

ترجمہ: اس شخص کو پکڑو اور اس کے طوق پہنادو پھر دوزخ میں اس کو داخل کرو، پھر ایک ایسی زنجیر میں، جس کی پیمائش ستر گز ہو، اس کو جکڑ دو۔

سوال ہوگا یہ سختی کس وجہ سے ہے؟ تو جواب ملے گا۔

﴿إِنَّہُ کَانَ لَا یُؤْمِنُ بِاللَّہِ الْعَظِیْمِ،وَلَا یَحُضُّ عَلَی طَعَامِ الْمِسْکِیْنِ﴾․ (سورہ الحاقہ، آیت: 34-33)

ترجمہ: یہ شخص خدائے بزرگ برتر پر ایمان نہ رکھتا تھا اور غریب آدمیوں کو کھانا کھلانے کی ترغیب نہیں دیتا تھا۔

اے اللہ کی بندی! خوب جان لے کہ ہم نے اس وبال کا ایک حصہ تو ایما ن لاکر اپنی گردن سے اتار دیا ہے اور دوسرا حصہ صدقہ خیرات کے ذریعہ اتارنا چاہئے۔

ایک بدوی کا قصہ:

محمد بن افضل رحمۃ اللہ علیہ یہ روایت کرتے ہیں کہ ایک بدوی کے پاس بکریاں تھیں، مگر وہ صدقہ وغیرہ بہت کم کرتا تھا۔ ایک دفعہ اس نے ایک بکری کا لاغر بچہ صدقہ میں دیا۔ خواب میں دیکھتا ہے کہ اس کی تمام بکریاں جمع ہیں اور اسے سینگ ماررہی ہیں اور وہ لاغر بچہ اس کی مدافعت کررہا ہے۔ یہ بیدار ہوا تو کہنے لگا: بخدا! ہمت ہوئی تو تیرے ساتھی بڑھاؤں گا۔ پھر اس کے بعد خوب صدقہ خیرات کرنے لگا۔

حضرت عدی رضی اللہ عنہ بن حاتم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد نقل کرتے ہیں کہ تم میں سے ہر شخص کی اپنے رب سے گفتگو ہوگی۔ اور وہ اپنی دائیں بائیں اپنے آگے بھیجے ہوئے اعمال کو دیکھے گا اور سامنے نظر کرے گا تو دوزخ دکھائی دے گی۔ لہٰذا آگ سے بچو، اگر چہ کھجور کے ایک ٹکڑے کے ذریعہ سے ہی سہی۔

دس اچھی خصلتیں:

فقیہ فرماتے ہیں کہ دس خصلتیں ایسی ہیں جن سے آدمی اچھے لوگوں میں شامل ہوتا ہے اور درجے پاتا ہے۔ 

1: پہلی صفت صدقہ کی کثرت ہے۔

2: دوسری تلاوتِ قرآن کی کثرت، 

3: تیسری ایسے لوگوں کے پاس بیٹھنا جو آخرت کی یاد دلائیں اور دنیا سے بے رغبتی سکھائیں۔

4: چوتھی صلہ رحمی کرنا، 

5: پانچویں بیمار کی مزاج پرسی کرنا، 

6: چھٹی ایسے اغنیا سے میل جول نہ رکھنا جو آخرت سے غافل ہوں۔

7: ساتویں آنے والے دن کی فکر میں لگے رہنا۔

8: آٹھویں امیدوں میں کمی اور موت کو بکثرت یاد کرنا۔

9: نویں خاموشی اختیار کرنا اور کلام میں کمی رکھنا اور 

10: دسویں خصلت تواضع ہے اور گھٹیا لباس پہننا۔ فقراء سے محبت کرنا، ان کے ساتھ مل جل کر رہنا، مساکین اور یتیموں کے قریب رہنا اور ان کے سروں پر ہاتھ رکھنا۔

صدقہ کو بڑھانے والی خصلتیں:

کہتے ہیں کہ سات خصلتیں صدقہ کو بڑھاتی ہیں اور اس میں کمال پیدا کرتی ہیں۔ 

1: پہلی یہ کہ حلال مال سے صدقہ کرنا، اللہ کا ارشاد ہے:

﴿أَنفِقُواْ مِن طَیِّبَاتِ مَا کَسَبْتُمْ﴾ (سورہ بقرہ، آیت: 267)

ترجمہ: خرچ کرو عمدہ چیز کو اپنی کمائی میں سے۔

2: دوسری یہ کہ قلیل مال سے بھی بقدر ہمت دینا چاہئے۔

3: تیسری جلدی دینا کہ کہیں موقع نہ جاتا رہے۔

4: چوتھی یہ کہ بہترین اور عمدہ مال سے دینا، کیوں کہ اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے:

﴿وَلاَ تَیَمَّمُواْ الْخَبِیْثَ مِنْہُ تُنفِقُونَ وَلَسْتُم بِآخِذِیْہِ إِلاَّ أَن تُغْمِضُواْ فِیْہِ وَاعْلَمُواْ أَنَّ اللّہَ غَنِیٌّ حَمِیْدٌ﴾ ․(سورہ بقرہ، آیت: 267) ترجمہ: اور ردی چیز کی طرف نیت مت لے جایا کروکہ اس میں سے خرچ کرو، حالاں کہ تم خود کبھی اس کے لینے والے نہیں، ہاں! مگر چشم پوشی کرجاؤ اور یہ یقین رکھو کہ اللہ تعالیٰ کسی کے محتاج نہیں، وہ تعریف کے لائق ہیں۔ یعنی جس طرح تم نے کسی سے قرض لینا ہو تو ردّی مال نہیں لیتے سوائے اس کے کہ چشم پوشی اور درگزر کرجاؤ۔ 

5: پانچویں یہ کہ ریا سے بچتے ہوئے چھپاکر صدقہ کرو۔

6: چھٹی یہ کہ اس پر احسان بھی نہ جتاؤ کہ اجر باطل ہوجائے۔ 

7: ساتویں یہ کہ اس کے بعد تکلیف نہ پہنچاؤ، کیوں کہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ﴿لاَتُبْطِلُواْ صَدَقَاتِکُم بِالْمَنِّ وَالأذَی﴾․ (سورہ بقرہ، آیت:264) ترجمہ: تم احسان جتا کر یا ایذا پہنچاکر اپنی خیرات کو برباد مت کرو۔ (نقلہ: #ایس_اے_ساگر)

https://saagartimes.blogspot.com/2021/02/blog-post_11.html